اہم خبریںطب و صحت

ہیلتھ ٹپس: مولی کے پتوں کا رس پینے سے یہ 3 بیماریاں دور ہو جائیں گی، فائدے جانیں۔

سردیوں کے موسم میں ہم زیادہ تر وہ چیزیں کھاتے ہیں جو ہمارے جسم میں گرمی کو برقرار رکھنے کا کام کرتی ہیں اور ان میں سے ایک مولی ہے جو سردیوں میں ہمارے جسم کو گرمی دینے میں مدد دیتی ہے۔ یوں تو لوگ گھر گھر جا کر مولی کا پراٹھا یا مولی کی بھورجی کھانا پسند کرتے ہیں لیکن کیا آپ جانتے ہیں کہ مولی کے ساتھ ساتھ مولی کے پتوں کا رس بھی سردیوں میں کسی علاج سے کم نہیں۔ جی ہاں، سردی کے موسم میں روزانہ مولی کے پتے کھانے سے آپ کی صحت کو بہت سے فوائد حاصل ہوتے ہیں۔ مولی کے پتے پروٹین، کلورین، کاربوہائیڈریٹس، آئرن، سوڈیم اور میگنیشیم سے بھرپور ہوتے ہیں جس کے ذریعے آپ کئی بیماریوں سے بچ سکتے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ مولی کے پتوں میں وٹامن اے، وٹامن بی اور وٹامن سی جیسے غذائی اجزاء بھی پائے جاتے ہیں۔ تو آئیے جانتے ہیں وہ کون سی 3 بیماریاں ہیں جن سے مولی کے پتوں کا رس آپ کو بچا سکتا ہے۔

ہاضمہ ٹھیک رہتا ہے۔

ہاضمہ درست رکھنے کے لیے فائبر کی مقدار بہت ضروری ہے اور مولی کے پتوں میں فائبر کی وافر مقدار پائی جاتی ہے۔ یہ ہمارے نظام ہاضمہ کے لیے بہت فائدہ مند ہے۔ اگر آپ کا ہاضمہ ٹھیک نہیں ہے تو آپ آج سے ہی روزانہ مولی کے پتوں کا جوس پینا شروع کر سکتے ہیں۔ مولی کے پتوں کا رس آپ کی پریشانی کو دور کرنے میں بہت کارآمد ثابت ہوسکتا ہے۔

وزن کم کرتا ہے

اگر آپ اپنے بڑھتے ہوئے وزن سے پریشان ہیں اور وزن کم کرنے کے لیے بہت سے کام کرتے کرتے تھک چکے ہیں تو آپ ایک بار مولی کے پتوں کا رس استعمال کر سکتے ہیں۔ اگر آپ سردی کے موسم میں اپنا وزن کم کرنا چاہتے ہیں تو اس کے لیے آپ کو صرف ایک آسان طریقہ اپنانا ہوگا۔ آپ اپنی روزمرہ کی خوراک میں مولی کے پتوں کا رس شامل کر سکتے ہیں۔ اس سے آپ کا وزن بہت تیزی سے کم ہوگا۔

اگر بلڈ پریشر کم رہے تو مولی کے پتوں کا رس پی لیں۔

ہائی بلڈ پریشر کا ہونا جتنا خطرناک ہے اتنا ہی کم بلڈ پریشر بھی اس مسئلے کو بڑھا سکتا ہے۔ اگر آپ کا بلڈ پریشر اکثر کم رہتا ہے اور آپ بی پی کو ٹھیک کرنے کے لیے ادویات کا سہارا لیتے ہیں تو آپ اس گھریلو علاج کو ایک بار آزما سکتے ہیں۔ مولی کے پتوں کا جوس ان لوگوں کے لیے بہت فائدہ مند ہے جن کا بلڈ پریشر کم ہے، کیونکہ اس کے جوس میں بہت زیادہ سوڈیم ہوتا ہے، جو آپ کے جسم میں نمک کی کمی کو پورا کرتا ہے اور آپ کے مسئلے کا حل بن سکتا ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button