اہم خبریںعجیب و غریبگجرات

گجرات میں ملی نایاب نسل کی مکڑی، نام رکھا گیا ’نرسنگ مہتا‘

گجرات، 13 فروری (قومی ترجمان) گجرات کے جوناگڑھ میں مکڑی کی ایک نایاب نسل دریافت ہوئی ہے۔ یہ مکڑی ریاست کے گرنار وائلڈ لائف سینکچری میں پائی گئی۔ مکڑی کا نام 15ویں صدی کے مشہور سنت شاعر نرسنگھ مہتا کے نام پر نرسنگ مہتا رکھا گیا ہے۔

مکڑی کو بھکتا کیوی نرسنگھ مہتا یونیورسٹی کے ایک پی ایچ ڈی طالب علم نے دریافت کیا تھا۔ مکڑی کے بارے میں معلومات دیتے ہوئے یونیورسٹی کے پروفیسر ڈاکٹر جتن راول نے کہا کہ مکڑیوں کی عالمی فہرست میں ایک اور نام شامل ہو گیا ہے جہاں اس وقت مکڑیوں کی تقریباً 49 ہزار اقسام موجود ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

آپ کو بتاتے چلیں کہ سنت شاعر نرسنگھ مہتا اپنی مشہور نظم ‘ویشنو جان تو تینے کہیے’ کے لیے جانے جاتے ہیں۔ اس نظم کو بابائے قوم مہاتما گاندھی نے بھی گایا تھا اور اس کے ذریعے انہوں نے دنیا کو عدم تشدد کا بڑھتا ہوا سبق سکھایا تھا۔ نرسنگھ مہتا جوناگڑھ کا رہنے والا تھا۔

یونیورسٹی کے پروفیسر کا کہنا تھا کہ یہی وجہ تھی کہ مکڑی کا نام سنت شاعر کے نام پر رکھا گیا ہے۔

2017 میں شائع ہونے والے ایک تحقیقی مقالے ‘Spiders of Gujarat: A Preliminary Checklist’ کے مطابق 169 پرجاتیوں کے تحت مکڑیوں کی 415 اقسام پائی گئی ہیں، جن میں گجرات سے مکڑیوں کے کل 40 خاندانوں کا انکشاف ہوا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

عجیب و غریب : 19 سالہ لڑکے کو 2 فٹ 10 انچ قد والی خاتون سے ہو گیا پیار ، کہا دل سے پیار ہے قد سے نہیں!

ان میں سے کل 39 ایسی انواع ہیں جو گجرات میں مقامی ہیں۔ اس کا واضح مطلب ہے کہ یہ نسلیں صرف گجرات میں پائی جاتی ہیں۔ اس کے علاوہ بھارت میں 150 اور جنوبی ایشیا میں 26 اقسام پائی جاتی ہیں۔

مکڑی آرتھروپوڈا فیڈریشن کا ایک کیڑا ہے۔ اس کا جسم دو حصوں میں منقسم ہے جس میں ایک حصہ سر اور دوسرے حصے کو پیٹ کہتے ہیں۔

مکڑیوں کی تقریباً 49000 اقسام کی نشاندہی کی گئی ہے۔ ان کے پیٹ میں ایک تھیلی تھی جس میں چپچپا مادہ موجود ہوتا ہے ۔ مکڑیاں اس مواد سے جالے بناتی ہیں۔

ان خبروں کو بھی پڑھیں

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button