اہم خبریںبہارپٹنہجھارکھنڈ

لالو پرساد یادو سب سے بڑے چارہ گھوٹالہ کیس میں مجرم قرار: رانچی سی بی آئی عدالت نے ڈورانڈا ٹریژری کیس میں فیصلہ سنایا، 21 فروری کو ہوگا سزا کا اعلان

بہار ،15 فروری(قومی ترجمان) یہ فیصلہ 950 کروڑ روپے کے ملک کے مشہور چارہ گھوٹالہ (ڈورانڈا ٹریژری سے 139.35 کروڑ روپے کا غبن) کے سب سے بڑے کیس میں منگل کو آیا۔ سی بی آئی کی خصوصی عدالت نے آر جے ڈی سپریمو لالو یادو سمیت 75 ملزمان کو مجرم قرار دیا ہے۔ ساتھ ہی 24 لوگوں کو بری کر دیا گیا ہے۔ سزا کا اعلان 21 فروری کو کیا جائے گا۔ جیسے ہی آر جے ڈی سپریمو کی سزا کی اطلاع سامنے آئی، پٹنہ سے لے کر رانچی تک ان کے حامیوں میں بے چینی پھیل گئی۔ کورٹ کمپلیکس آر جے ڈی لیڈروں سے بھرا ہوا ہے۔ پولیس کا پہرہ سخت کر دیا گیا ہے۔

آپ کو بتادیں کہ اس سے پہلے لالو کو چارہ گھوٹالہ کے 4 معاملات (ایک دیوگھر، دمکا ٹریژری کے دو مختلف سیکشنز اور چائباسا ٹریژری سے متعلق دو معاملے) میں مجرم ٹھہرایا جا چکا ہے۔ وہ اس سے پہلے کے تمام مقدمات میں ضمانت پر باہر تھے لیکن منگل کو عدالت کے فیصلے کی وجہ سے انہیں ایک بار پھر جیل جانا پڑے گا۔ 29 جنوری کو سی بی آئی کے خصوصی جج ایس کے ششی کی عدالت نے دلائل کے اختتام کے بعد فیصلہ سنانے کی تاریخ 15 فروری مقرر کی تھی۔ تمام ملزمان کو عدالت میں جسمانی طور پر پیش ہونے کا حکم دیا گیا۔ سماعت میں حاضر ہونے کے لیے لالو دو دن پہلے 13 فروری کو رانچی پہنچے تھے۔

یہ بھی پڑھیں

آسمان سے اچانک سینکڑوں پرندے پراسرار طور پر گرے اور مر گئے ( ویڈیو نے لوگوں کے دل دہلادیے ) دیکھیں یہاں

عدالت میں سماعت سے پہلے لالو کے وکیل پربھات کمار نے کہا تھا، ‘ملزم کی عمر 75 سال سے زیادہ ہے۔ لالو یادو جیل جانے کی پوزیشن میں نہیں ہیں۔ ایسے میں عدالت سے راحت کی امید ہے۔ پہلے صورت حال مختلف تھی، آج مختلف ہے۔

یہاں سابق وزیر اعلیٰ رابڑی دیوی کی رہائش گاہ کے باہر خاموشی ہے۔ اپوزیشن لیڈر تیجسوی یادو رابڑی دیوی کی رہائش گاہ پر ہیں۔ لالو پرساد یادو کی اہلیہ اور سابق وزیر اعلیٰ رابڑی دیوی بھی پٹنہ میں ہیں۔ لالو پرساد کی بڑی بیٹی میسا بھارتی رانچی میں اپنے شوہر کے ساتھ ہیں۔

