اہم خبریںبین ریاستی خبریںدہلی

الہ آباد ہائی کورٹ نے غداری کیس میں شرجیل امام کو ضمانت دے دی۔

جے این یو کے سابق طالب علم شرجیل امام کو علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں ملک مخالف بیان دینے پر ضمانت مل گئی ہے۔ الہ آباد ہائی کورٹ نے یہ ضمانت 27 نومبر کو دی ہے۔ انڈیا ٹوڈے سے وابستہ پنکج سریواستو کی رپورٹ کے مطابق ابھی تک عدالت سے تفصیلی ضمانت کا حکم نہیں آیا ہے۔

دراصل، 2019 کے آخر میں دہلی کے شاہین باغ میں CAA اور NRC کے خلاف ایک بڑا احتجاج شروع ہوا تھا۔ اس احتجاج کے منتظمین میں شرجیل امام کا نام بھی شامل تھا۔ شرجیل امام کی شاہین باغ کے قریب تقریر کرنے کی کئی ویڈیوز وائرل ہوئیں۔ دہلی کی جواہر لال نہرو یونیورسٹی سے تعلیم حاصل کرنے والے شرجیل امام نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں بھی تقریریں کیں۔

ایسے الزامات ہیں کہ امام نے اپنی تقریر میں ملک کے حصوں کو کاٹنے کی بات کی۔ خاص طور پر ہندوستان کے شمال مشرقی حصے کو الگ تھلگ کرنے کے لیے۔ اس کے بعد منی پور، آسام اور اروناچل پردیش کی پولیس نے امام کے خلاف ایف آئی آر درج کی۔ امام کو آسام اور اروناچل پردیش کے معاملے میں بھی ضمانت مل چکی ہے۔

شرجیل امام پر دسمبر 2019 میں جامعہ ملیہ اسلامیہ یونیورسٹی کے باہر اشتعال انگیز تقاریر کرنے کا بھی الزام ہے۔ اس معاملے میں دہلی پولیس نے امام پر بغاوت کا الزام لگایا تھا۔ پولیس نے کہا کہ امام کے اشتعال انگیز بیانات کی وجہ سے جامعہ ملیہ کے علاقے میں فسادات ہوئے۔

اس دوران امام کے خلاف اتر پردیش کے علی گڑھ ضلع میں بھی ایف آئی آر درج کی گئی۔ یہاں بھی امام کے خلاف بغاوت اور اشتعال انگیز بیانات کی دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا گیا تھا۔ اس کے بعد شرجیل امام کو بہار کے جہان آباد سے گرفتار کیا گیا۔

شرجیل امام اس وقت دہلی کی تہاڑ جیل میں بند ہیں۔ امام پر دہلی فسادات کی منصوبہ بندی کرنے اور جامعہ احتجاج کے دوران تشدد بھڑکانے کا الزام ہے۔

اس سے قبل شرجیل امام کی جانب سے دہلی کی ساکیت عدالت میں ضمانت کی درخواست دائر کی گئی تھی۔ عدالت نے امام کی درخواست خارج کر دی تھی۔ شرجیل امام کی جانب سے اپنے دفاع میں بار بار کہا جا رہا ہے کہ ان کے خلاف درج مقدمات قانون کے مطابق نہیں ہیں۔

شرجیل امام کے علاوہ سی اے اے-این آر سی احتجاج میں شامل دیگر طلباء کو بھی گرفتار کیا گیا۔ ان کے خلاف UAPA جیسے قوانین کے تحت مقدمات درج کیے گئے تھے۔ ان طلبہ میں ایک نمایاں نام جے این یو کے سابق طالب علم عمر خالد کا ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button