اہم خبریںدہلیکرناٹک

حجاب چھوڑئے ، پستان کو ڈھانپنا بھی منع تھا: 1924 تک دلت خواتین کو پستان چھپانے کے لیے ٹیکس ادا کرنا پڑتا تھا، سینے پر کپڑا دکھا تو اسے چاقو سے پھاڑ دیتے تھے۔

کرناٹک میں مسلم لڑکیوں کو اسکول میں حجاب پہننا چاہیے یا نہیں اس پر سڑک سے پارلیمنٹ تک لڑائی جاری ہے۔ احتجاج ہو رہا ہے۔ احتجاج میں بھی بھگوا پہنے لڑکے احتجاج کر رہے ہیں۔ سر چھپانے کی اس لڑائی کے درمیان آج ہم آپ کو ایک کہانی سنائیں گے۔ انتہائی تکلیف دہ

یہ کہانی خواتین کے پستان کو ڈھانپنے کی لڑائی کے بارے میں ہے۔ یہ کہانی کسی اور ملک کی نہیں، ہندوستان کی ہے۔ کب کیا ہوا؟ کیسے ہوا؟ اور چیزیں کیسے ٹھیک ہوئیں، یہ سب بتاتے ہیں ۔

ایک بے رحم بادشاہ مرتھنڈ ورما کا عروج

1729 مدراس پریذیڈنسی میں ٹراوانکور بادشاہی قائم ہوئی۔ بادشاہ مرتھنڈ ورما تھا۔ سلطنت بنتی ہے تو اصول و ضوابط بنائے جائیں۔ ٹیکس وصولی کا نظام بنایا گیا۔ آج کی طرح ہاؤس ٹیکس، سیلز ٹیکس اور جی ایس ٹی، لیکن ایک اور ٹیکس بنایا گیا ہے… بریسٹ ٹیکس، مطلب” پستان ٹیکس ۔ یہ ٹیکس دلت اور او بی سی طبقات سے تعلق رکھنے والی خواتین پر لگایا گیا تھا۔

پستان جتنی بڑی ہوتی ، اتنا ہی بڑا ٹیکس

تراوانکور میں نچلی ذات کی خواتین صرف کمر تک کپڑے پہن سکتی تھیں۔ جب بھی وہ افسران اور اعلیٰ ذات کے لوگوں کے سامنے سے گزرتی تو اسے اپنا سینہ کھلا رکھنا پڑتا۔ اگر خواتین اپنے سینے کو ڈھانپنا چاہتی تو انہیں اس کے بجائے بریسٹ ٹیکس ادا کرنا ہوتا ۔ اس میں بھی دو اصول تھے۔ جس کی پستان چھوٹی اس پر ٹیکس کم اور جس کا بڑا اس پر زیادہ ٹیکس لگایا جاتا ۔ ٹیکس کا نام رکھا گیا تھا مولاکرم

یہ قوانین عورتوں کے ساتھ ساتھ مردوں پر بھی لاگو ہوتے تھے، یہ فحش رواج نہ صرف عورتوں پر لاگو ہوتا تھا بلکہ مردوں پر بھی لاگو ہوتا تھا۔ اسے سر ڈھانپنے کی اجازت نہیں تھی۔ اگر وہ کمر سے اوپر کپڑے پہننا چاہتا ہے اور سر اٹھا کر چلنا چاہتا تو اسے اس کے لیے الگ سے ٹیکس ادا کرنا ہوتا ۔ یہ نظام اونچی ذات کے علاوہ سب پر لاگو تھا، لیکن ورن نظام کے نیچے ہونے کی وجہ سے نچلی ذات کی دلت خواتین کو سب سے زیادہ ہراساں کیا گیا

۔

یہ بھی پڑھیں

حجاب تنازعہ : کرناٹک ہائی کورٹ نے طلباء اور عوام سے امن برقرار رکھنے کی اپیل کی، کہا آئین میں اعتماد رکھیں

۔Mobile phone میں ہی ڈاؤن لوڈ کریں Digital ووٹر کارڈ (Voter Card) ، ووٹنگ کے ساتھ فوٹو آئی ڈی میں بھی آئے گا کام، ڈاؤن لوڈنگ کا جانیں طریقہ

عورتوں کے سینے پر کپڑا نظر آتا تو اسے چھری سے پھاڑ دیتے تھے

راج پروہت ایک لمبی چاقو لے جاتا تھا جس کے سرے پر چاقو بندھا ہوتا تھا۔ وہ بلاؤز کو اس سے کھینچ کر پھاڑ دیتا تھا۔ وہ اس کپڑے کو درختوں پر لٹکا دیتا تھا۔ یہ پیغام دینے کا ایک طریقہ تھا کہ کوئی اور ایسا کرنے کی جرات نہیں کر سکتا۔

