اہم خبریںبین ریاستی خبریںدہلیعالمی خبریں

حکومتیں اپنی کرنسی کیوں گرا دیتی ہیں؟کمزور روپے کے فائدے بھی جانئیے

بدھ 15 دسمبر کو ڈالر کے مقابلے روپیہ گزشتہ ڈیڑھ سال کی کم ترین سطح پر آگیا۔ یعنی ایک ڈالر کی قیمت 76 روپے سے آگے ہے۔ آپ نے لوگوں کو یہ کہتے بھی سنا ہوگا کہ حکومت کچھ کیوں نہیں کرتی؟ اس کی براہ راست ذمہ داری ریزرو بینک آف انڈیا (RBI) پر آتی ہے۔ لیکن یہ بھی کہا جا رہا ہے کہ مرکزی بینک خود نہیں چاہتا کہ روپے کی گراوٹ رکے۔ بلکہ، وہ دسمبر کے آخر تک ملکی کرنسی کو 76.50 روپے کی سطح پر گرتا دیکھنا چاہتا ہے۔ وہ ایسا کیوں کرے گا؟ لیکن ایسا ہوتا ہے۔ دنیا بھر کی حکومتیں اور ان کے مرکزی بینک بعض اوقات جان بوجھ کر اپنی کرنسی کو غیر ملکی کرنسی کے مقابلے میں کمزور رکھتے ہیں۔ یہ صرف کچھ وقت کے لیے ہوتا ہے۔ لیکن بعض اوقات حالات ایسے ہو جاتے ہیں کہ یہ مجبوری طول پکڑ جاتی ہے اور کرنسی چاہنے کے باوجود سامنے نہیں آ پاتی۔ جیسا کہ ترکی اور دیگر کئی ممالک میں دیکھا جا رہا ہے۔

تو کیا آپ کا اپنا ریزرو بینک بھی روپے کو بڑھتا نہیں دیکھنا چاہتا؟ اس کا جواب دینے اور اس سے متعلق تمام روابط حل کرنے سے پہلے ہم ایک خوشخبری سناتے ہیں۔ یکم سے 14 دسمبر کے درمیان ہندوستان کی برآمدات 44.41 فیصد بڑھ کر 16.46 بلین ڈالر ہوگئیں۔ اس میں کمزور روپے کا بھی بڑا حصہ تھا۔ برآمدات میں اضافے سے تجارتی خسارے کو کنٹرول کرنے میں بھی تھوڑی مدد ملی۔ یعنی روپے کا گرنا ہمیشہ بری خبر نہیں لاتا۔ یہاں سے ہم ان تمام معموں کو حل کریں گے جو کسی بھی ملک میں گرتی ہوئی کرنسی اور بڑھتی ہوئی مہنگائی کے گرد گھومتی ہیں۔

فرض کریں کہ ہندوستان کا ایک تاجر چمڑے کے تھیلے امریکہ کو برآمد کرتا ہے۔ فرض کیجئے کہ ہندوستانی کرنسی کی قیمت 70 روپے فی ڈالر ہے ۔ ایک بیگ کی قیمت 1000 روپے ہے۔ امریکی تاجر 500 تھیلوں کا آرڈر دیتا ہے اور تقریباً 7,142 ڈالر فی بیگ فی 1000 روپے ادا کرتا ہے۔ سلسلہ جاری ہے۔ ایک دن اچانک امریکی تاجر ہندوستانی تاجر سے کہتا ہے- ‘یہ بیگ مجھے انڈونیشیا میں مہنگا پڑ رہا ہے۔ آپ قیمت کم کریں۔ ہندوستانی تاجر نے اپنی لاگت اور مجبوریوں کا حوالہ دیتے ہوئے قیمت کم کرنے سے انکار کردیا۔ امریکی تاجر نے بھارت سے اشیا کی خریداری بند کردی۔ کچھ عرصے بعد پتہ چلتا ہے کہ روپے کی قیمت گر کر 75 روپے فی ڈالر پر آ گئی ہے۔ پھر وہی امریکی تاجر دوبارہ ہندوستانی تاجر سے سامان منگوانا شروع کر دیتا ہے۔ قیمت پرانی ہے، لیکن یہ سودا اب امریکی تاجر کے لیے تقریباً 35,714 روپے سستا ہے۔ اسے ہر کنسائنمنٹ پر 7,142 ڈالر کی بجائے صرف 6,666 ڈالر ادا کرنے ہوں گے۔ یعنی وہ پہلے جیسی قیمت پر اضافی 35 بیگ مانگ سکتا ہے۔ روپیہ کمزور رہتا ہے اور بہت سے دوسرے امریکی تاجر بھی ہندوستانی تاجر کو آرڈر دینا شروع کر دیتے ہیں۔ باہر سے آنے والے مہنگے ڈالر پر ہندوستانی تاجر جو نقصان اٹھا رہا تھا، اس کی تلافی تجارت میں اضافے سے ہو رہی ہے۔ لیکن برآمدات کے حجم میں اضافے کی وجہ سے اس کا اثر پوری معیشت پر نظر آرہا ہے۔ ملک کی مجموعی برآمدات بڑھنے لگیں۔

