Uncategorized

منکی پاکس وائرس کا نام سنتے ہی گھبرائیں نہیں ، صرف اس کی علامات اور عام معلومات جان لیں، پھر آپ خوف زدہ نہیں ہوں گے

خاص باتیں

  • منکی پوکس جسم پر بڑے پھوڑے ظاہر ہونے کا سبب بنتا ہے۔
  • اس طرح منکی پاکس ایک متاثرہ شخص سے پھیلتا ہے۔
  • اس وائرس سے بچنے کے لیے احتیاطی تدابیر اختیار کی جاتی ہیں۔

منکی پوکس وائرس : ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) کے مطابق 19 ممالک منکی پوکس سے متاثر ہوئے ہیں اور 131 سے زائد افراد مونکی پوکس میں مبتلا ہیں۔ جسم پر بڑے پھوڑے اور چھالوں کے ساتھ اس منکی پوکس کی اور بھی بہت سی علامات ہیں جن سے آپ شاید لاعلم ہوں۔

کسی بھی وائرس کی طرح مونکی پوکس وائرس سے بچنے کے لیے کچھ ضروری احتیاطی تدابیر اختیار کرنا بہت ضروری ہے جس کے لیے درست معلومات ہونی چاہیے۔ یہ بھی جانیں کہ مونکی پوکس جسم کو کیسے متاثر کرتا ہے۔

منکی پوکس وائرس کیا ہے ؟

بلومبرگ انٹیلی جنس کے سینئر فارماسیوٹیکل تجزیہ کار سام فازیلی کے مطابق، مونکی پوکس چکن پاکس اور چیچک کی طرح آرتھوپاکس وائرس ہے۔ لیکن یہ اموات کے لحاظ سے چیچک سے کم مسئلہ ہے۔ Monkeypox جیسا کہ اس کے نام سے پتہ چلتا ہے کہ بندروں سے پھیلنے والا وائرس نہیں ہے۔

مونکی پوکس کیسے پھیلتا ہے؟

مونکی پوکس متاثرہ کے جسم سے خارج ہونے والے متاثرہ سیالوں کے رابطے میں آنے سے پھیلتا ہے۔ خاص طور پر اگر وہ شخص شکار کے بہت قریب آجائے تو اس کے پھیلنے کے امکانات سب سے زیادہ ہوتے ہیں۔

ایک شخص منکی پاکس میں مبتلا شخص کے رابطے میں آنے والی سطح کو چھونے کے بعد بھی منکی پوکس کا شکار ہو سکتا ہے۔

کچھ رپورٹس کے مطابق مونکی پوکس شکار کے ساتھ جنسی تعلق کرنے یا جسمانی طور پر قریب آنے سے بھی پھیل سکتا ہے۔

۔monkeypox کی علامات

منکی پوکس سر درد اور بخار سے شروع ہوتا ہے۔ عام طور پر اس کی ابتدائی علامات کسی عام وائرل انفیکشن جیسی ہوتی ہیں۔انسان کے جسم کی قوت مدافعت متاثر ہونے لگتی ہے۔ جسم کا درجہ حرارت بڑھنے لگتا ہے اور جسم میں کئی طرح کے کیمیکل خارج ہونے لگتے ہیں جس کی وجہ سے پٹھوں میں درد ہوتا ہے۔

1 سے 2 ہفتوں کے درمیان بہت سے لوگوں کے جسم میں دانے پڑنے لگتے ہیں جو بعد میں پھوڑے بن جاتے ہیں ۔ اگر آبلے ہوں تو بیکٹیریل انفیکشن کا خطرہ ہوتا ہے۔

Monkeypox Virus

۔Monkeypox سے ہوشیار رہیں

مونکی پوکس وائرس میں مبتلا ہونے کے چند دن بعد ویکسین لگوا کر اس سے بچا جا سکتا ہے۔

یہ کوویڈ سے کم متعدی وائرس ہے۔ اس لیے زیادہ گھبرانے کی ضرورت نہیں ہے۔یہ بہت تیزی سے نہیں پھیلتا۔

متاثرہ شخص سے ضروری فاصلہ برقرار رکھ کر انفیکشن سے بچا جا سکتا ہے۔

اعلان دستبرداری : یہ مواد بشمول مشورے صرف عام معلومات فراہم کرتا ہے۔ یہ کسی بھی طرح مستند طبی رائے کا متبادل نہیں ہے۔ مزید تفصیلات کے لیے ہمیشہ کسی ماہر یا اپنے ڈاکٹر سے رجوع کریں۔ قومی ترجمان اس معلومات کی ذمہ داری قبول نہیں کرتا۔

قومی ترجمان
قومی ترجمان
Qaumi Tarjuman
قومی ترجمان

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button