Featuredسنڈے اسپیشلطب و صحتگوشہ خواتین و اطفال

جلد اور بالوں کے لیے چاول کا آٹا: جلد اور بالوں کے لئے فائدہ مند ثابت ہوگا چاول کے آٹے کا یہ فیس اور ہیر پیک

  • آئیے جانیں اسے پیک کے طور پر کیسے استعمال کیا جائے؟
  • جلد اور بالوں کے لیے چاول کا آٹا:  جلد اور بالوں کے لئے فائدہ مند ثابت ہوگا چاول کے آٹے کا یہ فیس اور ہیر پیک


جلد اور بالوں کی دیکھ بھال: آپ اپنی جلد اور بالوں کے لئے نہ جانے کیا کیا نہیں کرتے ، کبھی آپ مہنگی مصنوعات اٹھا لیتے ہیں اور کبھی آپ اپنا وقت اور پیسہ دونوں ضائع کر کے پارلر پہنچ جاتے ہیں۔ جب کہ چمکدار جلد اور سنہرے بالوں کے لیے آپ کو زیادہ کچھ کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔


بس آپ اپنے کچن میں جائیں اور چاول کا ڈبہ نکالیں ۔ چاول کا آٹا بی وٹامنز، فولیٹ، آئرن، سیلینیم اور میگنیشیم سے بھرپور ہوتا ہے۔ اس کی وجہ سے چہرے اور بالوں کو بہت سے فوائد حاصل ہوتے ہیں جیسے چمکتی ہوئی جلد، ریشمی بال وغیرہ۔



آئیے جانیں اسے پیک کے طور پر کیسے استعمال کیا جائے؟



چاول کے آٹے کا فیس پیک



تھکی ہوئی جلد کو بحال کرنے کے لیے چاول کے آٹے کا استعمال کیا جاتا ہے۔ لیکن اس پیک کو استعمال کرنے کے بعد اپنے چہرے کو موئسچرائز کرنا نہ بھولیں۔


چاول کا آٹا اور دہی


یہ چہرے پر اچھے ایکسفولییٹر کا کام کرتا ہے۔ پیسٹ بنانے کے لیے ایک چمچ چاول کا آٹا شامل کریں اور دہی کو 20 منٹ تک چہرے پر لگائیں۔ اسے پانی سے دھو کر صاف تولیے سے صاف کریں۔


چاول کا آٹا، لیموں اور کھیرے کا رس


یہ چہرے سے دھبے دور کرنے کے لیے بہت موثر ہے۔ ایک چمچ چاول کے آٹے میں تھوڑا سا لیموں اور کھیرے کا رس ملا کر چہرے پر لگائیں۔ کچھ دیر بعد چہرہ دھو لیں۔



چاول کے آٹے سے بالوں کا ماسک | چاول کے آٹے کا ہیئر ماسک



یہ بالوں کو مضبوط کرتا ہے، اس کی ساخت کو ٹھیک کرتا ہے اور بالوں کی نشوونما میں بھی مدد کرتا ہے۔


چاول کا آٹا اور ایوکاڈو



ایک ایوکاڈو میں برابر مقدار میں چاول کا آٹا ملا کر پیسٹ بنائیں اور اسے اپنے خراب بالوں پر لگائیں۔ کچھ دیر سر میں رکھیں اور ٹھنڈے پانی سے دھو لیں۔


چاول کا آٹا اور ملتانی مٹی



ملتانی مٹی میں چاول کا آٹا اور پانی ملا کر پیسٹ بنالیں۔ اب اس پیسٹ کو 30 منٹ بعد بالوں میں دھو لیں۔ بال لہرانے لگیں گے۔



ڈس کلیمر: یہ مواد بشمول مشورے، صرف عام معلومات فراہم کرتا ہے۔ یہ کسی بھی طرح مستند طبی رائے کا متبادل نہیں ہے۔ مزید تفصیلات کے لیے ہمیشہ کسی ماہر یا اپنے ڈاکٹر سے رجوع کریں۔ قومی ترجمان اس معلومات کی ذمہ داری قبول نہیں کرتا ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button