طب و صحتعالمی خبریں

چین میں اب تک کا سب سے بڑا لاک ڈاؤن، 1.30 کروڑ افراد گھروں میں قید

ہندوستان سمیت پوری دنیا اس وقت کورونا وبا کے نئے قسم Omicron سے لڑ رہی ہے۔ ادھر کورونا وبا کے بانی چین سے بڑی خبر آ رہی ہے۔ یہیں کے مغربی شہر ژیان میں کورونا کا دھماکہ ہوا ہے۔ اس کے بعد یہاں اب تک کا سب سے بڑا لاک ڈاؤن لگایا گیا ہے۔ ژیان شہر کی کل آبادی تقریباً 13 ملین ہے۔ یہاں سب کچھ بند ہے۔ کسی کو باہر جانے کی اجازت نہیں ہے۔ ژیان شہر کے اس لاک ڈاؤن کو ووہان میں کورونا انفیکشن کے پھیلنے کے بعد سے سب سے بڑا لاک ڈاؤن قرار دیا جا رہا ہے۔

سب سے بڑا لاک ڈاؤن: جانئے گائیڈ لائن کیا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق چین نے بار بار آنے والے کورونا کیسز پر قابو پانے کے لیے جمعرات کو مغربی شہر ژیان کو مکمل طور پر بند کر دیا۔ ووہان میں وبائی بیماری شروع ہونے کے بعد سے یہ سب سے بڑا قدم ہے۔ تقریباً دو سال تک چین نے حالات پر قابو پانے کی بھرپور کوشش کی لیکن اب ژیان شہر میں دھماکہ ہوا ہے۔

ژیان کے 13 ملین یا 1.30 ملین باشندوں کو اپنے گھروں میں رہنے کو کہا گیا۔ ایک شخص کو ہر دوسرے دن ضروری چیزوں کے لیے باہر آنے کی اجازت ہوگی۔ ہر خاندان سے پوچھا گیا ہے کہ یہ کس کا فرد ہو گا۔ ایسا اس لیے بھی کیا گیا ہے کہ دکانوں پر سامان لینے والوں کی بھیڑ نہ ہو۔ شہر سے باہر غیر ضروری سفر پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔ شہر میں آنے والی تمام پروازیں معطل کر دی گئی ہیں۔ سرکاری شنہوا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق بڑے پیمانے پر ٹیسٹنگ کے دوسرے دور کے بعد پتہ چلا کہ انفیکشن بڑے پیمانے پر پھیل چکا ہے۔

چین میں ایک بار پھر لاک ڈاؤن، یہاں اومیکرون نہیں، ڈیلٹا نے پریشانی بڑھا دی۔

غور طلب ہے کہ جہاں باقی دنیا میں اومیکرون کا خوف ہے، وہیں چین میں ڈیلٹا ویریئنٹ کے مریض اب بھی پائے جا رہے ہیں۔ ڈیلٹا کی وجہ سے سیان کا لاک ڈاؤن بھی لگانا پڑا۔ ژیان میں لاک ڈاؤن چین کی کوششوں کے لیے ایک بڑا دھچکا ہے جہاں اس نے کورونا کو ختم کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی۔ یہی وجہ ہے کہ گزشتہ دنوں سے چین میں کورونا کا کوئی نیا کیس سامنے نہیں آیا تھا۔ چین میں کووڈ کا کوئی نیا مقامی کیس سامنے آنے کو دو ماہ سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button