جب کوئی ملک باہر سے زیادہ سامان درآمد کرتا ہے اور کم مال باہر بھیجتا ہے تو تجارتی خسارے کی صورتحال پیدا ہوتی ہے۔ معاشی زبان میں اسے منفی تجارتی توازن بھی کہا جاتا ہے۔ ملکی کرنسی کی کمزوری اس محاذ پر راحت دیتی ہے۔ مثال کے طور پر اگر غیر ملکی کرنسی مہنگی ہو گی تو ان کے لیے ہندوستانی اشیاء سستی ہوں گی اور غیر ملکی اشیاء ہندوستانیوں کے لیے مہنگی ہو جائیں گی۔ یعنی درآمدات کے مقابلے برآمدات بڑھیں گی۔ سرکاری خزانے کے سامنے، اس سے کرنٹ اکاؤنٹ کی صحت بہتر ہوگی۔ یہ الگ بات ہے کہ جب ملک میں غیر ملکی اشیاء پر بہت زیادہ انحصار ہو تو درآمدی بل ایک حد سے کم نہیں ہو سکتا۔ مثال کے طور پر، ہندوستان اپنے خام تیل کا 83 فیصد باہر سے درآمد کرتا ہے۔ اس کے علاوہ موبائل فون، خوردنی تیل، دالیں، سونا چاندی، کیمیکلز اور کھادیں بھی بڑے پیمانے پر درآمد کی جاتی ہیں۔ روپیہ کمزور ہونے سے ملک میں یہ چیزیں مہنگی ہو جاتی ہیں۔ لیکن دوسری طرف بھارت سے پرزے، چائے، کافی، چاول، مصالحے، سمندری مصنوعات، گوشت جیسی اشیا بڑے پیمانے پر برآمد کی جاتی ہیں۔ ایسے میں روپیہ کمزور ہونے سے ایکسپورٹ آرڈر بڑھ جاتا ہے۔ زیادہ برآمد کا مطلب ہے زیادہ ڈالر۔ مہنگا ڈالر اوپر سے آتا ہے اور روپیہ بن جاتا ہے۔

ہندوستان میں روپے کی قیمت کا فیصلہ حکومت نہیں کرتی۔ یہ مکمل طور پر غیر ملکی کرنسی مارکیٹ کے حوالے کر دیا جاتا ہے. طلب اور رسد کی حالت اس کی قیمت کا تعین کرتی ہے۔ تاہم 1975ء تک کرنسی ریٹ میں حکومت کا بہت زیادہ عمل دخل ہوا کرتا تھا۔ جیسا کہ اب بھی چین سمیت دنیا کے کئی ممالک میں ہوتا ہے۔ پھر روپے کی قدر میں کمی یا اضافے میں آر بی آئی کیسے کارگر ہو سکتا ہے؟ یہ سب بالواسطہ ہے۔ مثال کے طور پر اگر ہم موجودہ صورتحال کو لیں تو پچھلے کئی مہینوں سے آر بی آئی بڑے پیمانے پر ڈالر خرید رہا ہے۔ وہ جتنے زیادہ ڈالر خریدے گا، اتنا ہی دباؤ روپے پر پڑے گا۔ وہ گر جائے گا۔ غیر ملکی زر مبادلہ کا RBI کے کل اثاثوں کا تقریباً تین چوتھائی حصہ ہے۔ دسمبر کے آغاز میں ہندوستان کے زرمبادلہ کے ذخائر 636.9 بلین ڈالر تھے۔ زرمبادلہ کے ذخائر میں برآمدات، باہر سے اسٹاک اور میوچل فنڈز میں سرمایہ کاری، سیاحت سمیت کئی ذرائع میں اضافہ۔ لیکن جب آر بی آئی بڑے پیمانے پر غیر ملکی کرنسی خریدنا شروع کرتا ہے، تو اسے ذخائر میں مصنوعی اضافہ اور ملکی کرنسی کے کمزور ہونے کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔ آر بی آئی اس ریزرو کو ہمیشہ کے لیے نہیں رکھتا ہے۔ موقع ملتے ہی بیچ دیتا ہے۔ آخرکار اس کی کوشش یہ بھی ہے کہ معاشی سرگرمیاں، مہنگائی اور پیسے کے بہاؤ کو متوازن رکھا جائے۔ جب آر بی آئی غیر ملکی کرنسی بیچنا شروع کرتا ہے تو روپیہ مضبوط ہونے لگتا ہے۔ فاریکس ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر آر بی آئی نے خزانے میں جمع ڈالر کو ابھی فروخت کرنا شروع نہیں کیا تو دسمبر کے آخر تک روپیہ 77 کی سطح کو عبور کر جائے گا۔

