اہم خبریںبہاربین ریاستی خبریںپٹنہدربھنگہکٹیہارکشن گنجگوپال گنجمظفر پور

بہار کے ان اضلاع میں بنیں گے 100 سے زیادہ بائی پاس، 4410 کروڑ روپے خرچ ہوں گے، جانیں بننے میں کتنا وقت لگے گا؟

بہار میں محکمہ تعمیر سڑک اس نئے مالی سال میں اپنی اسکیموں پر 4410.00 کروڑ روپے خرچ کرنے جا رہا ہے۔ آئندہ 2 سال میں 100 سے زائد مقامات پر بائی پاس بنائے جائیں گے۔ آپ کو بتاتے چلیں کہ "سولبھ سمپرک یوجنا” کے تحت شہری علاقے میں کم از کم 7 میٹر چوڑا بائی پاس بنایا جائے گا تاکہ نقل و حرکت میں آسانی ہو۔محکمہ روڈ کنسٹرکشن سے موصولہ اطلاع کے مطابق بائی پاس کے لیے جگہ نہ ہونے پر ایلیویٹڈ روڈ تعمیر کیا جائے گا۔

تجویز کے مطابق 120 نئے بائی پاس بنائے جائیں گے۔ان میں سے سب سے زیادہ 11 بائی پاس بیگوسرائے میں بنائے جائیں گے۔اس کی کل لمبائی 20.10 کلومیٹر ہوگی، جبکہ سب سے طویل بائی پاس کی بات کی جائے تو کیمور ضلع پہلے نمبر پر ہے۔ جہاں صرف 6 بائی پاس بنائے جائیں گے جن کی کل لمبائی 52 کلومیٹر ہوگی۔ اگر اخراجات کی بات کریں تو 419 کروڑ کی لاگت سے 33 کلومیٹر طویل صرف 4 بائی پاس بنائے جائیں گے جو کہ سب سے زیادہ ہے۔ لکھی سرائے بہار کا واحد ضلع ہے جہاں کوئی بائی پاس کا منصوبہ نہیں ہے۔ تاہم لکھی سرائے میں ایک نئے بائی پاس کا افتتاح کیا گیا ہے

وزیر اعلیٰ نتیش کمار کی ہدایت پر محکمہ نے بائی پاس کی تعمیر کے لیے ریاست کے تمام اضلاع میں پتھراؤ کے حساب سے جائزہ لیا اس تحقیق میں اس بات پر توجہ مرکوز کی گئی کہ کون سے علاقے ٹریفک جام کا سب سے زیادہ شکار ہیں۔اور دیہی ایسی سڑکوں کو نشان زد کیا گیا ہے جنہیں چوڑا کر کے آسانی سے بائی پاس بنایا جا سکتا ہے۔ویسے ضرورت کے مطابق محکمہ آبپاشی کے تحت باندھوں کو سڑکوں کی شکل میں بنائے جائیں گے۔

بہار کے ان اضلاع میں بنیں گے 100 سے بائی پاس :

بہار کے جن اضلاع میں بائی پاس بننا ہے ان میں ارول، بکسر، بھاگلپور، بھوجپور، کیمور، بیگوسرائے، مشرقی چمپارن، ویشالی، کٹیہار، مدھے پورہ، کھگڑیا، پورنیہ، شیوہر، روہتاس، بانکا نوادہ، جموئی، سیتامڑھی، مظفر پور، گوپال گنج، سمستی پور، سارن، سہرسہ، اورنگ آباد، دربھنگہ، گیا، پٹنہ، نالندہ، کشن گنج، ارریہ، جہان آباد، مدھوبنی، مونگیر، شیخ پورہ، سپول، مغربی چمپارن، سیوان اور لکھی سرائے شامل ہیں۔

حکومت بہار کی ہدایات کے مطابق اگر کسی ضلع میں سڑک نہیں ہے تو وہاں نئی سڑک بنا کر بائی پاس بنایا جائے گا۔اگر نئی سڑک کی تعمیر میں کوئی رکاوٹ ہے تو موجودہ سڑک پر ایلیویٹڈ روڈ بنا کر اسے بائی پاس کے طور پر استعمال کیا جائے گا۔ پراجیکٹس کی بروقت تکمیلی کو یقینی بنانے کا خاص خیال رکھا گیا ہے۔ کم از کم 7 میٹر چوڑا بائی پاس بنایا جائے گا۔

اس وقت بہار کے 24 اضلاع میں بائی پاس ہیں۔ جبکہ بہار کے 350 سے زیادہ بلاکوں کو دو لین والی سڑکوں سے جوڑا گیا ہے۔ ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر کو چار لین سے جوڑنے کے منصوبے پر بھی کام جاری ہے۔ 19 ضلعی ہیڈکوارٹر 4 فور لین سے منسلک ہیں۔ اور اس اسکیم پر 9 اضلاع میں کام جاری ہے، جبکہ باقی 10 اضلاع کو فور لین ہیڈ کوارٹر سے جوڑنے کا منصوبہ تیار ہے۔ بائی پاس کی تعمیر اس کے علاوہ ہوگی۔

بائی پاس کی تعمیر سے عوام کو جام کی پریشانی سے نجات ملے گی۔ریاست کے کسی بھی کونے سے 5 گھنٹے میں پٹنہ آنے کا خواب پورا ہوگا۔ نہ صرف ضلع ہیڈ کوارٹر بلکہ بلاک ہیڈ کوارٹر، پولیس اسٹیشن، سب ڈویژن، اہم مقامات، بازار، اسپتال، اہم تعلیمی ادارے، مذہبی کمپلیکس، سیاحتی مقامات پر جانا بھی آسان ہوگا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button