اہم خبریںبہار

بہار میں حکومت لینے جا رہی ہے بڑا فیصلہ، تین ہزار وارڈ ممبر، پنچ اور کئی مکھیا کی جائے گی کرسی

  • حکومت نے گزشتہ ڈیڑھ سال میں 120 نئے بلدیاتی اداروں کی تشکیل کی منظوری دی ہے۔
  • حکومت کی جانب سے بلدیاتی اداروں کے رقبے میں مسلسل توسیع کے باعث نومنتخب عوامی نمائندوں کی مشکلات میں اضافہ ہوگیا ہے۔ ابھی تک تقریباً تین ہزار وارڈ ممبران اور پنچوں کی میعاد صرف چھ ماہ میں ختم ہونے کے دہانے پر ہے۔ اسی طرح کئی سرداروں کی کرسی بھی چلی جائے گی۔

آنے والے وقت میں بہار کی کچھ اور پنچایتوں کو میونسپل ایریا میں شامل کیا جائے گا۔ حکومت جلد ہی اضلاع کی تجویز پر فیصلہ لے گی۔ اس کے بعد بلدیاتی انتخابات کرانے کی مشق شروع ہو جائے گی۔ حکومت شہری ادارے میں کچھ اور علاقوں کو شامل کرنے کے منصوبے پر کام کر رہی ہے۔

فی الحال اس بارے میں کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ کچھ نگر پنچایتوں اور نگر پریشدوں کو بھی اپ گریڈ کرنے کا منصوبہ ہے۔ اس کے بعد محکمہ پنچایتی راج بلدیاتی انتخابات کے لیے شہری آبادی کا تعین کرے گا۔ اس وقت ریاست میں 263 میونسپل باڈیز ہیں۔ حکومت نے گزشتہ ڈیڑھ سال میں 120 نئے بلدیاتی اداروں کی تشکیل کی منظوری دی ہے۔

واضح رہے کہ بعض اضلاع کی تجاویز تاحال زیر التوا ہیں۔ اس پر جلد فیصلہ کرنے کو تیار ہے۔ حال ہی میں حکومت نے تارا پور اسمبلی حلقہ کے لوگوں کو جیت کا تحفہ دیتے ہوئے اسار گنج کو نگر پنچایت علاقہ قرار دیا تھا۔ اس کے علاوہ دربھنگہ ضلع کے دو میونسپل باڈیز کے رقبے میں توسیع کی منظوری دی گئی ہے۔ اب اضلاع سے موصول ہونے والی نئی تجویز کو جلد ہی کابینہ کا گرین سگنل مل جائے گا۔

حکومت کی جانب سے بلدیاتی اداروں کے رقبے میں مسلسل توسیع کے باعث نومنتخب عوامی نمائندوں کی مشکلات میں اضافہ ہوگیا ہے۔ ابھی تک تقریباً تین ہزار وارڈ ممبران اور پنچوں کی میعاد صرف چھ ماہ میں ختم ہونے کے دہانے پر ہے۔ اسی طرح کئی سرداروں کی کرسی بھی چلی جائے گی۔

مثال کے طور پر مدھوبنی ضلع کی جھانجھر پور نگر پنچایت کو میونسپل کونسل قرار دینے کے بعد دو مکھیا دو سرپنچ، جنوبی اور شمالی پنچایتوں کے دو سرپنچ، ایک مکھیا اور ایک سرپنچ کے علاوہ مونگیر ضلع کی اسار گنج نگر پنچایت بننے کے بعد 50 سے زیادہ وارڈ ممبران۔ اور پنچ کی کرسی چھن گئی ہے۔ مظفر پور کے دامودر پور اور مشہری جیسے علاقوں کو سٹی کونسل قرار دینے کے بعد نو منتخب عوامی نمائندوں کی نیندیں اڑ گئی ہیں۔ اس سلسلے میں پنچایتی راج کے وزیر سمراٹ چودھری نے کہا ہے کہ نئے بلدیاتی اداروں کی توسیع کے بعد اب تک تقریباً تین ہزار وارڈ ممبران اور پنچوں کا علاقہ شہری علاقوں میں چلا گیا ہے۔ آگرہ کے لیے متعلقہ محکمے سے تصدیق طلب کی جا رہی ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button