بہارمونگیر

بی جے پی لیڈر نے بیوی کو گولی مار کر کی خودکشی : مونگیر کا میئر بنانا چاہتا تھا، بیوی نے کہا- میں اب تھک گئی ہوں.. پرچار نہیں کرنا

مونگیر میں ایک سنسنی خیز واقعہ سامنے آیا ہے۔ بی جے پی لیڈر نے اپنی بیوی کو گولی مار کر قتل کر دیا۔ پھر خود کو بھی گولی مار لی۔ واقعہ کوتوالی تھانے کے لال دروازہ کا ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ بی جے پی لیڈر ارون یادو اپنی اہلیہ سے صرف اس لیے ناراض تھی کہ وہ میئر کے لیے انتخابی مہم میں نہیں جانا چاہتی تھی ۔ ارون بی جے پی کے او بی سی مورچہ میں نائب صدر تھے۔ ساتھ ہی بیوی پریتی کماری مونگیر میونسپل کارپوریشن کے انتخابات میں میئر کے عہدے کی امیدوار تھیں۔

درحقیقت شام 6 بجے لگاتار دو گولیوں کی آواز آئی جو لال دروازہ محلہ میں واقع بی جے پی لیڈر کے گھر سے آئی۔ جلدی میں لوگ اس کے گھر کی طرف بھاگے۔ وہاں جا کر دیکھا تو پتہ چلا کہ بی جے پی لیڈر کے بیڈ روم سے فائرنگ کی آواز آئی۔ وہ اپنے بیڈ روم میں گیا تو دیکھا کہ بیڈ روم اندر سے بند تھا۔ میں نے کھڑکی سے دیکھا تو کمرے میں میاں بیوی دونوں کی لاشیں پڑی تھیں۔

کوتوالی کے ایس ایچ او ڈی کے پانڈے نے بتایا کہ واقعہ کی اطلاع ملتے ہی وہ موقع پر پہنچ گئے۔ دونوں کی لاشیں کمرے سے برآمد ہوئیں۔ دونوں کو سر میں گولی لگی ہے۔ جائے وقوعہ سے دو دیسی ساختہ پستول برآمد ہوئے ہیں۔

شوہر کی لاش بستر پر، بیوی کی زمین پر

ان کے کمرے کا دروازہ توڑا گیا تو وہاں منظر ہیبت ناک تھا ۔ بیوی پریتی دیوی کی لاش خون میں لت پت زمین پر پڑی تھی تو بی جے پی لیڈر کی لاش خون میں لت پت بستر پر پڑی تھی۔ وہاں کا منظر دیکھ کر پتہ چلا کہ بی جے پی لیڈر نے پہلے اپنی بیوی کو گولی ماری تھی۔ پھر اس نے خود کو گولی مار کر خودکشی کر لی۔

یہ بھی پڑھیں :

انتخابی مہم کے لیے جانے سے ہچکچاتی تھی : خاندان والوں نے بتایا کہ دونوں کے درمیان نظریاتی اختلافات اس واقعے کی وجہ بنی ۔ لیڈر ارون یادو کے والد پھلیشور یادو نے بتایا کہ بیٹا اپنی بیوی پریتی کو انتخابی مہم میں بھیجنا چاہتا تھا۔ لیکن پریتی مسلسل عوامی رابطہ مہم میں جانے سے تھک چکی تھی۔ اب وہ علاقے میں انتخابی مہم کے لیے جانے سے کتراتی تھیں۔ اس معاملے کو لے کر دونوں کے درمیان گزشتہ 3 دنوں سے کافی جھگڑا چل رہا تھا۔وہیں واقعہ کی اطلاع ملتے ہی نیتا جی کے مقام پر میاں بیوی کی لاش کو دیکھنے کے لیے بڑی بھیڑ جمع ہوگئی۔ مقامی لوگوں کے مطابق بی جے پی لیڈر ارون یادو کی بھی مجرمانہ تاریخ ہے۔ لیکن بی جے پی میں شامل ہونے کے بعد وہ سماجی خدمت میں لگ گئے۔ جوڑے کی موت کے بعد خاندان کا رو رو کر برا حال ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button