بہارتعلیم و روزگارحاجی پور، ویشالیطب و صحت

بہار کے کسان کر رہے ہیں شوگر فری آلو کی کاشت ، زیادہ پیداوار کے ساتھ یہ کئی معنوں میں ہے فائدہ مند

  • شوگر فری آلو کی پیداوار عام آلو کے مقابلے میں 3 گنا زیادہ ہے۔
  • سماجی کارکن اور سربراہ سنتوش کمار مشرا عرف بھولا مشرا کا کہنا ہے کہ ٹنٹن کی اس لگن اور محنت کو دیکھ کر گاؤں کے دوسرے کسان بھی شوگر فری آلو کاشت کرنے کے لیے بیدار ہوئے ہیں
  • یہ شوگر فری آلو مارکیٹ میں تقریباً 80 روپے فی کلو فروخت ہوتا ہے۔



ویشالی : 19 جنوری (قومی ترجمان) اگر کوئی بھی کام درست سمت میں پختہ عزم اور ایمانداری کے ساتھ کیا جائے تو کچھ بھی ناممکن نہیں ہے۔ ویشالی ضلع کے مہنار بلاک کے جلال پور گاؤں کے رہنے والے ٹنتون مشرا نے اس بات کو سچ ثابت کر دیا ہے۔ ٹنٹن مشرا نے اس سال اپنی ایک ایکڑ زمین میں شوگر فری آلو کی کاشت کی ہے۔ تاہم وہ اپنی آلو کی فصل کو اچھی کارکردگی دیکھ کر بہت خوش ہیں۔ اور انہوں نے اس شوگر فری آلو کی کاشت سے بہت سی توقعات وابستہ کر رکھی ہیں۔ ان کو دیکھ کر آس پاس کے دیگر کسان بھی شوگر فری آلو کاشت کرنے کی طرف راغب ہو رہے ہیں۔

ٹنٹن مشرا پیشے کے اعتبار سے کسان ہیں انہوں نے بتایا کہ مجھے سمستی پور، حاجی پور، پوسا وغیرہ جگہوں کے کسانوں نے شوگر فری آلو کاشت کرنے کی ترغیب دی۔ اور اس بار میں نے حاجی پور سے بیج درآمد کرکے شوگر فری آلو کاشت کیا ہے۔ اور میرے ذریعے اگائے گئے شوگر فری آلو کو دیکھ کر آس پاس کے دوسرے کسانوں کو بھی حوصلہ ملا ہے۔



ٹنٹن اپنے تجربے سے بتاتے ہیں کہ شوگر فری آلو کی کاشت میں سب سے اہم بات یہ ہے کہ اس میں کیمیائی کھاد کا استعمال نہیں کیا جاتا صرف نامیاتی کھاد کا استعمال کیا جاتا ہے۔اس کے علاوہ شوگر فری آلو کی پیداوار عام آلو کے مقابلے میں 3 گنا زیادہ ہے۔

یہ شوگر فری آلو مارکیٹ میں تقریباً 80 روپے فی کلو فروخت ہوتا ہے۔ ٹنٹن کا کہنا ہے کہ میں اپنے گاؤں کے کسانوں کو اس کی کاشت کے لیے ترغیب دوں گا اور آنے والے مستقبل میں دوسرے کسانوں کو بھی بیج فراہم کروں گا۔ جلال پور گاؤں کے سماجی کارکن اور سربراہ سنتوش کمار مشرا عرف بھولا مشرا کا کہنا ہے کہ ٹنٹن کی اس لگن اور محنت کو دیکھ کر گاؤں کے دوسرے کسان بھی شوگر فری آلو کاشت کرنے کے لیے بیدار ہوئے ہیں کیونکہ موجودہ دور میں تقریباً ہر گھر میں شوگر کی بیماری پھیل گئی ہے۔ اب ایسی صورتحال میں شوگر فری آلو کی فروخت زیادہ ہوگی جس سے کسانوں کی آمدنی میں اضافہ ہوگا اور کسان خوش ہوں گے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button