اہم خبریںبہار

شراب بندی کے مقدمات کو نمٹانے کے لیے بہار میں 33 خصوصی عدالتیں کی گئیں قائم

  • شراب بندی قانون کے تحت مقدمات کی سماعت کے لیے ریاست کے 38 اضلاع میں پہلے سے ہی عدالتی نظام موجود ہے ۔
  • نئے نظام کے تحت 33 اضلاع میں نئی خصوصی عدالتیں قائم کی گئی ہیں جن میں سرکاری وکیلوں سمیت ججز کے لیے بھی انتظامات کیے گئے ہیں۔
  • کل 71 عدالتوں کے مکمل ہونے سے بہار میں شراب بندی کی سماعت میں کافی تیزی آئے گی اور عدالت میں زیر التوا تمام مقدمات جلد ہی نمٹائے جائیں گے۔

بہار،24 جنوری (قومی ترجمان) میں شراب پر مکمل پابندی ہے جس کی وجہ سے شراب بندی قانون کے تحت مقدمات تیزی سے بڑھ رہے ہیں۔ بہار حکومت نے شراب بندی قانون کے تحت مقدمات کی سماعت کے لیے 33 خصوصی عدالتیں قائم کی ہیں۔ شراب بندی قانون کے تحت مقدمات کی سماعت کے لیے ریاست کے 38 اضلاع میں پہلے سے ہی عدالتی نظام موجود ہے ۔

نئے نظام کے تحت 33 اضلاع میں نئی خصوصی عدالتیں قائم کی گئی ہیں جن میں سرکاری وکیلوں سمیت ججز کے لیے بھی انتظامات کیے گئے ہیں۔ کل 71 عدالتوں کے مکمل ہونے سے بہار میں شراب بندی کی سماعت میں کافی تیزی آئے گی اور عدالت میں زیر التوا تمام مقدمات جلد ہی نمٹائے جائیں گے۔

شراب کے مقدمات کی سماعت کے لیے وزیر قانون پرمود کمار نے کہا کہ بہار حکومت کے سربراہ نتیش کمار کے ساتھ مل کر بہار مقننہ نے یہ فیصلہ کیا تھا کہ بہار میں شراب بندی کا قانون نافذ کیا جائے اور اسے نافذ کر دیا گیا ہے۔ ہم نے اس بات کو یقینی بنانے کے لیے ایک خصوصی عدالت تشکیل دی ہے کہ اس قانون سے متعلق تمام مقدمات کی سماعت ہو رہی ہے۔ اب پورے بہار میں 71 خصوصی عدالتیں ہیں جہاں امتناعی قانون کے تحت مقدمات کی سماعت ہوگی۔

وزیر نے کہا کہ اس طرح کے مقدمات کو تیز رفتاری سے ٹرائل کرکے حل کیا جائے گا۔ وزیر نے یہ بھی کہا کہ امتناعی قانون کے تحت کیس کی رفتار بڑھتی جارہی ہے۔ 33 اضلاع میں مزید کیسز آرہے تھے اس لیے ہم نے وہاں عدالت بنائی۔ ملزمان کے خلاف جلد کارروائی کی جا رہی ہے۔ لوگ مسلسل پکڑے جا رہے ہیں۔ فوری کارروائی کے لیے 38 عدالتیں قائم کی گئی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کے مقدمات کو نمٹانے کے لیے ریاست میں کل 71 عدالتیں ہیں۔ جتنے بھی بڑے لوگ ہوں یا جو بھی مجرم ہوں ان کے خلاف فوری کارروائی کی جائے گی۔ کسی قصوروار نہیں چھوڑا جائے گا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button