اہم خبریںاہم خبریں، تازہ سرخیاںتازہ تریندہلیقومی خبریں

نئے سال کے جشن میں 300 کروڑ کی شراب پی گئے ان دو ریاستوں کے لوگ



نئے سال کے جشن میں شراب کی بہت زیادہ فروخت ہوئی۔ تلنگانہ اور آندھرا پردیش میں سال 2021 کے آخری دن 31 دسمبر کو 300 کروڑ روپے کی شراب فروخت ہوئی۔ حکومت نے اس خاص دن کے لیے شراب کے ٹھیکے، پب، بار کھولنے کی آخری تاریخ بڑھا دی تھی۔



حیدرآباد / امراوتی: تیلگو ریاستوں میں سال نو کے جشن میں 300 کروڑ روپے کی شراب فروخت ہوئی ہے۔ تلنگانہ میں شراب پینے والوں نے ایک دن میں 172 کروڑ روپے کی شراب پی ۔جب کہ پڑوسی ریاست آندھرا پردیش میں نئے سال کی شراب کی فروخت سے سرکاری خزانے میں تخمینہ 124 کروڑ روپے کا اضافہ ہوا ہے۔



ذرائع کے مطابق یہ صرف ابتدائی تخمینہ ہے (نئے سال کے موقع پر شراب کی فروخت) اور حتمی اعداد و شمار اس سے زیادہ ہو سکتے ہیں۔ حیدرآباد اور بقیہ تلنگانہ میں حکام نے پب، بار اور شراب کی دکانوں کے اوقات میں توسیع کردی، جس نے فروخت میں اضافے میں اہم کردار ادا کیا۔



تلنگانہ کے امتناعی اور ایکسائز ڈپارٹمنٹ نے شراب خانوں کے لائسنس ہولڈرز، ایونٹ پرمٹ مینجمنٹ کے لائسنس دہندگان اور تلنگانہ ٹورازم ڈیولپمنٹ کارپوریشن کے اندرون خانہ لائسنس رکھنے والوں کو 31 دسمبر 2021 اور 1 جنوری 2022 کی درمیانی رات 1 بجے تک شراب فروخت کرنے کی اجازت دی تھی۔



حکومت نے قواعد میں نرمی کرتے ہوئے شراب کی دکانوں کو 31 دسمبر کی آدھی رات 12 تک شراب فروخت کرنے کی اجازت دی تھی۔ حیدرآباد اور پڑوسی رنگا ریڈی اضلاع میں سب سے زیادہ فروخت ریکارڈ کی گئی۔



دسمبر میں تلنگانہ نے شراب کی فروخت سے ریکارڈ 3,459 کروڑ روپے کمائے۔ حکام کے مطابق دسمبر 2020 کے دوران شراب کی فروخت 2,765 کروڑ روپے تھی۔ پورے 2021 میں ریاست میں شراب کی فروخت کا تخمینہ 30,222 کروڑ روپے ہے۔ محکمہ ایکسائز نے حال ہی میں تلنگانہ میں مزید 104 دکانوں کے ساتھ 159 بار کو منظوری دی ہے۔ ریاست میں اس وقت شراب کی 2,220 دکانیں اور 1,500 پب، بار، ریستوراں اور سیاحتی ہوٹل ہیں۔



آندھرا پردیش نے شراب خانوں اور شراب کی دکانوں کے اوقات میں بھی توسیع کی تھی اور ریٹیل آؤٹ لیٹس پر پریمیم برانڈز کی دستیابی نئے سال کے موقع پر زبردست فروخت کا باعث بنی۔ آندھرا پردیش حکومت نے بھی 2021 کے پہلے آٹھ مہینوں میں شراب کی فروخت سے 12,000 کروڑ روپے سے زیادہ کی ریکارڈ آمدنی حاصل کی۔ پورے کیلنڈر سال کے لیے فروخت 20,000 کروڑ روپے کے اعداد کو چھونے کی امید ہے۔




آندھرا پردیش میں وائی ایس آر کانگریس پارٹی کی حکومت شراب کی فروخت میں اضافہ کو لے کر تنقید کی زد میں ہے۔ اپوزیشن جماعتوں نے مرحلہ وار پابندی کو مکمل کرنے کے حکومتی عزم پر سوال اٹھایا ہے۔ ریاستی حکومت، جو شراب کی واحد تھوک اور خوردہ فروش ہے، نے دعویٰ کیا ہے کہ پچھلے ڈھائی سالوں میں شراب کی کھپت میں کمی آئی ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button