Featuredبہارروہتاس

اردو پڑھنے لکھنے میں بکرم گنج کے بھاسکر سنگھ بنے بہار ٹاپر

اس امتحان میں کل 96 امیدواروں نے حصہ لیا تھا

ہندو نوجوان لڑکے، لڑکیوں میں اردو سیکھنے کی خواہش کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ 96 امیدواروں میں سے صرف نو مسلمان تھے ۔ باقی سب ہندو

  • بھاسکر سنگھ نے تاریخ سے گریجویشن کرنے کے بعد انامالائی یونیورسٹی تمل ناڈو سے 2006 میں ایم بی اے کیا ہے

بکرم گنج /روہتاس – "میں مسلمان ہوں، تو ہندو ہے ، پر ہیں دونوں انسان ” میں تیری گیتا پڑھ لوں، تو پڑھ لے میرا قرآن ” کسی شاعر کی یہ سطور اپنی زندگی میں اتارنے کا دکھاوا تو بہت سے لوگ کرتے ہیں لیکن اسے عملی جامہ بہت کم لوگ ہی پہنا پاتے ہیں۔

اپنی کامیابی کے ساتھ وکرم گنج بلاک کے بلواہی مڈل اسکول کے استاد بھاسکر سنگھ علاقے میں بحث کا موضوع بنے ہوئے ہیں۔ اردو پڑھنے لکھنے کے معاملے میں وہ پورے بہار میں سرفہرست ہیں۔

اس نے کل 100 میں سے 92.1 نمبرات حاصل کیے ہیں۔ ان کا ماننا ہے کہ جو مٹھاس و شیرینی اردو زبان میں ہے وہ کسی اور زبان میں نہیں۔ ان میں اس زبان کو زیادہ سے زیادہ سیکھنے اور پڑھنے کا جذبہ ہے۔

انہوں نے یہ کامیابی آن لائن اردو ٹریننگ سنٹر پٹنہ سے حاصل کی ہے جو حکومت بہار کے کیبنٹ سیکرٹریٹ ڈیپارٹمنٹ کے ڈائریکٹوریٹ آف اردو کے ذریعے چلایا جاتا ہے۔

ان خبروں کو بھی پڑھیں

بھاسکر سنگھ نے بتایا کہ 2021 کو منعقدہ امتحان کا نتیجہ 4 جنوری 2022 کو آیا۔ اس نے اس میں سب سے زیادہ نمبرات حاصل کیے ہیں۔ اس امتحان میں کل 96 امیدواروں نے حصہ لیا اور ہندو نوجوان لڑکے، لڑکیوں میں اردو سیکھنے کی خواہش کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ 96 امیدواروں میں سے صرف نو مسلمان تھے ۔ باقی سب ہندو ۔

سب سے حیران کن بات یہ ہے کہ سرفہرست پانچ امیدواروں میں سے صرف ایک مسلمان ہے۔ باقی ہندو ہیں۔جنہوں نے 90 فیصد سے زیادہ نمبرات حاصل کیے ہیں۔

بھاسکر سنگھ کو اردو تحریر میں 50 میں سے 46 نمبر اور پڑھنے میں 50 نمبروں میں 36.1 نمبر ملے۔ یعنی اسے کل 100 میں سے 92.1 نمبر ملے ہیں۔

کیا آپ راشن کارڈ بنوانا چاہتے ہیں، یہاں کلک کریں، بہار میں راشن کارڈ کے لیے آن لائن درخواست شروع، جلدی کریں رجسٹریشن، یہاں جانیں درخواست دینے کا طریقہ

اردو سیکھنے کے بعد زبان کی عظمت معلوم ہوئی۔

بکرم گنج بلاک کے نیوجت ٹیچرز ایسوسی ایشن کے صدر بھاسکر سنگھ کے مطابق اردو میں جتنی مٹھاس ہے وہ کسی زبان میں نہیں ہے۔ بہت سے الفاظ اور جملوں کو بولنے سے پہلے زبان پر زور دینا پڑتا ہے۔ اردو سیکھنے سے پہلے وہ اس کی اہمیت کو نہیں سمجھتے تھے لیکن آج یہ بالکل مختلف ہے۔ سوریہ پورہ بلاک کے بھڈکوریاکلا گاؤں کے رہنے والے دیناناتھ سنگھ کے بیٹے بھاسکر سنگھ نے تاریخ کے مضمون سے گریجویشن کرنے کے بعد انامالائی یونیورسٹی تمل ناڈو سے 2006 میں ایم بی اے کیا۔ اس وقت وہ استاد کی حیثیت سے خدمت انجام دے رہے ہیں۔ بھاسکر سنگھ کا کہنا ہے کہ اب وہ نالندہ اوپن یونیورسٹی سے اردو میں ایم اے کرنا چاہتے ہیں۔

ان خبروں کو بھی پڑھیں

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button