اہم خبریں

بہار میں بہتر ہوگی بچوں کی علاج کے انتظامات، 28 اضلاع کے سرکاری اسپتالوں میں بنائے جائیں گے پیکو وارڈ

یہ بھی پڑھیں

پٹنہ 24 مارچ (قومی ترجمان) ریاست بہار کے سرکاری اسپتالوں میں صحت کے نظام کو بہتر بنانے کے لیے قواعد شروع کر دی گئی ہے تاکہ بچوں کا بہترین طریقے سے علاج کیا جاسکے۔

بچوں کی اموات کی شرح کو کم کرنے کے لیے حکومت تمام سرکاری ہسپتالوں میں عارضی (PICUS) کیئر یونٹس بنائے گی۔

اس انتظامات کے لیے ریاست کے 28 اضلاع کا انتخاب کیا گیا ہے۔ ان میں سے 22 ضلع اسپتالوں میں 42 بیڈ اور 6 ضلع کے اسپتالوں میں 32 بیڈ پیکو میں ہوں گے۔ تاہم اس کے بعد ریاست کے تمام سرکاری اسپتالوں کے پیکو میں تقریباً 78.66 کروڑ روپے کی لاگت سے 1118 بستروں کا اضافہ کیا جائے گا۔

اس کی تعمیر کی ذمہ داری بہار ہیلتھ سروسز اینڈ انفراسٹرکچر کارپوریشن کو سونپی گئی ہے۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ تعمیراتی عمل شروع ہو چکا ہے۔ بی ایم ایس آئی سی ایل کی جانب سے موصول ہونے والی معلومات کے مطابق 42 بستروں پر مشتمل پیکو کی تعمیر پر تقریباً 2.88 کروڑ جبکہ 32 بستروں کی تعمیر پر 2.55 کروڑ کی لاگت آئے گی۔ تاہم اس کے تعمیراتی کام کو رواں سال مئی تک مکمل کرنے کا ہدف مقرر کیا گیا ہے۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ کووڈ وبا جیسے منفی حالات میں ریاست کے صحت کے نظام کے تمام پول کھل کر سامنے آچکے ہیں۔ حکومت اب نومولود بچوں کے علاج کے نظام کو بہتر بنانے کی کوشش کر رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

گھر بیٹھے آدھار کارڈ میں اپنا موبائل نمبر یا نام، پتہ تبدیل کریں، جانیں یہ آسان طریقہ

आरबीआई ने पेटीएम पेमेंट्स बैंक को नए खाते खोलने से रोककर झटका दिया।

ان تمام حالات کو دیکھتے ہوئے حکومت نے ریاست کے میڈیکل کالج اسپتالوں میں ضلع اسپتالوں میں پیکو تیار کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ریاست کے جن 28 اضلاع میں یہ تعمیر ہو رہا ہے ان میں موتیہاری ، ارریہ ، گوپال گنج ، نوادہ ، جموئی ، سارن ، سیتامڑھی ، سیوان ، کشن گنج ، بھوجپور ، بکسر ، سمستی پور ، لکھی سرائے ، مدھے پورہ ، جہان آباد ، کیمور ، کٹیہار ، مدھوبنی ، روہتاس ، اورنگ آباد ، بانکا ، ویشالی میں 42 بیڈ کے پیکو اور سپول ، شیخ پورہ، بیگوسرائے، اروال، شیوہر، مونگیر میں 32 بستروں پر مشتمل پیکو بنانے کی مشق شروع ہو گئی ہے ۔

قومی ترجمان کا ٹیلیگرام گروپ جوائن کرنے کے لیے یہاں کلک کریں!

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button