اتر پردیشاہم خبریں

یوپی کی ان 47 سیٹوں پر پلٹ سکتی ہے بازی ، 2017 کے اسمبلی انتخابات میں بہت کم فرق سے ہار اور جیت

  • ایس پی لیڈر اکھلیش یادو کچھ ذات پات پر مبنی علاقائی پارٹیوں کے ساتھ اتحاد کو لے کر پرجوش ہیں۔ دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ تمام حلقوں میں نتائج ان کے حق میں ہوں گے۔
  • 2017 کے یوپی اسمبلی انتخابات میں بھی 47 سیٹیں ایسی ہی تھیں جن میں جیت اور ہار کا فیصلہ 5000 سے کم ووٹوں سے ہوا اگر ان سیٹوں پر کسی پارٹی کی طرف ذرا سا بھی جھکاؤ ہوتا ہے تو نتیجہ بھی مکمل طور پر تبدی ہو سکتے ہیں۔


اترپردیش ،23 جنوری (قومی ترجمان) اس بار اتر پردیش اسمبلی انتخابات میں قریبی کا مقابلہ تصور کیا جا رہا ہے۔ ایسے میں کچھ سیٹوں سے بھی حکومت بن یا بگڑ سکتی ہے ۔

2017 کے یوپی اسمبلی انتخابات میں بھی 47 سیٹیں ایسی ہی تھیں جن میں جیت اور ہار کا فیصلہ 5000 سے کم ووٹوں سے ہوا اگر ان سیٹوں پر کسی پارٹی کی طرف ذرا سا بھی جھکاؤ ہوتا ہے تو نتیجہ بھی مکمل طور پر تبدی ہو سکتے ہیں۔


الیکشن کمیشن کے اعداد و شمار کے مطابق ریاستی اسمبلی کی کل 403 سیٹوں میں سے 47 سیٹوں میں ووٹوں کے قلیل فرق سے جیت اور ہار کا فیصلہ ہوا تھا جن میں سے بی جے پی نے 23، ایس پی نے 13 اور بی ایس پی نے 8 سیٹیں جیتیں۔ جبکہ ایک ایک سیٹ کانگریس، اپنا دل اور راشٹریہ لوک دل نے جیتی۔


او بی سی ریاست کی آبادی کا تقریباً 50 فیصد ہیں۔ 2017 کے انتخابات میں جیت کا سب سے کم مارجن سدھارتھ نگر کی ڈومریا گنج سیٹ پر تھا، جہاں بی جے پی امیدوار راگھویندر پرتاپ سنگھ نے بی ایس پی امیدوار سیدہ خاتون کو شکست دے کر 171 ووٹوں کے فرق سے کامیابی حاصل کی۔ بی جے پی لیڈر اوتار سنگھ بھڈانہ آر ایل ڈی میں شامل ہو گئے ہیں۔ انہوں نے اپنے قریبی حریف ایس پی کے لیاقت علی کو شکست دے کر 193 ووٹوں سے بھی کامیابی حاصل کی۔ بی ایس پی کے شیام سندر شرما نے اپنے حریف آر ایل ڈی امیدوار یوگیش چودھری کو شکست دے کر متھرا میں 432 ووٹوں سے کامیابی حاصل کی۔


تین سیٹوں پر جیت کا مارجن ایک ہزار ووٹوں سے کم رہا۔ ان سیٹوں میں گوہنا، رام پور منی ہارن (سہارنپور) اور مبارک پور (اعظم گڑھ) شامل ہیں۔ گوہنا میں بی جے پی کے شری رام سونکر نے اپنے حریف بی ایس پی کے راجندر کمار کو 538 سے شکست دی۔ وہیں رام پور منی ہارن میں بی جے پی کے دیویندر کمار نیم نے اپنے قریبی حریف بی ایس پی کے رویندر کمار ملہو کو 595 ووٹوں سے شکست دیکر کامیابی حاصل کی۔


بی ایس پی کے شاہ عالم عرف گڈو جمالی نے مبارک پور سیٹ پر کامیابی حاصل کی تھی۔ اس سیٹ پر ایس پی امیدوار کو 688 کے فرق سے شکست ہوئی تھی۔ اس بار گڈو بی ایس پی سے باہر ہیں اور ایس پی کے ٹکٹ کے خواہاں ہیں۔ قنوج (محفوظ) سیٹ پر، بی جے پی 2017 میں 2500 ووٹوں سے ہار گئی تھی۔

بی جے پی نے اس سیٹ سے آئی پی ایس سے سیاستدان بنے اسیم ارون کو میدان میں اتارا ہے۔ ایس پی قانون ساز کونسل کے رکن راج پال کشیپ نے کہا کہ ٹکٹ کے انتخاب سے لے کر زمینی سروے تک تمام پہلوؤں کا خیال رکھا جا رہا ہے۔ بی جے پی کے خلاف ناراضگی بڑھ رہی ہے، ہمیں ایسی تمام سیٹوں پر فائدہ ہونے کا یقین ہے۔ بی جے پی کے ترجمان راکیش ترپاٹھی نے کہا کہ اپوزیشن کی تمام چالوں کے باوجود وزیر اعظم نریندر مودی اور وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ ووٹروں کے پسندیدہ ہیں۔


ایسے میں ذات پات کے مساوات کو مدنظر رکھتے ہوئے تمام سیاسی پارٹیاں ان سیٹوں کے لیے امیدواروں کا انتخاب کر رہی ہیں۔ مخالف جماعتوں کے امیدواروں پر بھی پورا خیال رکھا جا رہا ہے۔ یہ جماعتیں ان نشستوں پر اپنے امیدواروں کا انتخاب احتیاط سے کر رہی ہیں۔ پارٹیوں کا اندرونی سروے ہر نشست کے لیے امیدواروں کو حتمی شکل دینے میں اہم کردار ادا کر رہا ہے۔ بی جے پی کو یقین ہے کہ موجودہ انتخابات میں ان کا ہندوتوا اور ترقی کا مسئلہ نہ صرف ان سیٹوں پر بلکہ سیاسی طور پر اہم ریاست کے تمام حلقوں میں اچھے نتائج دے سکتا ہے۔


ایس پی لیڈر اکھلیش یادو کچھ ذات پات پر مبنی علاقائی پارٹیوں کے ساتھ اتحاد کو لے کر پرجوش ہیں۔ دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ تمام حلقوں میں نتائج ان کے حق میں ہوں گے۔ ایس پی سوامی پرساد موریہ، دارا سنگھ چوہان اور دھرم سنگھ سینی جیسے پسماندہ ذات کے لیڈروں کو اپنے حق میں لے کر پرجوش ہیں ۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button