بہار

پٹنہ کے لاٹھی باز اے ڈی ایم کے کے سنگھ کے خلاف سخت کارروائی، نتیش حکومت نے عہدے سے ہٹایا

پٹنہ : بدھ کو بڑی کارروائی کرتے ہوئے بہار کی نتیش کمار حکومت نے لاٹھی باز کے اے ڈی ایم کے کے سنگھ کو پٹنہ کے اے ڈی ایم لاء اینڈ آرڈر کے عہدے سے فوری طور پر ہٹا دیا۔ کے کے سنگھ پر 22 اگست کو ایک احتجاج کے دوران مبینہ طور پر ایک ٹیچر کو مارنے کا الزام ہے۔ کے کے سنگھ کو اب جنرل ایڈمنسٹریشن ڈیپارٹمنٹ میں حصہ ڈالنے کی ہدایت دی گئی ہے۔

اے ڈی ایم کے کے سنگھ نے ٹیچر امیدوار کو لاٹھی، ڈنڈوں سے مارا تھا

آپ کو بتا دیں کہ 22 اگست کو پٹنہ کے ڈاکبنگلہ چوراہے پر بھرتی میں تاخیر کے خلاف احتجاج کرنے والے سینکڑوں خواہشمند اساتذہ پر پولیس نے لاٹھی چارج کیا تھا۔ اس دوران بہار ٹیچر ایلیجیبلٹی ٹیسٹ (بی ٹی ای ٹی) اور سینٹرل ٹیچر اہلیت ٹیسٹ (سی ٹی ای ٹی) کے کئی امیدوار زخمی ہوئے اور انہیں احتجاج کے دوران حراست میں بھی لیا گیا۔ اس دوران ایک امیدوار انیس الرحمن کے اے ڈی ایم کے کے سنگھ کو لاٹھیوں سے شدید زدوکوب کیا گیا۔ اس وقت رحمان کے ہاتھ میں قومی پرچم بھی تھا لیکن کے کے سنگھ اسے مارتے رہے۔ اس واقعے کی ویڈیو بھی سوشل میڈیا پر کافی وائرل ہوئی۔

اے ڈی ایم کے کے سنگھ جانچ میں قصوروار پائے گئے۔

اس ویڈیو کے وائرل ہونے کے بعد نتیش حکومت کی شدید تنقید کی گئی۔ صورتحال کو دیکھتے ہوئے ریاستی حکومت نے بھی جلد بازی میں ملزم افسر کے خلاف تحقیقات کے احکامات جاری کر دیے تھے۔ جانچ کے دوران پٹنہ کے اے ڈی ایم لاء اینڈ آرڈر کے طور پر تعینات کے کے سنگھ کو ٹیچر امیدوار کو لاٹھیوں سے پیٹنے اور ترنگے کی توہین کرنے کا قصوروار پایا گیا۔ انکوائری رپورٹ کی بنیاد پر کے کے سنگھ کے خلاف سخت کارروائی کرتے ہوئے انہیں فوری اثر سے عہدے سے ہٹا دیا گیا۔

ٹیچر امیدوار گزشتہ تین سالوں سے کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔

آپ کو بتاتے چلیں کہ مظاہرین گزشتہ تین سال سے بے روزگاری کے خلاف مظاہرہ کر رہے ہیں۔ ان سے 2021 میں وعدہ کیا گیا تھا کہ اس سال جنوری تک نوٹیفکیشن جاری کر دیا جائے گا۔ ایسا نہ ہونے پر اہل امیدواروں نے مئی میں احتجاج کیا جس کے بعد انہیں یقین دہانی کرائی گئی کہ اگست تک یہ عمل مکمل کر لیا جائے گا۔ 22 اگست کو امیدوار سڑکوں پر نکل آئے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button