جانئے، ڈورانڈا ٹریژری اسکینڈل آخر ہے کیا؟ ڈورانڈا خزانے سے 139.35 کروڑ روپے کی غیر قانونی نکالنے کے معاملے میں، اسکوٹر پر نقلی جانوروں کی نقل و حمل کی کہانی ہے۔ یہ ملک میں پہلا واقعہ سمجھا جاتا تھا جب جانور کو بائیک اور اسکوٹر پر لے جایا گیا تھا۔ یہ سارا معاملہ 1990-92 کے درمیان کا ہے۔ سی بی آئی کو جانچ میں پتہ چلا کہ افسران اور لیڈروں نے مل کر جعلسازی کا انوکھا فارمولا تیار کیا۔ 400 بیلوں کو ہریانہ اور دہلی سے اسکوٹر اور موٹر سائیکلوں پر رانچی لے جایا گیا۔ تاکہ بہار میں اچھی نسل کی گائے اور بھینسیں پیدا ہو سکیں۔ 1990-92 کے دوران محکمہ حیوانات نے 50 بیل 2,35, 250، 163 بیل اور 65 گائے 14,04,825 روپے میں خریدے۔

یہی نہیں محکمے نے اس مدت کے دوران کراس بریڈ ہیفر اور بھینس کی خریداری پر 84 لاکھ 93 ہزار 900 روپے مرہ لائیو اسٹاک دہلی کے آنجہانی مالک وجے ملک کو ادا کیے تھے۔ اس کے علاوہ بھیڑ بکریوں کی خریداری پر بھی 27 لاکھ 48 ہزار روپے خرچ کیے تھے ۔

اس گھوٹالے کی خاص بات یہ ہے کہ محکمہ نے جانوروں کو لانے کے لیے رجسٹر میں جو گاڑیوں کے نمبر دکھائے تھے وہ سب اسکوٹر اور موپیڈ تھے۔ سی بی آئی کی جانچ میں پتہ چلا ہے کہ لاکھوں ٹن مویشیوں کا چارہ، بھوسا، بھوسا، پیلی مکئی، بادام، کیک، نمک وغیرہ کو اسکوٹر، موٹر سائیکل اور موپیڈ پر لے جایا گیا تھا۔ تحقیقاتی ٹیم نے ملک کی تمام ریاستوں کے تقریباً 150 ڈی ٹی اوز اور آر ٹی اوز سے گاڑی کا نمبر چیک کر کے ثبوت اکٹھے کیے ہیں۔ سی بی آئی کے مطابق اس گھوٹالے میں لاکھوں ٹن بھوسا، بھوسا، پیلی مکئی، بادام کیک، نمک وغیرہ بھی اسکوٹر، بائک اور موپیڈ پر لے جایا گیا تھا۔ لیکن دلچسپ بات یہ ہے کہ ہریانہ سے اچھی نسل کے بیل، بچھیا اور ہائبرڈ بھینس کو بھی اسکوٹر کے ذریعے جھارکھنڈ لایا گیا، تاکہ یہاں اچھی نسل کی گائے اور بھینسیں پیدا کی جاسکیں۔

سی بی آئی کو اس معاملے میں 575 گواہوں کے بیانات ریکارڈ کرنے میں 15 سال لگے۔ 99 ملزمان میں سے 53 ملزمان سپلائی کرنے والے ہیں جبکہ 33 ملزمان محکمہ حیوانات کے اس وقت کے افسران اور ملازمین ہیں۔ اس کے ساتھ ہی 6 ملزمین اس وقت کے ٹریژری افسر ہیں، جب کہ اس معاملے میں 6 ملزمین ہیں، جنہیں سی بی آئی آج تک تلاش نہیں کر پائی ہے۔ میسا بھارتی نے کہا… والد کی طبیعت خراب تھی پیر کو لالو کی بڑی بیٹی میسا بھارتی رانچی پہنچی تھیں۔ انہوں نے لالو پرساد سے سرکاری گیسٹ ہاؤس میں ملاقات کی اور صرف اتنا کہا کہ ان کے والد کی طبیعت خراب ہے۔

ان خبروں کو بھی پڑھیں

سورس : دینک بھاسکر

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button