Uncategorized

بہار کی معیشت میں جان ڈالیں گے مکئی کے کاشت کار ، کسانوں کے کھاتے میں ہر سال آئیں گے 2500 کروڑ روپے

اگلے دو سالوں میں ایتھے نال کی پیداوار کے میدان میں 30 ہزار کروڑ سے زیادہ کی سرمایہ کاری ہوئی ہے۔ اس سرمایہ کاری سے نہ صرف سرمایہ کاروں کی کمائی ہوگی کسانوں کی بھی چاندی ہوگی۔ ایتھے نال کے گرین فیلڈ گرین پلانٹ لگانے کے بعد مکئی کی پیداوار کے کسانوں کے دن واپس جا رہے ہیں۔

اس کی وجہ یہ ہے کہ مکئی ایتھے نال کی پیداوار کے لیے واحد اہم خام مال ہے۔ ایک اندازے کے مطابق سالانہ 2.5 ہزار کروڑ سے زیادہ کی رقم کسانوں کے کھاتے میں جائے گی۔ بہار میں مکئی کی پیداوار 35 لاکھ ٹن سالانہ سے زیادہ ہے۔ پیداوار میں سالانہ پانچ فیصد اضافہ ہے۔ ایک بار جب ایتھے نال کے پودے زمین سے اتر جائیں گے تو مکئی ایک نقد آور فصل میں بدل جائے گی۔ مکئی کی پیداوار سے لاکھوں کسان مستفید ہوں گے۔

بہار میں 30 ہزار کروڑ کی سرمایہ کاری کی جائے گی۔

بہار میں دھان کے بعد یہ واحد فصل ہے جس کی شرح پیداوار سب سے زیادہ ہے۔ بہار میں پہلا گرین فیلڈ ایتھے نال پلانٹ حال ہی میں پورنیا میں شروع کیا گیا ہے۔ ریاست میں مکئی کے علاوہ ٹوٹے ہوئے چاول سے ایتھنول بنانے کی منظوری دی گئی ہے۔ خام مال کی دستیابی کے مطابق مکئی ایک سستی اور آسانی سے دستیاب شے ہے۔ اس طرح دھان ایک بڑی تجارتی فصل کے طور پر ابھر سکتا ہے۔

محکمہ صنعت کی سرکاری معلومات کے مطابق بہار میں ایتھے نال کی پیداوار کے شعبے میں اگلے دو سالوں میں 30 ہزار کروڑ کی سرمایہ کاری ہونے والی ہے۔

صنعتی محکمہ کے معاشی ماہرین کے جائزے کے مطابق کاروباری شخص کو مکئی کی بنیاد پر 1000 KLD (کلو لیٹر فی دن) کے پلانٹ سے ایتھنول کی تیاری پر مکئی کی خریداری پر کل 109-125 کروڑ خرچ کرنے ہوں گے۔ 1000 لیٹر پلانٹ کے لیے سالانہ 78 ہزار ٹن مکئی کی ضرورت ہوگی۔ مکئی کی عام قیمت 14 روپے فی کلو ہے۔ اس قیمت پر 109-125 کروڑ روپے کسانوں کی جیب میں جائیں گے کیونکہ جیسے جیسے ایتھے نال کی مانگ بڑھے گی مکئی کی طاقت اس کی اعلان کردہ کم از کم امدادی فیس 1850 سے زیادہ ہونے کی امید ہے۔

ہر پلانٹ میں سو افراد کو براہ راست روزگار ملے گا۔

کاروباری کو ان کی تنخواہ پر تقریباً 3 سے 4 کروڑ روپے خرچ کرنے ہوں گے۔ ایک ہزار کے ایل ڈی کے پلانٹ سے ایک سال میں 3.5 کروڑ لیٹر ایتھے نال تیار کیا جائے گا۔پیٹرولیم کمپنیاں فی الحال ایک لیٹر ایتھے نال 52.92 روپے کے حساب سے خریدتی ہیں۔ اس طرح سرمایہ کار کو پٹرولیم کمپنیوں سے 174 کروڑ روپے ملیں گے۔

بہار میں 17 پلانٹ لگائے جانے ہیں۔ ان میں سے زیادہ تر 1000 KLD سے زیادہ ہیں۔ اس طرح بہار کے کسانوں کی جیب میں ڈھائی ہزار کروڑ سے زیادہ جانا یقینی ہے۔ اس کے علاوہ، پلانٹ کے آپریشن کے لیے پاور پلانٹ چلانے کے لیے، سرمایہ کاروں کو دھان کی بھوسی کی ضرورت ہوگی۔ ایک ہزار کے ایل ڈی پلانٹ کے لیے بھوسی کی سالانہ ضرورت 80 ہزار ٹن ہوگ9َی۔ اس کے لیے رائس ملر کو 32 کروڑ ملیں گے۔

مکی کے کاشت کار

ریاست میں ایتھے نال کی پیداوار کے مزید تین یونٹ تیار ہیں۔ دو پودے گوپال گنج میں اور ایک ارڑا میں تیار ہیں۔ بہار میں، 17 ایتھنول پروڈکشن یونٹس نے حال ہی میں تیل کی مارکیٹنگ کمپنیوں کے ساتھ سالانہ 36 کروڑ لیٹر ایتھنول کی فراہمی کے لیے معاہدہ کیا ہے۔

ایتھنول پالیسی ملک میں پہلی بار 19 مارچ 2021 کو بہار میں شروع کی گئی تھی۔ 30 جون 2021 تک 2.151 سرمایہ کاری کی تجاویز موصول ہوئی ہیں۔ تمہید 30,382 کروڑ روپے تھی۔ انہیں پہلی منظوری دی گئی۔بہار میں 17 ایتھنول یونٹس کی پیداوار کے لیے پیٹرولیم کمپنیوں کے ساتھ ایک معاہدے پر دستخط کیے گئے۔ بہار کے ایتھنول کی پیداوار کے لیے 35.28 کروڑ لیٹر ایتھے نال کی پیداوار کا کوٹہ مقرر کیا گیا ہے۔

بہار میں ایتھے نال کی پیداوار کے لیے اختیار کردہ 17 یونٹوں میں سے چار مظفر پور اور نالندہ میں، دو مدھوبنی میں، ایک ایک بیگوسرائے، نوادہ، بھاگلپور اور بکسر میں تجویز کیے گئے ہیں۔ ان میں پورنیہ یونٹ شروع ہو چکا ہے۔

قومی ترجمان
قومی ترجمان
Qaumi Tarjuman
قومی ترجمان

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button