اتر پردیشاہم خبریں

یوگی آدتیہ ناتھ کی ریلی کے مقام کے قریب کسانوں نے چھوڑ دیا آوارہ مویشی

اتر پردیش اسمبلی انتخابات میں آوارہ مویشی ایک بڑا مسئلہ بن گئے ہیں۔ دارالحکومت لکھنؤ سے تقریباً 40 کلومیٹر دور بارہ بنکی میں کسانوں نے اس مسئلے کی طرف توجہ مبذول کرانے کے لیے ایک انوکھا طریقہ اپنایا۔ بارہ بنکی کے کسانوں نے سی ایم یوگی آدتیہ ناتھ کی ریلی سے پہلے سینکڑوں مویشیوں کو کھلے میدان میں چھوڑ دیا۔ سابق لیڈر رمندیپ سنگھ مان کی جانب سے ٹویٹ کی گئی ایک ویڈیو میں آوارہ مویشیوں کی ایک بڑی تعداد کو کھلے میدان میں گھومتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔

مان نے ٹویٹ میں لکھا، ‘بارہ بنکی میں سی ایم یوگی کے پروگرام سے پہلے کسانوں نے سینکڑوں جانوروں کو کھیتوں سے نکال کر ریلی کے مقام پر چھوڑ دیا، کسانوں نے ان مفت جانوروں کا علاج نہیں کروایا، اور 5 سال میں یوپی حکومت نے بھی کیا کوئی علاج نہیں کروایا۔ اب دیکھنا یہ تھا کہ بی جے پی والے پروگرام سے پہلے کیا سلوک کرتے ہیں!

حالانکہ اس معاملے پر سی ایم یا بارہ بنکی انتظامیہ کی طرف سے فوری طور پر کوئی ردعمل نہیں آیا ہے لیکن سی ایم یوگی نے آج شام ایک ویڈیو ٹویٹ کیا جس میں پی ایم نریندر مودی یوپی میں بی جے پی کے اقتدار میں آنے پر آوارہ مویشیوں کا مسئلہ حل کرنے کا وعدہ کر رہے ہیں۔ پی ایم مودی نے اتوار کو ایک ریلی میں کہا ‘آوارہ جانوروں کی وجہ سے آپ لوگوں کو جو پریشانی ہو رہی ہے اس سے نمٹنے کے لیے نیا نظام 10 مارچ کے بعد لاگو کیا جائے گا۔ ایسا نظام بنایا جائے گا جس کے تحت آپ ایسے جانوروں کے گوبر سے آمدنی حاصل کر سکیں گے جو دودھ نہیں دیتے۔

تاہم کانگریس نے سی ایم یوگی کے ٹویٹ کے خلاف جوابی کارروائی کرنے میں دیر نہیں کی۔ کانگریس نے پانچ سال کے دوران اس مسئلہ کو نظر انداز کرنے پر بی جے پی حکومت پر طنز کیا۔ پارٹی نے کہا کہ یوگی آدتیہ ناتھ اور پی ایم مودی کو آوارہ مویشیوں کا مسئلہ صرف انتخابات سے پہلے نظر آتا ہے۔

ان خبروں کو بھی پڑھیں

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button