Featuredپٹنہسنڈے اسپیشلطب و صحتگوشہ خواتین و اطفال

حمل کے بعد وزن میں کمی: حمل کے بعد وزن کم کرنا اتنا بھی مشکل نہیں، بس ان تجاویز کو ذہن میں رکھیں

  • ایک بات ذہن میں رکھیں کہ کسی بھی قسم کی ورزش کرنے سے پہلے اپنے ڈاکٹر سے ضرور مشورہ کر لیں
  • اگر آپ سخت غذا لینا شروع کرنے والے ہیں تو ڈاکٹر سے مشورہ کرنے کے بعد ہی ایسا کریں

  • حمل کے بعد وزن میں کمی: حمل کے بعد وزن کم کرنا اتنا بھی مشکل نہیں، بس ان تجاویز کو ذہن میں رکھیں ذہن میں

Weight Loss After Pregnancy:

حمل کے بعد وزن میں کمی: خواتین کو اکثر حمل کے بعد وزن بڑھنے کا مسئلہ درپیش ہوتا ہے، اسے بعد از پیدائش وزن یا بچے کا وزن بھی کہا جاتا ہے۔ عورت کا وزن بھی 6 سے 15 کلو تک بڑھ سکتا ہے۔ بہت سی خواتین کا وزن بچے کو جنم دینے کے فوراً بعد نارمل ہو جاتا ہے لیکن بہت سی خواتین کو پہلے کی طرح اپنا وزن برقرار رکھنا مشکل ہو جاتا ہے۔ لیکن اگر آپ کی خوراک اور روٹین اچھی ہے تو حمل کے دوران بڑھے ہوئے وزن کو کم کرنا کوئی زیادہ مشکل کام نہیں ہے۔

  • ایک بات ذہن میں رکھیں کہ کسی بھی قسم کی ورزش کرنے سے پہلے اپنے ڈاکٹر سے ضرور مشورہ کر لیں اور یہی بات آپ کی خوراک پر بھی لاگو ہوتی ہے۔ اگر آپ سخت غذا شروع کرنے والے ہیں تو ڈاکٹر سے مشورہ کرنے کے بعد ہی ایسا کریں۔ تاہم آپ اپنی خوراک میں کچھ ہلکی اور ضروری تبدیلیاں ضرور کر سکتے ہیں۔

بچے کا وزن کم کیسے کم کریں؟

کیلوری کی ایک ہی مقدار استعمال کریں

  • ماں بننے کے بعد عورت کو اپنے ساتھ اپنے بچے کی صحت کا بھی خیال رکھنا پڑتا ہے کیونکہ آپ اسے دودھ بھی پلاتی ہیں۔ اس لیے آپ کو کم از کم 1800-2200 کیلوریز کی ضرورت ہوتی ہے۔ ایسا کھانا کھائیں جو پروٹین اور کاربوہائیڈریٹ سے بھرپور ہو۔

پروسیسڈ فوڈ کھانے سے پرہیز کریں

تازہ پھل اور سبزیاں ہر طرح سے صحت کے لیے فائدہ مند ہیں اس لیے کوشش کریں کہ ڈبہ بند چیزیں کھانے کی بجائے تازہ اور گھر کی بنی چیزیں کھائیں۔

چہل قدمی کے ساتھ شروع کریں ورزش

بچے کی پیدائش کے بعد کئی مہینوں تک آپ کو کسی قسم کی بھاری ورزش یا ہلکی ورزش نہیں کرنی چاہیے۔ ہلکی پھلکی واک کے ساتھ شروع کریں۔

بچے کو دودھ پلائیں

بچے کو دودھ پلانا نہ صرف بچے کے لیے فائدہ مند ہے بلکہ کچھ مطالعات کے مطابق اس سے ماں کا نفلی وزن بھی کم ہوتا ہے۔

فائبر سے بھرپور کھانا کھائیں۔

فائبر سے بھرپور غذا وزن کم کرنے میں فائدہ مند ہے۔ انہیں کھانے سے معدہ زیادہ دیر تک بھرا رہتا ہے، جس سے آپ زیادہ کھانے سے بچتے ہیں۔

ڈس کلیمر: یہ مواد بشمول مشورے، صرف عام معلومات فراہم کرتا ہے۔ یہ کسی بھی طرح مستند طبی رائے کا متبادل نہیں ہے۔ مزید تفصیلات کے لیے ہمیشہ کسی ماہر یا اپنے ڈاکٹر سے رجوع کریں۔ قومی ترجمان اس معلومات کی ذمہ داری قبول نہیں کرتا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button