Life Styleتازہ ترینتعلیم و روزگارکشن گنج

چائے اور انناس کی پیداوار میں بہار کے کشن گنج کا جلوہ ، ہر سال 80 ہزار لوگوں کو ملتا ہے روزگار

کشن گنج (قومی ترجمان) کشن گنج ضلع کی بنیاد 14 جنوری کو رکھی گئی تھی۔ کشن گنج ضلع پورنیہ سے تقسیم ہونے کے بعد 14 جنوری 1990 کو وجود میں آیا۔ ضلع کی تشکیل کے بعد سے کشن گنج نے معاشی اور تعلیمی لحاظ سے کافی ترقی کی ہے۔ اس ضلع نے تعلیم، صحت، انفراسٹرکچر، ٹرانسپورٹ، توانائی کے میدان میں بھی ترقی کی کئی جہتیں قائم کی ہیں۔ان سب میں سے دو چیزیں ایسی ہیں جو ضلع کو بہار میں سب سے منفرد کر دیتی ہیں۔

چائے کی کاشتکاری کرتے لوگ


کشن گنج نے چائے اور انناس کی پیداوار کے معاملے میں بہار میں ایک الگ پہچان بنائی ہے۔ اس کا سہرا ضلع کے کسانوں کو جاتا ہے۔ تمام تر مشکلات اور پریشانیوں کے باوجود کسانوں نے نہ صرف چائے اور انناس کی کاشت کو نقد آور فصل کی شکل میں تبدیل کیا ہے بلکہ باغات سے لوگوں کی بڑی تعداد کو روزگار بھی فراہم کر رہے ہیں۔ بنگال کے طرز پر کسان "ٹی سٹی” کا درجہ دینے اور اناج کے لیے پروسیسنگ پلانٹس کا مطالبہ طویل عرصے سے کر رہے ہیں۔ اگر ایسا کیا گیا تو کسان ان دونوں فصلوں کو مزید آگے لے جا سکیں گے۔

کسانوں نے اپنی محنت کے بل بوتے پر چائے کی پیداوار میں نیا ریکارڈ قائم کیا ہے۔ کشن گنج کی آب و ہوا چائے کی پیداوار کے لیے سازگار ہے۔ 120 روپے فی کلو سے شروع ہونے والی چائے 4000 روپے فی کلو فروخت ہوتی ہے۔ کشن گنج ضلع میں ہر سال 75 لاکھ کلو گرام چائے کی پیداوار ہوتی ہے۔ بنگال میں 100 سال سے زیادہ عرصے سے کاشت کر رہے ہیں ہر سال صرف 125 لاکھ کلو گرام چائے پیدا کر پاتے ہیں۔



یہ کسانوں کی محنت کا نتیجہ ہے کہ یہاں کی چائے بنگال اور آسام کی چائے کا مقابلہ کر رہی ہے۔ 25 سال پہلے کشن گنج کے ٹیکسٹائل تاجر راجکرن دفتری نے سب سے پہلے چائے کی کاشت شروع کی۔ چائے کی کامیابی کو دیکھ کر مقامی تاجروں اور کسانوں نے بھی ان سے کاشتکاری کے طریقے سیکھنے شروع کر دیے۔ آج کے وقت میں 9 پرائیویٹ اور ایک سرکاری ٹی پروسیسنگ پلانٹ ہیں۔ ضلع میں 10 ایکڑ اراضی پر چائے کی کاشت شروع کی گئی تھی اور آج 25 ہزار ایکڑ سے زائد رقبے پر اس کی کاشت کی جارہی ہے۔ یہاں کے شجرکاری اور کارخانے سے سال بھر میں 80 ہزار سے زائد لوگوں کو روزگار ملتا ہے۔



ضلع کے پوٹھیا اور ٹھاکر گنج بلاک میں 2000 ہیکٹر سے زیادہ اراضی میں انناس کی کاشت کی جاتی ہے۔ اسسٹنٹ ڈائریکٹر ہارٹیکلچر ڈاکٹر رجنی سنہا کے مطابق مالی سال 2021-22 میں 235 ہیکٹر میں انناس کی کاشت کا ہدف مقرر کیا گیا تھا جو مکمل کر لیا گیا ہے۔ نیشنل ہارٹیکلچر مشن اسکیم کے تحت کسانوں کو سبسڈی بھی دی جارہی ہے۔ ترقی پسند کسان دلالجیت سنگھ نے روزنامہ بھاسکر کو بتایا کہ اس سال حکومت نے انناس کی کاشت کو زراعت کا درجہ دیا ہے۔



ماخذ : روزنامہ بھاسکر

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button