اہم خبریںبہارسیوان

شہاب الدین کا خاندان لالو کو دے گا جھٹکا! راجیہ سبھا کا امیدوار نہیں بنائے جانے پر حنا شہاب کے حامی ناراض، کہا- سب کی رائے سے کروں گی آگے کا فیصلہ

یہ سبھی کارکنان نہیں بلکہ ہمارے خاندان کا حصہ ہیں۔ پورے بہار میں جہاں کہیں بھی ہمارے خاندان کے لوگ حمایتی ہیں ہم تمام لوگوں سے مشورہ لیں گے،پڑھیں مکمل خبر…….

سیوان : بہار میں ان دنوں راجیہ سبھا انتخابات زوروں پر ہیں۔ ادھر سیوان میں بغاوت کی قیاس آرائیاں کی جا رہی ہیں۔ وجہ یہ ہے کہ آنجہانی سابق ایم پی شہاب الدین کی بیوی حنا شہاب کو راجیہ سبھا کا ٹکٹ نہیں مل رہا ہے۔ آر جے ڈی سے امید رکھنے والے حامی اب پارٹی کے بائیکاٹ کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

اس سب کے درمیان شہاب نے جمعہ کو کہا کہ وہ پارٹی چھوڑنے کا فیصلہ سب کی رائے کی بنیاد پر کریں گے۔

ان کے اس بیان کے بعد سیوان سے پٹنہ تک سیاسی گلیاروں میں ہلچل مچ گئی۔ اب ہر کسی کی زبان پر ایک ہی سوال ہے کہ کیا شہاب الدین خاندان لالو خاندان سے الگ ہو جائے گا یا یہ محض ایک عارضی اور لمحاتی غصہ ہے؟ اگر حنا شہاب کے حامی آر جے ڈی سے ٹوٹ جاتے ہیں تو پارٹی کو اس کا بھاری نقصان اٹھانا پڑ سکتا ہے۔

ہم آپ کو بتاتے چلیں کہ آر جے ڈی دو امیدواروں کو راجیہ سبھا ممبر کے طور پر بھیج سکتی ہے۔ حنا شہاب کا نام شروع سے ہی اس فہرست میں شامل تھا۔ اس سلسلے میں تیجسوی یادو اور لالو یادو کے ساتھ کئی دور کی میٹنگیں بھی ہوئیں۔ امید ہے کہ وہ اس بار راجیہ سبھا کی رکن بنیں گی۔

تقسیم و مساوات کے مطابق اگر میسا بھارتی پہلی سیٹ پر اور حنا شہاب دوسری سیٹ پر چلی جاتیں تو بھی میری مساوات فٹ ہوتی، لیکن آخری موقع پر آر جے ڈی نے میسا بھارتی کے ساتھ حنا شہاب کی جگہ فیاض احمد کو امیدوار بنایا۔ ایسے میں حنا کے حامیوں میں کافی غصہ ہے۔ سیوان میں وہ مسلسل احتجاج کر رہی ہیں۔ ان کے حامیوں کا کہنا ہے کہ اگر مسلمان ہی بھیجنا تھا تو حنا شہاب کو کیوں نہیں؟

پانچ ہزار حامی پرتاپ پور پہنچ گئے۔

ٹکٹ کٹنے کے بعد سیوان کے ایک ہوٹل میں منعقدہ میٹنگ میں آر جے ڈی کا بائیکاٹ کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔

اس کے بعد تقریباً 5000 حامی شہاب الدین کے آبائی گاؤں پرتاپ پور پہنچ گئے ۔یہاں ان کی ملاقات حنا شہاب سے ہوئی۔ انہوں نے اپنے حامیوں کو یقین دلایا ہے کہ میں کارکنوں کے فیصلے پر عمل کروں گی ۔

اس دوران سابق رکن اسمبلی مرحوم محمد شہاب الدین امر رہے کے نعرے بھی لگائے گئے۔

خبر یہ بھی ہے کہ حنا شہاب سمیت ان کے حامی مسلسل جے ڈی یو لیڈروں سے رابطے میں ہیں۔حنا شہاب نے بیان میں کہا کہ پارٹی چھوڑنے کے فیصلے پر کارکنوں سے مشورہ لیں گی ۔

آر جے ڈی لیڈر حنا شہاب نے کہا، ‘ابھی تک پارٹی چھوڑنے کا فیصلہ نہیں کیا ہے۔

حنا شہاب الدین

حنا شہاب (اہلیہ سید شہاب الدین مرحوم) نے کہا :

یہ سبھی کارکنان نہیں بلکہ ہمارے خاندان کا حصہ ہیں۔ پورے بہار میں جہاں کہیں بھی ہمارے خاندان کے لوگ حمایتی ہیں ہم تمام لوگوں سے مشورہ لیں گے۔

” حنا شہاب اہلیہ شہاب الدین مرحوم "

پارٹی کارکنوں سے ملاقات کے بعد بات کریں گے اور اس کے بعد کارکنان کا جو بھی فیصلہ ہو گا اسے قبول کیا جائے گا۔

حنا کو 12 دن پہلے بی جے پی کے اسٹیج پر دیکھا گیا تھا۔

سیوان میں 15 مئی کو دیانند آیورویدک میڈیکل کالج اور ہسپتال میں 75 ویں یوم آزادی امرت مہوتسو پروگرام کا انعقاد کیا گیا تھا ۔ اس میں پہلی بار شہاب الدین کی بیوی حنا شہاب بہار اسمبلی کے اسپیکر وجے کمار سنہا، بی جے پی کے وزیر صحت منگل پانڈے اور جے ڈی یو کے کئی ایم ایل ایز کے ساتھ اسٹیج پر نظر آئیں۔

سب کو ایک پلیٹ فارم پر دیکھ کر کئی طرح بحث و قیاس آرائی شروع ہو گئی ۔

حنا شہاب اہلیہ شہاب الدین مرحوم

آیورویدک کالج کا قیام شہاب الدین نے کیا، لیکن آج تک ایسا کبھی نہیں ہوا کہ حنا نے کبھی این ڈی اے کے لیڈروں کے ساتھ بڑا اسٹیج شیئر کیا ہو۔ خاص بات یہ تھی کہ انہیں پہلی لائن میں ہی جگہ دی گئی اور کچھ بی جے پی ایم ایل اے کو دوسری لائن میں بٹھایا گیا۔

سیوان میں 15 فیصد مسلم ووٹ

سیوان میں تقریباً 15 فیصد مسلم ووٹ ہیں۔سب سے بڑی لڑائی اس ووٹ بینک کا وراثت بننا ہے ۔ سب کی نظریں اس سیوان پر ہیں جس کی سلطنت شہاب الدین چھوڑ کر گئے ہیں ۔

سید شہاب الدین سابق ایم ایل اے سیوان

شہاب الدین کی شناخت سیوان سے ہے اور سیوان کی شناخت شہاب الدین سے ہے۔ سیوان میں شہاب الدین کی حکومت متوازی چل رہی تھی۔

ان کے رہتے ڈاکٹر سے لے کر بس کے کرایے تک میں لگام لگا تھا۔ ان کی عدم موجودگی کی وجہ سے ان کا ووٹ بنک تقسیم ہو چکا ہے اور سیاسی جماعتیں بھی اس ووٹ کو اکٹھا کرنے پر نظریں جمائے ہوئے ہیں۔

قومی ترجمان
قومی ترجمان
Qaumi Tarjuman
قومی ترجمان

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button