نادر طبقے کے نانگیلی نے دکھائی تھی طاقت

19ویں صدی کے اوائل میں چیرتھلا میں نانگیلی نام کی ایک خاتون کے ذریعے طاقت دکھائی تھی۔ خوددار اور انقلابی۔ اس نے فیصلہ کیا کہ میں اپنے پستان کو ڈھانپوں گی اور ٹیکس بھی نہیں دوں گی۔ نانگیلی کا یہ اقدام جاگیرداروں کے منہ پر طمانچہ تھا۔

جب اہلکار گھر پہنچے تو نانگیلی کے شوہر چرکنڈن نے ٹیکس دینے سے انکار کر دیا۔ بات بادشاہ تک پہنچی۔ بادشاہ نے ایک بڑی جماعت نانگیلی کے پاس بھیج دیا۔

نانگیلی نے پستان ٹیکس کے لیے پستان کاٹ دی

بادشاہ کے حکم پر افسر ٹیکس لینے ننگیلی کے گھر پہنچ گئے۔ پورا گاؤں جمع ہو گیا۔

افسر نے کہا، "پستان ٹیکس دو، کسی قسم کی معافی نہیں ملے گی ۔” نانگیلی نے کہا، ‘رکو، میں ٹیکس لاتی ہوں۔ نانگیلی اپنی جھونپڑی میں چلی گئی۔ نانگیلی باہر آئی تو لوگ حیران رہ گئے۔ افسران کی آنکھیں پھٹی کی پھٹی رہ گئیں۔ نانگیلی اپنی کٹی ہوئی پستان کیلے کے پتوں میں لے کر کھڑی تھی ۔ اہلکار بھاگ گئے۔ مسلسل خون بہنے کی وجہ سے نانگیلی زمین پر گر پڑی اور پھر دوبارہ کبھی نہ اٹھ سکی ۔ "

شوہر نے نانگیلی کی چتا میں چھلانگ لگا دی

نانگیلی کی موت کے بعد اس کے شوہر چرکنڈن نے بھی چتا میں چھلانگ لگا کر خودکشی کرلی۔

یہ بھی پڑھیں

گھر بیٹھے آدھار کارڈ میں اپنا موبائل نمبر یا نام، پتہ تبدیل کریں، جانیں یہ آسان طریقہ

ہندوستانی تاریخ میں یہ واحد واقعہ ہے انسان کے ستی ہونے کا۔ اس واقعہ کے بعد بغاوت پھوٹ پڑی۔ تشدد شروع ہو گیا۔ خواتین پورے کپڑے پہننے لگیں۔ مدراس کا کمشنر تراونکور بادشاہ کے محل میں پہنچا۔ بولا، ’’ہم تشدد کو روکنے میں ناکام ہو رہے ہیں، کچھ کیجئے! ۔‘‘ بادشاہ بیک فٹ پر چلا گیا۔ انہیں اعلان کرنا پڑا کہ اب نادر ذات کی خواتین بغیر ٹیکس کے کپڑے پہن سکتی ہیں۔

عورت کو ہراساں کرنے والی عورت ہی تھی

جب نادر ذات کی عورتوں کو اپنے سینوں کو ڈھانپنے کی اجازت دی گئی تو عزوہ، شینار یا شنار اور نادر طبقے کی خواتین نے بھی بغاوت کردی۔ اعلیٰ خاندان کی خواتین بھی ان کی بغاوت کو دبانے کے لیے آگے آئیں۔ ایسی ہی ایک کہانی منظر عام پر آتی ہے جس میں ملکہ ‘انٹنگل’ نے ایک دلت خاتون کی پستان کٹوا دی تھی۔

