Featuredاہم خبریںٹیکنالوجیدہلی

چین پر بھارت کا ایک اور ڈیجیٹل حملہ ، 54 چینی ایپس پر پابندی عائد

نئی دہلی، 15 فروری (قومی ترجمان) بھارت اور چین میں جاری سرحدی تنازعہ کے درمیان مرکزی حکومت ایک بار پھر بڑی ڈیجیٹل ہڑتال کرنے جا رہی ہے۔ بھارتی حکومت نے چین کو آئینہ دکھاتے ہوئے 54 چینی موبائل ایپلی کیشنز پر پابندی لگانے کا ذہن بنا لیا ہے۔ مرکزی حکومت 54 چینی موبائل ایپ پر پابندی لگانے کے لیے تیار ہے جو کہ قومی سلامتی کے لیے خطرہ ہیں۔

وزارت داخلہ کے ذرائع نے پیر کو یہ اطلاع دی۔ ذرائع کے مطابق الیکٹرانکس اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کی وزارت (MeitY) نے ان تمام ایپس کی نشاندہی کی ہے۔ ممکنہ طور پر متاثر ہونے والی ایپلی کیشنز میں بڑی چینی ٹیک کمپنیوں جیسے Tencent، Alibaba اور NetEase اور استعمال میں ہیں، جیسے سویٹ سیلفی ایچ ڈی، بیوٹی کیمرہ – سیلفی کیمرہ، ایکویلائزر اور بیس بوسٹر، Tencent X Lever Etcetera شامل ہیں۔ ذرائع کے مطابق ان میں سے کئی ایپلی کیشنز 2020 میں حکومت ہند کی جانب سے پابندی عائد کردہ ایپس کا نیا ورژن ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

پین کارڈ کی تصحیح: PAN میں غلط ہے نام اور تاریخ پیدائش، تو گھر بیٹھے کریں تصحیح، جانیں E-Pan کارڈ حاصل کرنے کا طریقہ

ساتھ ہی یہ قیاس آرائیاں کی جا رہی ہیں کہ تازہ ترین اقدام بھارت اور چین کے درمیان موجودہ تعطل کا نتیجہ ہو سکتا ہے، جو طویل عرصے سے جاری سرحدی تنازعے کی وجہ سے اپنے عروج پر پہنچ گیا ہے۔
Advertisement

2020 کے بعد اب تک کل 270 ایپس پر پابندی لگائی جا چکی ہے۔ تاہم اس سال پہلا موقع ہے جب حکومت نے چینی ایپس پر پابندی عائد کی ہے۔ جون 2020 میں، MeitY نے ہندوستان کی خودمختاری، سالمیت اور قومی سلامتی کو لاحق خطرات کا حوالہ دیتے ہوئے 59 چینی ایپس پر پابندی لگا دی۔ اس فہرست میں مشہور اسمارٹ فون ایپس جیسے TikTok، Helo، WeChat، KY، Clash of Kings، Alibaba’s UC Browser اور UC News، Likee، Bigo Live، Shine، Club Factory اور Cam Scanner شامل ہیں۔

کوڑے سے علاج ممکن

پاکستان کے حمایت یافتہ 60 یوٹیوب چینلز پر بھی پابندی لگا دی گئی۔Advertisement

یہ بھی پڑھیں

۔Voter List میں اپنا نام کیسے چیک کریں؟ یہاں جانیں مکمل پروسیس، گھر بیٹھے بیٹھے موبائل پر ہی ہو جائے گا سارا کام

غور طلب ہے کہ حال ہی میں، اطلاعات و نشریات کی وزارت نے 10 فروری کو راجیہ سبھا کو مطلع کیا تھا کہ اس نے پاکستان کے حمایت یافتہ 60 یوٹیوب چینلز پر پابندی لگا دی ہے، جو حکومت کے خلاف جعلی خبریں نشر کر رہے تھے۔

مواصلاتی ایجنسیوں کی طرف سے جعلی خبروں اور پروپیگنڈے کے خلاف کارروائی سے متعلق ایک سوال کے جواب میں وزیر مملکت برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر ایل مروگن نے ایوان بالا کو مطلع کیا تھا کہ حکومت نے ٹوئٹر سمیت ان کے تمام سوشل میڈیا اکاؤنٹس جیسے 60 یوٹیوب چینلز کو بلاک کر دیا ہے۔ پابندی لگا دی گئی. حکومت کی جانب سے کہا گیا کہ یہ تمام یوٹیوب چینلز اور ان کے متعلقہ فیس بک اور انسٹاگرام پیجز حکومت ہند کے خلاف جعلی خبریں پھیلانے میں ملوث تھے۔ اس کے ساتھ یہ بھی کہا گیا کہ ان سب کو پاکستان کی حمایت حاصل ہے۔
Advertisement

ان خبروں کو بھی پڑھیں

سورس : نیوز نیشن

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button