بہارپٹنہطب صحت

بہار میں مریضوں کو بڑی راحت، گھر بیٹھے فون پر ملے گی طبی سہولت، پٹنہ IGIMS میں شروع ہوگی ٹیلی میڈیسن سروس

بہار: ریاست میں بڑھتی ہوئی تیسری لہر کے اثرات سے نمٹنے کے لیے انتظامیہ نے اپنی تیاریاں بڑھا دی ہیں۔ مریضوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کو دیکھتے ہوئے مریضوں کے لیے کووڈ کنٹرول اور کمانڈ سیٹر شروع کیا گیا ہے۔ اس دوران آئی جی آئی ایم ایس میں ٹیلی میڈیسن او پی ڈی سروس شروع کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ پیر سے 20 شعبہ جات کے 20 ڈاکٹر گھر بیٹھے مریضوں کا علاج کریں گے اور مشورے دیں گے۔ اس ٹیلی میڈیسن او پی ڈی کے ذریعے مریض گھر بیٹھے متعلقہ ڈاکٹر سے مشورہ کر سکیں گے۔ حالانکہ اس کے لیے ایک موبائل نمبر جاری کیا گیا ہے۔

آئی جی آئی ایم ایس کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر منیش منڈل نے کہا کہ 10 جنوری سے مریض اپنے گھر کے آرام سے ٹیلی میڈیسن کی سہولت حاصل کر سکتے ہیں۔ تاہم اس کے لیے مختلف شعبہ جات کے ڈاکٹروں کی ڈیوٹی لگا دی گئی ہے۔ صبح 10 بجے سے دوپہر 1 بجے تک ٹیلی میڈیسن کے لیے ڈاکٹر موجود رہیں گے۔انہوں نے بتایا کہ اگر کوئی ڈاکٹر مقررہ وقت میں فون نہیں اٹھاتا یا بات نہیں کرتا تو وہ ہسپتال انتظامیہ سے شکایت کر سکتا ہے۔

دارالحکومت پٹنہ کے اندرا گاندھی انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز میں علاج کے لیے آئے ایک سنگین مریض کو راحت ملی ہے۔ مریض جگر اور پھیپھڑوں کی بیماری میں مبتلا تھا۔ گیسٹرو انٹرالوجی ڈیپارٹمنٹ میں آپریشن کے بعد مریض کو راحت ملی ہے۔ مریض کا نام رحمت انصاری ہے جس کی عمر 22 سال ہے۔ اور شیوہر ضلع کا رہنے والا ہے۔ جانکاری دیتے ہوئے ڈاکٹر منیش منڈل نے بتایا کہ تیز بخار، سانس لینے میں دشواری اور پیٹ میں درد ہونے کے بعد لواحقین رحمت کو آئی جی آئی ایم ایس لے کر آئے۔

یہاں سٹی سکین کیا گیا، جس میں پتہ چلا کہ مریض کے جگر میں پیپ بھری ہوئی تھی، جو پھٹ کر پھیپھڑوں تک پہنچ گئی تھی۔ آپریشن کے لیے ٹیم میں ڈاکٹر راکیش کمار سنگھ، ڈاکٹر نشانت کورین اور ڈاکٹر سواتی، ڈاکٹر آلوک اور نرس رینا شامل تھے۔ مریض کی پیپ کو آلہ دوربین کے کی مدد سے نکالا گیا۔ ڈاکٹر منیش نے کہا کہ ہر انسٹی ٹیوٹ میں ایک مہینے میں 10 سے 15 ایسے مریض داخل ہوتے ہیں۔ آپریشن صرف 50 ہزار روپے میں ہوا۔ جبکہ پرائیویٹ میں اس کا خرچ 25000 سے 3 لاکھ کے درمیان ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button