اتر پردیشاہم خبریںدہلی

گیان واپی مسجد معاملہ : گیانواپی تنازع پر اویسی نے کہا، ‘دنیا کا قدیم ترین پھوارہ 2700 سال پہلے کا ہے

وارانسی کی گیانواپی مسجد میں سروے کے دوران یہ بات سامنے آئی کہ وضو خانے میں ایک شیولنگ موجود ہے۔ ہندو فریق اسی شیولنگ کو شیولنگ ہونے کا دعویٰ کر رہی ہے، جبکہ مسلم فریق کا کہنا ہے کہ یہ ایک پھوارہ ہے۔

مسلم فریق کے اس دعوے پر سوالات اٹھائے گئے کہ اگر مسجد بہت پرانی ہے تو اس وقت بجلی کے بغیر فوارے کیسے چلتے تھے۔ اے آئی ایم آئی ایم کے سربراہ اسد الدین اویسی نے اب ان سوالات پر بات کی ہے۔

انہوں نے ایک ٹویٹ میں لکھا؛

سنگھی ذہن والے سوال پوچھ رہے ہیں کہ بجلی کے بغیر فوارہ کیسے چل سکتا ہے؟ اسے کشش ثقل کہتے ہیں۔دنیا کا قدیم ترین پھوارہ تقریباً 2700 سال پرانا ہے۔ قدیم رومیوں اور یونانیوں کے پاس بھی پہلی اور چھٹی صدی قبل مسیح میں پھوارے تھے۔”

دنیا کا قدیم ترین پھوارہ تقریباً 2700 سال پرانا ہے۔ قدیم رومیوں اور یونانیوں کے پاس بھی پہلی اور چھٹی صدی قبل مسیح میں چشمے تھے۔”

اس کے ساتھ ہی انہوں نے نیویارک ٹائمز کا ایک لنک بھی شیئر کیا۔ اپنے اگلے ٹویٹ میں اویسی نے لکھا،

"فوارے” ساتویں صدی سے اسلامی فن تعمیر کا ایک اہم حصہ رہے ہیں۔ شاہ جہاں کے شالیمار باغات میں 410 فوارے ہیں۔ سنگھیوں کے لیے وکی پیڈیا کا لنک دیتا ہوں ۔کیونکہ اس سے زیادہ کہنا ان کی سمجھ کے لیے مشکل ہو سکتا ہے۔

فوارے کم از کم ساتویں صدی سے اسلامی فن تعمیر کی ایک لازمی خصوصیت ہیں۔ شاہجہاں کے شالیمار باغات میں 410 فوارے ہیں۔

سنگھیوں کو ویکی پیڈیا لنک کے ساتھ چھوڑتا ہوں کیونکہ اس سے زیادہ کچھ بھی ان کے لیے بہت پیچیدہ ہو سکتا ہے 2/2https://t.co/Xbgsr4hGg6— اسد الدین اویسی (@asadowaisi) 21 مئی 2022

ماہرین اس پر کیا کہہ رہے ہیں؟

آئی آئی ٹی-بی ایچ یو کے کیمیکل انجینئرنگ کے شعبہ کے پروفیسر آر ایس سنگھ نے انڈیا ٹوڈے کو بتایا کہ پرانے زمانے میں جب بجلی نہیں تھی، فواروں کو چلانے کے لیے کافی اونچائی سے پانی چھوڑا جاتا تھا۔ تقریباً 50 سے 100 فٹ کی اونچائی سے۔ لیکن گیانواپی مسجد کے اندر ایسی کوئی ٹیکنالوجی فی الحال نظر نہیں آتی۔

مزید یہ کہ پروفیسر آر ایس سنگھ کا کہنا ہے کہ ابھی تک اس معاملے میں کوئی سائنسی تحقیق نہیں کی گئی ہے۔ اس لیے اس بارے میں کچھ نہیں کہا جا سکتا۔

گیان واپی مسجد ،اسدالدین اویسی

دوسری طرف IIT-BHU کے میٹریل سائنس کے ایسوسی ایٹ پروفیسر چندن اپادھیائے کا کہنا ہے کہ صرف متنازعہ چیزوں کی تصویروں کو دیکھ کر کچھ نہیں کہا جا سکتا۔ متنازع چیز کا اوپر اور نیچے کا حصہ مختلف ہو سکتا ہے۔ ان کے مطابق ایسا لگتا ہے کہ اوپری حصے میں پیچ ورک کیا گیا ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ اس میں چھیڑ چھاڑ کیے بغیر مختلف تکنیک کے ذریعے آسانی سے پتہ لگایا جا سکتا ہے کہ یہ فوارہ ہے یا نہیں۔ اگر یہ چشمہ ہے تو اس میں نوزل اور پائپ ہونا چاہیے۔

یہ بھی پڑھ سکتے ہیں : لالویادو پر سی بی آئی ریڈ ،کیا بہار حکومت گرنے والی ہے ؟

مرکزی حکومت کا اعلان، پٹرول 9.5 روپے اور ڈیزل 7 روپے سستا

سونو کے الزامات کے بعد دو اساتذہ کے خلاف کارروائی، نتیش کمار سے IAS بننے کی خواہش کو لیکر لگائی تھی مدد کی گہار

گیان واپی مسجد معاملہ : امید ہے ڈسٹرکٹ جج انصاف کریں گے، سپریم کورٹ کے حکم پر اسدالدین اویسی کا ردعمل

انسپکٹر نے کہا محتاط رہیں، انکاؤنٹر بھی ہو سکتا ہے ، میں موبائل چلانا بھول گیا، جیل میں اکیلا تھا، صرف چھت اور دیواریں تھیں، پڑھیں اعظم خان نے جیل سے رہائی کے بعد مزید کیا کہا

تاہم دہلی کے اربن پلانر اور یہاں کے تمام عمارتی ڈھانچوں کا مطالعہ کرنے والے شبھم مشرا کا کہنا ہے کہ مغل دور کے فوارے اور آج کے دور میں بنائے جانے والے فوارے میں فرق ہے۔ اس وقت کے فواروں کا پانی دھیرے دھیرے بلبلے کی طرح باہر نکلتا تھا ۔ بہت سی مغل مساجد کے حوض نہروں سے پانی نکال کر رہت (پانی نکالنے کی ایک پرانی تکنیک) کے ذریعے بھرے جاتے تھے جو دھیرے دھیرے اوپر چڑھتے تھے اور فواروں سے نکلتے تھے۔

ریحٹ کے کنویں اکثر دریا کے کنارے واقع ہوتے تھے جیسا کہ ہمایوں کے مقبرے میں تھا۔ حوض کا پانی وضو کے لیے استعمال ہوتا تھا اور پوری عمارت کو ٹھنڈا بھی رکھتا تھا۔

قومی ترجمان
قومی ترجمان
Qaumi Tarjuman
قومی ترجمان

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button