اہم خبریںدہلیکرناٹک

کرناٹک ہائی کورٹ نے کلاس میں حجاب پہننے پر پابندی کو برقرار رکھا، کہا کہ حجاب پہننا اسلام میں لازمی مذہبی روایت نہیں ہے۔

حجاب کو لیکر چھ لڑکیوں کی درخواست ہائی کورٹ نے مسترد کر دیا ہے

بنگلورو: حجاب معاملہ : حجاب کیس میں 129 صفحات کے فیصلے میں کرناٹک ہائی کورٹ کی فل بنچ نے اپنے فیصلے کی بنیاد کچھ کتابوں کے ذریعے بتائی ہے۔ فیصلے کے آغاز میں بنچ نے امریکی مصنفہ سارہ شلینگر کی کتاب ‘ہسٹری آف حجاب’ میں پردہ خواتین: حجاب، مذہب اور ثقافتی مشق-2013 یعنی ‘پردہ: حجاب، مذہب اور تہذیب (ثقافتی روایت)’ کا حوالہ دیا۔ بہت پیچیدہ ہے کیونکہ اس میں مذہب اور تہذیب کا اثر بھی وقتاً فوقتاً ہوتا ہے۔

اس میں کوئی شک نہیں کہ بہت سی عورتیں معاشرے کے اخلاقی دباؤ کی وجہ سے پردہ نشین رہتی ہیں، جب کہ بہت سی عورتیں پردہ میں اس لیے رہتی ہیں کہ وہ اس کو دیگر کئی وجوہات کی بنا پر اپنا انتخاب سمجھتی ہیں۔ بعض اوقات جیون ساتھی، خاندان اور رشتہ داروں کی سوچ کا بھی اثر ہوتا ہے۔ بعض اوقات وہ پردے میں رہنا اس لیے قبول کر لیتی ہے کیونکہ اس کی بنیاد پر اس کا معاشرہ اس عورت کے بارے میں اپنی رائے بناتا ہے اس لیے اس معاملے میں رائے قائم کرنا بہت مشکل ہے۔

اس کے بعد بنچ نے لکھا ہے کہ اس سلسلے میں ڈاکٹر بی آر امبیڈکر کے خیالات بھی اسی طرح کے ہیں۔ باباصاحب نے اپنی مشہور کتاب ‘پاکستان اینڈ دی پارٹیشن آف انڈیا’ (1945) کے باب 10 میں سماجی جمود کے عنوان سے پہلا حصہ لکھتے ہوئے لکھا ہے کہ ‘ایک مسلمان عورت صرف اپنے بیٹے، بھائی، باپ، چچا، تاؤ کو دیکھ سکتی ہے۔ اور شوہر یا اپنے رشتہ داروں کو جن پر بھروسہ کیا جا سکتا ہے، وہ نماز پڑھنے کے لیے مسجد تک نہیں جا سکتی، برقع پہنے بغیر گھر سے بھی نہیں نکل سکتی۔ اسی لیے ہندوستان کی سڑکوں پر برقع نشین مسلم خواتین کا آنا جانا عام بات ہے۔م

یہ بھی پڑھیں

گھریلو علاج / Home Remedies : جسم پر جگہ جگہ خارش شروع ہو گئی ہے تو ان 5 گھریلو ٹوٹکوں پر کریں عمل ، آپ کو خارش کے مسئلے سے مل جائے گی نجات

سلمانوں میں بھی ہندوؤں کی طرح اور ان سے کہیں زیادہ سماجی برائیاں پائی جاتی ہیں۔پردے کا لازمی نظام بھی ان میں سے ایک ہے۔ان کا ماننا ہے کہ ان کا جسم مکمل طور پر پردہ ہے۔ اس کی طرف سے احاطہ کرتا ہے اس لیے وہ جسم اور خوبصورتی کے بارے میں سوچنے کے بجائے خاندانی تنازعات اور رشتوں کے مسائل حل کرنے میں لگ جاتی ہے کیونکہ اس کا بیرونی دنیا سے رابطہ منقطع ہو جاتا ہے۔ وہ ایک احساس کمتری کے ساتھ مایوس اور بے بس ہو جاتے ہیں۔ ہندوستان میں مسلم خواتین میں پردے کے نظام سے پیدا ہونے والے مسئلے کے سنگین مضمرات اور نتائج کے بارے میں کوئی بھی جان سکتا ہے۔

ہائی کورٹ کی فل بنچ نے اپنے فیصلے میں لکھا ہے کہ ہمارے آئین کے بنانے والوں میں سرفہرست ڈاکٹر امبیڈکر نے پچاس سال پہلے ہی پردے کے نظام کی خامیوں اور خرابیوں کی نشاندہی کر دی تھی، جو حجاب پر بھی یکساں لاگو ہوتی ہیں۔ نقاب کسی بھی معاشرے اور مذہب کی آڑ میں پردہ کا یہ نظام برابری اور سب کے لیے یکساں مواقع کے بنیادی اصول کے بالکل خلاف ہے۔اسکولوں کے لباس کے علاوہ مذہبی علامات بشمول حجاب، زعفرانی پٹکے ، سر کا پوشاک یا انگواسترا پہننا قطعی طور پر مناسب نہیں ہے یہ نظم و ضبط کے بھی خلاف ہے۔

یہ بھی پڑھیں

گھر بیٹھے آدھار کارڈ میں اپنا موبائل نمبر یا نام، پتہ تبدیل کریں، جانیں یہ آسان طریقہ

आरबीआई ने पेटीएम पेमेंट्स बैंक को नए खाते खोलने से रोककर झटका दिया।

حجاب معاملے میں کرناٹک ہائی کورٹ نے سوال اٹھاتے ہوئے کہا کہ حجاب کے معاملے میں پس پردہ ’چھپے ہاتھ‘ ہو سکتے ہیں۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ جلد ہی معاملے کی تحقیقات مکمل ہو جائیں گی۔ ہائی کورٹ نے فیصلے میں کہا ہے کہ ڈریس کوڈ کے حوالے سے 2004 سے سب کچھ ٹھیک تھا۔ ہم اس بات سے بھی متاثر ہیں کہ مسلمان ‘آشتا مٹھ سمپردایہ’ کے تہواروں میں شرکت کرتے ہیں، (اُڈپی وہ جگہ ہے جہاں آٹھ مٹھے واقع ہیں)۔ ہم اس بات سے مایوس ہیں کہ اچانک، تعلیمی مدت کے وسط میں حجاب کا مسئلہ کیسے پیدا ہوا اور اسے ضرورت سے زیادہ پھیلایا گیا ۔

حجاب کا پیچیدہ مسئلہ جس طرح سامنے آیا اس کے پیچھے کچھ ‘چھپے ہوئے ہاتھ’ کام کر رہے ہیں۔ جس انداز میں سماجی بدامنی اور نفرت پھیلانے کی کوشش کی گئی، زیادہ بتانے کی ضرورت نہیں۔ ہم جاری کیس پر تبصرہ نہیں کر رہے ہیں تاکہ پولیس کی تفتیش متاثر نہ ہو۔ ہم نے پولس کے کاغذات دیکھے ہیں جو مہر بند لفافے میں دیے گئے ہیں۔ ہم فوری اور موثر تحقیقات کی امید کرتے ہیں تاکہ بلا تاخیر معاملے کی تفتیش کرکے مجرموں کو گرفتار کیا جاسکے۔

قومی ترجمان کا ٹیلیگرام گروپ جوائن کرنے کے لیے یہاں کلک کریں!

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button