لوگ اس قدر مشتعل ہوئے کہ جن لوگوں نے اس طرز عمل کے خلاف بغاوت کی وہ اس ڈر سے بھاگ کر سری لنکا چلے گئے کہ وہ پکڑے جائیں گے۔ وہاں چائے کے باغات میں کام کرنے لگے ۔ اس دوران تراونکور میں انگریزوں کی مداخلت بڑھ گئی۔ 1829 میں ٹراوانکور کے دیوان، منرو نے کہا، "اگر عورتیں عیسائی ہو جائیں، تو ان پر ہندوؤں کا یہ اصول لاگو نہیں ہوگا۔ وہ چھاتی کو پستان کو سکتے ہیں۔ منرو کے پانی میں بھوننے والے اعلیٰ ذات کے لوگوں کے حکم نے اونچی ذات کے لوگوں کو غصہ دلایا لیکن انگریز اس فیصلے پر ڈٹے رہے۔1859 میں انگریز گورنر چارلس ٹریولین نے ٹراوانکور میں اس اصول کو منسوخ کر دیا۔اب تشدد کرنے والے بدل گئے۔اونچی ذات کے لوگوں نے لوٹ مار شروع کر دی۔ نادر خواتین کو نشانہ بنایا گیا اور ان کے دانے جلا دیے گئے۔اس دوران نادر ذات کی دو خواتین کو سرعام پھانسی دی گئی۔

یہ بھی پڑھیں

اگر PAN کارڈ کو ADAHAR CARD سے لنک نہیں کیا ہے تو اب کر لیں ، ورنہ لگے گا جرمانہ ، جانیں لنک کرنے کا طریقہ اور لنک کرنے کی آخری تاریخ

خواتین کو انگریزوں کے بڑھتے ہوئے ظلم و ستم سے نجات دلاتے ہوئے انگریز دیوان جرمنی داس نے اپنی کتاب ‘مہارانی’ میں اس رواج کا ذکر کرتے ہوئے لکھا ہے کہ ”جدوجہد طویل عرصے تک جاری رہی، 1965 میں رعایا کی جیت ہوئی اور سب کو حقوق مل گئے۔ پورے کپڑے پہنیں، حق ہونے کے باوجود دلتوں کو کپڑے پہننے کی اجازت نہ دینے کا رواج کئی حصوں میں جاری رہا۔1924 میں یہ بدنما داغ بالکل مٹ گیا، کیونکہ اس وقت پورا ملک جدوجہد آزادی میں کود چکا تھا۔

اسے تاریخ سے مٹانے کی کوشش میں، NCRT نے 2019 میں کلاس 9 کی تاریخ کی کتاب سے تین ابواب کو ہٹا دیا۔ اس میں ایک باب ٹراوانکور میں نچلی ذاتوں کی جدوجہد سے متعلق تھا۔ ہنگامہ مچ گیا۔ کیرالہ کے سی ایم پنارائی وجین نے کہا، ’’اس موضوع کو ہٹانا سنگھ پریوار کا ایجنڈا ظاہر کرتا ہے۔‘‘ اس سے قبل سی بی ایس ای نے 2017 میں 9ویں سوشل سائنس سے بھی اس باب کو ہٹا دیا تھا۔ معاملہ مدراس ہائی کورٹ تک پہنچا۔ عدالت نے کہا، "2017 کے امتحانات میں باب، ذات، تنازعہ اور لباس کی تبدیلی سے کچھ نہیں پوچھا جائے گا۔”

تاریخ نانگیلی کو بہادری کا مظہر مانتی ہے کہ مجھے نانگیلی کے خاندان کا بچہ ہونے پر فخر ہے۔ اس نے یہ فیصلہ اپنے لیے نہیں بلکہ تمام خواتین کے لیے لیا۔ اس کے ترک کرنے کی وجہ سے بادشاہ کو یہ ٹیکس واپس لینا پڑا۔

ڈاکٹر شیبا کا کہنا ہے کہ نانگیلی کے بارے میں اتنی بحث نہیں ہوئی جتنی ہونی چاہیے تھی۔ وجہ بتاتے ہوئے انہوں نے کہا کہ "تاریخ ہمیشہ مردوں کے نقطہ نظر سے لکھی گئی ہے۔ پچھلی چند دہائیوں میں خواتین کے بارے میں معلومات اکٹھی کرنے کا سلسلہ شروع ہوا ہے۔ امید ہے کہ نانگیلی کی بہادری اور قربانی لوگوں تک پہنچ جائے گی۔”

اپنی قربانی سے پیدا کر دیا انقلاب

نانگیلی نے شرمناک ٹیکس کو ختم کرنے کے لیے اپنی جان دے دی۔کیرالہ کے ملچھی پورم میں ان کا مجسمہ نصب کیا گیا ہے۔لوگ جہاں بھی جائیں سر جھکا دیتے ہیں۔لوگ لاکھ کوشش کریں گے کہ انہیں فراموش کر دیں یا بھول جائیں،مگر نانگیلی کو نہیں بھلایا جائے گا۔

ان خبروں کو بھی پڑھیں

حوالہ : دینک بھاسکر

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button