اہم خبریںاہم خبریں، تازہ سرخیاںبین الاقوامی خبریںتازہ ترینسائنس و ٹیکنالوجی و کلائمیٹقومی خبریں

مصنوعی سورج کے ذریعے 2026 تک بڑا ریکارڈ بنانے کی تیاری کر رہا ہے جنوبی کوریا

وزارت سائنس اور آئی سی ٹی نے 30 دسمبر کو اس کا اعلان کیا۔

300 سیکنڈ کے لیے 100 ملین ڈگری درجہ حرارت برقرار رکھنے کی تیاری

یہ درجہ حرارت مصنوعی سورج سے برقرار رکھا جائے گا۔


جنوبی کوریا کی حکومت اپنے پہلے چمصنوعی سورج ‘KSTAR’ کے لیے ایک ٹیکنالوجی تیار کرنے کا منصوبہ بنا رہی ہے۔اے این آئی کے مطابق 300 سیکنڈ تک 100 ملین ڈگری درجہ حرارت برقرار رکھنے کی تیاریاں کی جا رہی ہیں۔ نیوکلیئر فیوژن ٹیکنالوجی کی کمرشلائزیشن کے لیے 300 سیکنڈ کم از کم وقت درکار ہے۔ سائنس اور آئی سی ٹی کی وزارت نے 30 دسمبر کو اعلان کیا کہ اس نے کوریا انسٹی ٹیوٹ آف فیوژن انرجی میں 16ویں قومی فیوژن کمیٹی کا اہتمام کیا۔ اس دوران ‘جوہری فیوژن توانائی کی ترقی کے لیے چوتھے بنیادی منصوبے (2022-2026)’ کو حتمی شکل دی گئی۔ وزارت سائنس ہر 5 سال بعد نیوکلیئر فیوژن انرجی کی ترقی کے لیے اپنی پالیسیوں کے لیے اہداف طے کرتی ہیں ۔

منصوبے کے مطابق وزارت KSTAR تجربات کے شعبے میں آپریٹنگ ٹیکنالوجی کو بہتر بنانا جاری رکھے گی۔ ماضی میں اس کے اچھے نتائج سامنے آئے ہیں۔ مثال کے طور پر، اس سال 100 ملین ڈگری الٹرا ہائی درجہ حرارت 30 سیکنڈ تک برقرار رکھا گیا۔ اب 2026 تک ایسی ٹیکنالوجی تیار کی جانی ہے جو اس درجہ حرارت کو 300 سیکنڈ تک برقرار رکھ سکے۔

نیوکلیئر فیوژن مصنوعی سورج کی روشنی اور حرارت پیدا کرنے کا بنیادی اصول ہے۔ حکومت کا مقصد KSTAR کے ساتھ زمین پر اس اصول کو مصنوعی طور پر لاگو کرکے بجلی پیدا کرنا ہے۔ 2018 میں پہلی بار کورین ریسرچ ٹیم نے KSTAR کو 1.5 سیکنڈ تک 100 ملین ڈگری پر برقرار رکھا۔ پچھلے سال اسے 20 سیکنڈ اور اس سال 30 سیکنڈ کے لیے 100 ملین ڈگری پر برقرار رکھا گیا تھا۔


حکومت نے مستقبل میں نیوکلیئر فیوژن کے ذریعے بجلی پیدا کرنے کے بنیادی تصورات بھی پیش کیے ہیں۔ اس کے ساتھ سال 2030 تک مطلوبہ نیٹ ورک سمیت ‘آر اینڈ ڈی روڈ میپ تیار کرنے کا منصوبہ بھی پیش کیا گیا۔

اہم بات یہ ہے کہ چین مصنوعی سورج بنانے پر بھی کام کر رہا ہے۔ چین کے تجرباتی ایڈوانسڈ سپر کنڈکٹنگ ٹوکامک (EAST) نے اس سال ایک نیا ریکارڈ قائم کیا۔ تجربے کے تحت پلازما کا درجہ حرارت 216 ملین فارن ہائیٹ یعنی 120 ملین سیلسیس 101 سیکنڈ تک برقرار رکھا گیا۔ مزید یہ کہ "مصنوعی سورج” پر کام کرنے والے سائنسدان 20 سیکنڈ تک 288 ملین فارن ہائیٹ (160 ملین سیلسیس) درجہ حرارت برقرار رکھنے میں کامیاب رہے۔



توکامک (Tokamak) ڈیوائس، Hefei میں چینی اکیڈمی آف سائنسز (ASIPP) کے پلازما فزکس کے انسٹی ٹیوٹ میں واقع ہے، جوہری فیوژن کے عمل کو دوبارہ پیدا کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔ یہی عمل سورج اور دیگر ستاروں میں بھی ہوتا ہے جس سے حرارت اور روشنی پیدا ہوتی ہے۔ یہ تجربہ کنٹرولڈ نیوکلیئر فیوژن کے ذریعے لامحدود صاف توانائی فراہم کرنے کے لیے کیا گیا تھا۔ 100 سیکنڈ تک 180 ملین فارن ہائیٹ (100 ملین سیلسیس) برقرار رکھنے کا سابقہ ریکارڈ اب ٹوٹ گیا ہے۔ جوہری فیوژن کے ساتھ کام کرنے کی طرف یہ ایک بڑا قدم ہے۔

کورونا اور چین دونوں کا مقصد مصنوعی سورج کے ذریعے اپنی مستقبل کی توانائی کی ضروریات پوری کرنا ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button