اہم خبریںاہم خبریں، تازہ سرخیاںبین الاقوامی خبریںتازہ تریندہلیسائنس و ٹیکنالوجی و کلائمیٹقومی خبریں

ناسا کے ماہرین نے بتایا کہ کیا مریخ پر قوس قزح بنتی ہے

مریخ پر موجود قطرے زمین کے بادلوں کے قطروں سے 10 گنا چھوٹے ہیں۔

ان بوندوں کو کم از کم 10 گنا بڑا ہونا ضروری ہے۔

یہی وجہ ہے کہ مریخ پر قوس قزح نہیں بنتی

کیا مریخ پر قوس قزح ہیں؟ ناسا نے اس سوال کا جواب انہوں نے اپنی ask the expert سیریز کی ایک نئی قسط میں دیا ہے۔ انسٹاگرام پر شیئر کی گئی ایک ویڈیو میں ناسا کے سیارے کے سائنسدان اور مریخ کے ماہر ‘مارک لیمن’ نے اس کی وضاحت کرنے کی کوشش کی ہے۔ تو اس سوال کا جواب ہے’ نہیں۔ مریخ پر کوئی قوس قزح نہیں بنتا ہے۔ حالانکہ بہت سی دوسری چیزیں زمین کی طرح ہیں۔مریخ پر قوس قزح نہ ہونے کی وجہ بتاتے ہوئے سائنسدان لیموں نے بتایا کہ اس کی تشکیل کے لیے پانی کے علاوہ دیگر چیزیں بھی ہیں۔ قوس قزح اس وقت بنتی ہے جب سورج کی روشنی سرکلر قطرے سے گزرتی ہے، منعکس ہوتی ہے اور انسانی آنکھ سے ٹکراتی ہے۔ یہ عام طور پر بارش کے بعد ہوتا ہے۔

لیموں نے کہا کہ قوس قزح بنانے میں پانی کے گول قطرے لگتے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ مریخ پر پانی کی بوندیں کافی نہیں ہیں۔ مریخ پر قطرے زمین کے بادلوں میں پائے جانے والے قطروں سے 10 گنا چھوٹے ہیں اور قوس قزح بنانے کے لیے ان قطروں کا کم از کم 10 گنا بڑا ہونا ضروری ہے۔ لیمن نے کہا کہ ہو سکتا ہے کہ مریخ کے بادلوں میں برف ہو لیکن یہ بھی قوس قزح بنانے کے لیے کوئی فائدہ مند نہیں۔

مریخ پر زندگی کے امکانات تلاش کرنے کے لیے ناسا 1970 سے وہاں مشینیں اور آلات بھیج رہا ہے۔ حال ہی میں ناسا کے مریخ روور نے کرہ ارض میں کچھ ایسا ہی دیکھا ہے، جو آج تک کسی نے نہیں دیکھا۔ مارس روور مریخ کے جیزیرو کریٹر کے علاقے میں سطح کو کھرچ رہا ہے۔ اس کے بعد چٹان کے نیچے سے ایسی چیز ملی جو یقیناً پہلے کبھی نہیں دیکھی گئی تھی۔ ان تصاویر نے مریخ پر زندگی کی ممکنہ موجودگی کے اسرار کے بارے میں تجسس بڑھا دیا ہے۔ روور اب ان نمونوں کو جمع کرے گا، تاکہ زمین پر سائنسدان مزید دریافت کر سکیں۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button