Featuredاہم خبریںدہلی

۔SC-ST کو پروموشن میں ریزرویشن پر بڑا فیصلہ: سپریم کورٹ نے ریزرویشن کے پیمانے پر مداخلت سے کیا انکار، تفصیلات یہاں جانیں

  • سپریم کورٹ نے کہا-ریاست کو فیصلہ کرنے دیں، لیکن جائزہ لیتے رہیں

۔SC-ST کو پروموشن میں ریزرویشن پر بڑا فیصلہ: سپریم کورٹ نے ریزرویشن کے پیرامیٹرز میں مداخلت کرنے سے کیا انکار

نئی دہلی 28 جنوری (ایجنسیاں) سپریم کورٹ نے جمعہ کو SC-ST کو ترقی میں ریزرویشن پر بڑا فیصلہ سنایا ہے ۔سپریم کورٹ نے اسکیل طے کرنے میں مداخلت کرنے سے انکار کر دیا ہے۔ سپریم کورٹ نے کہا کہ ہم یہ نہیں کر سکتے، یہ ریاستوں کو کرنا چاہیے۔ سپریم کورٹ نے کہا کہ ریاستی حکومتوں کو ریزرویشن پر فیصلہ کرنے سے پہلے اس کا ڈیٹا اکٹھا کرنا چاہیے۔ عدالت نے کہا کہ حکومتوں کو وقتاً فوقتاً اس بات کا بھی جائزہ لینا چاہئے کہ آیا ایس سی-ایس ٹی کو پروموشن میں ریزرویشن میں مناسب نمائندگی ملی ہے یا نہیں۔ اس جائزے کے لیے ایک مدت بھی مقرر کی جانی چاہیے۔

عدالت نے یہ بھی کہا ہے کہ 2006 کے ناگراج اور 2018 کے جرنیل سنگھ کیس میں آئینی بنچ کے فیصلے کے بعد سپریم کورٹ کوئی نیا پیرامیٹر نہیں بنا سکتی۔ مرکز اور ریاستوں سے متعلق ریزرویشن کے معاملات میں وضاحت پر سماعت 24 فروری سے شروع ہوگی۔

عدالت نے کیا کہا؟

اس معاملے کی سماعت جسٹس ناگیشور راؤ کی سربراہی میں تین ججوں کی بنچ کر رہی تھی۔ جسٹس ایل ناگیشور راؤ، سنجیو کھنہ اور بی آر گاوائی کی بنچ نے مشاہدہ کیا کہ متعلقہ ریاستی حکومت ایم ناگراج بمقابلہ یونین آف انڈیا میں سپریم کورٹ کے 2006 کے فیصلے میں بتائے گئے ڈیٹا کو جمع کرنے کی پابند ہے۔

عدالت نے کہا، "ہم پہلے کے فیصلوں میں طے شدہ ریزرویشن کی دفعات اور پیمانے میں مداخلت نہیں کر سکتے۔ ریاست ایس سی-ایس ٹی قبائل کے ملازمین کو پروموشن میں ریزرویشن دینے سے پہلے مقداری اعداد و شمار جمع کرنے کی پابند ہے۔ پروموشن میں مناسب نمائندگی ملی ہے یا نہیں۔ اس جائزے کے لیے ایک مدت بھی مقرر کی جانی چاہیے۔

عدالت نے اکتوبر 2021 کو فیصلہ محفوظ کر لیا تھا۔

دراصل سپریم کورٹ نے پروموشن میں ریزرویشن کے معاملے میں 26 اکتوبر 2021 کو فیصلہ محفوظ کر لیا تھا۔ سپریم کورٹ میں مرکزی حکومت کے وکیل نے دلیل دی تھی کہ ’’یہ بھی حقیقت ہے کہ آزادی کے 75 سال بعد بھی درج فہرست ذاتوں اور درج فہرست قبائل سے تعلق رکھنے والے افراد کو میرٹ کی اس سطح پر نہیں لایا گیا ہے جس سطح پر۔ آگے کی ذاتیں”

پروموشن میں ریزرویشن کا مسئلہ 2017 سے پھنسا ہوا ہے

مرکزی اور ریاستی حکومتوں نے سپریم کورٹ میں ایک عرضی دائر کی تھی جس میں ترقیوں میں ریزرویشن کے معاملات پر فوری سماعت کی مانگ کی گئی تھی۔ درخواست گزار کے مطابق عدالت میں زیرسماعت کیس کی وجہ سے ملک بھر میں لاکھوں آسامیوں پر تقرریاں تعطل کا شکار ہیں۔ ریاستوں کی جانب سے عدالت میں دلیل دی گئی کہ مرکزی حکومت کی سطح پر باقاعدہ عہدوں پر ترقی تھی، لیکن 2017 سے ملک بھر میں ریزرو عہدوں پر ترقی کا عمل تعطل کا شکار ہے۔

کیا ہے پورا معاملہ

یہ پورا معاملہ سرکاری ملازمتوں میں دی جانے والی پروموشن میں ریزرویشن کے معاملے سے جڑا ہے۔ مرکزی اور ریاستی حکومتوں نے اس معاملے میں سپریم کورٹ میں کئی عرضیاں دائر کی ہیں۔ یہ تمام درخواستیں سپریم کورٹ کی آئینی بنچ کے دو فیصلوں سے متعلق ہیں۔ ان فیصلوں پر عدالت نے مرکزی اور ریاستی حکومتوں کے لیے ایک رہنما خطوط جاری کیا تھا کہ سرکاری ملازمتوں میں ترقی کا پیمانہ کیا ہونا چاہیے۔

عدالت کی اس ہدایت کو پورا کرنے میں دونوں ریاستوں کی حکومتوں کو کافی چیلنجز کا سامنا کرنا پڑا۔جس کے بعد دونوں حکومتوں کی جانب سے سپریم کورٹ میں درخواست دائر کی گئی۔

جس میں کہا گیا ہے کہ پروموشن میں ریزرویشن کے معاملے میں اب بھی ابہام ہے جس کی وجہ سے تمام تقرریاں روک دی گئی ہیں۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button