روپے کو کنٹرول کرنے کا ایک اور روایتی ذریعہ شرح سود بڑھانا ہے۔ جیسے ہی آر بی آئی اپنی پالیسی ریٹ (ریپو، ریورس ریپو، سی آر آر) میں اضافہ کرے گا، سود کی شرحیں بڑھ جائیں گی۔ پھر کرنسی کی قلت ہو جائے گی۔ روپے کا مطالبہ۔ گو کہ یہ ڈیمانڈ اندرون ملک نظر آتی ہے لیکن باہر سے آنے والی سرمایہ کاری کی وجہ سے زرمبادلہ کی مارکیٹ میں روپیہ بھی مضبوط ہوتا ہے۔اور اسے روکنے کے لیے اقدامات کریں گے۔ اب آپ یہ بھی سمجھ گئے ہوں گے کہ حکومتیں آر بی آئی جیسے خود مختار ادارے کی کمان سونپنے سے پہلے اتنی مشقت کیوں کرتی ہیں۔ ایسا مانا جاتا ہے کہ زیادہ تر ممالک میں ریزرو بینک کے گورنر حکومت کے کہنے پر پالیسی ریٹ کا فیصلہ کرتے ہیں۔ ہندوستان میں بھی آر بی آئی کے گورنر کی تقرری میں ہمیشہ سیاسی مداخلت کی بات ہوتی رہتی ہے۔

چین اس کی سب سے بڑی مثال ہے کہ کس طرح عالمی تجارت میں اپنی کرنسی کی قدر کم کرکے کھیلا جاتا ہے۔ پچاس سال پہلے، چین جس کا عالمی تجارت میں صرف 1% حصہ تھا، آج دنیا کا سب سے بڑا برآمد کنندہ ہے۔ عالمی تجارت میں چین کا حصہ (15%) امریکہ (8.1%) اور جرمنی (7.8%) سے تقریباً دوگنا ہے۔ پیپلز بینک آف چائنا (PBOC) چین میں رقم کی سپلائی کو کنٹرول کرتا ہے۔ اسے خود حکومت کا حصہ سمجھا جاتا ہے۔ اپنی کرنسی یوآن کی قدر کو ڈالر کے مقابلے میں کم رکھنے کے لیے یہ گزشتہ چند سالوں سے چین کی تجارتی پالیسی کا ایک اہم ذریعہ رہا ہے۔ اس سے اسے اپنی برآمدات بڑھانے میں بہت مدد ملی۔ چین جسے ‘فیکٹری آف دی ورلڈ’ کا خطاب ملا ہے، وہ اتنا مضبوط ہے کہ کم خرچ میں زیادہ سے زیادہ پیداوار کر سکتا ہے۔ ایسی صورت حال میں بہت کم مارجن پر سامان فروخت کرتے ہوئے وہ بمپر والیوم کی بنیاد پر عالمی منڈیوں میں مسلسل سامان اتار سکتا ہے۔ درآمدات اس کی برآمدات سے کم ہیں۔ ایسی صورت حال میں اسے کرنسی کی کمزوری کا اتنا نقصان نہیں ہوتا، جتنا فائدہ اضافی برآمدات کی صورت میں ملتا ہے۔ پیپلز بینک آف چائنا بھی یوآن کو مسابقتی رکھنے کے لیے شرح سود میں کمی جیسے روایتی ٹولز کا استعمال کرتا ہے۔
ترک کرنسی لیرا میں رواں سال ڈالر کے مقابلے میں 45 فیصد کمی دیکھنے میں آئی ہے۔ وہاں مہنگائی اور بے روزگاری اپنے عروج پر ہے۔ لیکن صدر رجب طیب اردگان شرح سود کو ہر ممکن حد تک کم رکھنے کی اپنی پالیسی پر قائم ہیں۔ اسی طرح دنیا کے بہت سے ممالک اقتصادی صورت حال کو بہتر بنانے، خاص طور پر برآمدات بڑھانے یا تجارتی خسارہ کم کرنے کے لیے کرنسی کی قدر میں کمی کا سہارا لیتے ہیں۔ کچھ حکومتیں اپنے قرضوں پر سود کی ادائیگی کو کم سے کم کرنے کے لیے یہ حربہ بھی اپناتی ہیں۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button