اہم خبریںتعلیم و روزگاردہلیسنڈے اسپیشل

بھارت کی پہلی خودکار اینٹ بنانے والی مشین، 1 گھنٹے میں تیار کرے گی 12 ہزار اینٹیں ، ملک اور بیرون ملک مانگ میں اضافہ

کسی بھی گھر یا کثیر المنزلہ عمارت کو کھڑا کرنے کے لیے بہت سی اینٹوں کی ضرورت ہوتی ہے جس سے ایک مضبوط پناہ گاہ تیار ہو ۔ لیکن بھارت کی مختلف ریاستوں میں موجود مختلف بھٹوں میں اینٹوں کی تیاری ایک طویل عمل ہے جس کی وجہ سے ملک بھر میں اینٹوں کی کھپت پوری نہیں ہوتی۔

لیکن ہریانہ میں واقع ایس این پی سی نامی ایک اسٹارٹ اپ کمپنی کے مالک نے اس مسئلے کا حل ڈھونڈ نکالا ہے اور خودکار اینٹ بنانے والی مشین تیار کر لی ہے۔ اس کمپنی کے مالک ستیش چکارا ہیں جنہوں نے 1 گھنٹے میں 12 ہزار اینٹیں بنانے والی خودکار مشین ایجاد کی ہے۔

ستیش چھیکارا کون ہیں ؟

ہریانہ کے بوانا میں رہنے والے ستیش چھیکارا نے اینٹ بنانے والی خودکار مشین ایجاد کی ہے جو صرف 1 گھنٹے میں 12 ہزار اینٹیں تیار کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ دراصل ستیش نے سال 2007 میں پارٹنرشپ میں اینٹوں کے بھٹے کا کام شروع کیا تھا لیکن زیادہ وقت میں کم اینٹ بننے اور بارش میں اینٹوں کے خراب ہونے کی وجہ سے انہیں کافی نقصان اٹھانا پڑا۔

Automatic Brick Making Machine

یہ بھی پڑھیں

ایسے میں ستیش نے محسوس کیا کہ کاریگروں کی مدد سے اینٹوں کو تیار کرنے میں زیادہ وقت اور پیسہ لگتا ہے اس لیے اس نے اینٹ بنانے کی مشین بنانے کا فیصلہ کیا۔ اس کام کے لیے ستیش نے اپنے بھائی کی مدد لی جس کے بعد دونوں بھائیوں نے مل کر 7 سال کی محنت کے بعد آٹومیٹک اینٹ بنانے والی مشین ایجاد کرنے میں کامیابی حاصل کی۔

مشین اینٹوں کی کھپت کو پورا کرے گی۔

اس مشین کی مدد سے بھٹے پر اینٹیں بنانے کا کام آسان ہو جائے گا جبکہ مزدوروں کی محنت بھی بچ جائے گی۔ یہ ہندوستان کی پہلی آٹومیٹک اینٹ بنانے والی مشین ہے جسے اپنی صلاحیت کی وجہ سے آج دنیا بھر میں پہچان ملی ہے۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ کسی بھی بڑی عمارت کی تیاری کے لیے 25 ہزار کروڑ کی اینٹوں کی ضرورت ہوتی ہے، لیکن تعمیراتی جگہ پر صرف 8250 اینٹیں فراہم کی جاتی ہیں۔ ایسی صورتحال میں آپ سمجھ سکتے ہیں کہ خودکار اینٹ بنانے والی مشین سے بنی اینٹ کثیر المنزلہ عمارتوں کی جلد تعمیر میں کس طرح مددگار ثابت ہوسکتی ہے۔

Automatic Brick Making Machine

عام طور پر ایک بھٹہ پر کام کرنے والا مزدور 1 گھنٹے میں زیادہ سے زیادہ 80 اینٹیں بنا سکتا ہے جب کہ خودکار اینٹ بنانے والی مشین 1 گھنٹے میں 12 ہزار اینٹیں تیار کرتی ہے۔ ایسے میں اس مشین کے استعمال سے اینٹوں کی کھپت کو جلد مکمل کیا جا سکتا ہے جس کی وجہ سے تعمیراتی کام میں کوئی رکاوٹ نہیں آئے گی اور کام تیزی سے مکمل ہو جائے گا۔

مشین کیسے کام کرتی ہے؟

آٹومیٹک برک میکنگ مشین سے اینٹیں بنانے کے لیے فلائی ایش، چاول کی بھوسی اور مٹی کو پہلے آپس میں ملایا جاتا ہے، جس کے بعد تیار شدہ خام مال کو کنویئر بیلٹ کی مدد سے مشین کے اندر ڈال دیا جاتا ہے۔

Automatic Brick Making Machine

مشین میں خام مال ڈالتے ہی اسے شروع کر دیا جاتا ہے جس کے بعد یہ مشین خود بخود گھومتی ہے اور خام مال کو اینٹ کی شکل میں تیار کرتی ہے اور ایک ایک کر کے باہر رکھتی ہے۔ اس طرح یہ خودکار مشین 1 گھنٹے میں 12 ہزار اینٹیں تیار کرتی ہے جنہیں دھوپ میں خشک کرنے کے لیے زمین پر چھوڑ دیا جاتا ہے۔

ستیش کے مطابق اینٹ بنانے والی یہ خودکار مشین بالکل ماحول دوست ہے اور ماحول کو بالکل بھی نقصان نہیں پہنچاتی جب کہ بھٹے میں بنی اینٹیں بڑی مقدار میں فضائی آلودگی کا باعث بنتی ہیں۔

Automatic Brick Making Machine

دنیا بھر میں مانگ میں ہوا اضافہ

ستیش چھیکارا اس آٹومیٹک مشین کو دنیا بھر میں اسٹارٹ اپ کے طور پر متعارف کروا رہے ہیں جس کی بین الاقوامی مارکیٹ میں مانگ تیزی سے بڑھ رہی ہے۔ یہ خودکار برک بنانے والی مشین ازبکستان، پاکستان، نیپال اور بنگلہ دیش جیسے ممالک میں فروخت کی جا رہی ہے۔

یہی نہیں ستیش چھکارا کو حکومت ہند نے سال 2020 میں نیشنل اسٹارٹ اپ ایوارڈ سے بھی نوازا ہے، جب کہ ستیش اب تک 250 سے زیادہ خودکار اینٹ بنانے والی مشینیں بیچ چکے ہیں اور وہ مستقبل میں اپنے کاروبار کو مزید وسعت دینا چاہتے ہیں؟

یہ بھی پڑھ سکتے

قومی ترجمان کا ٹیلیگرام گروپ جوائن کرنے کے لیے یہاں کلک کریں!

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button