اہم خبریںاہم خبریں، تازہ سرخیاںتازہ تریندہلیقومی خبریںمظفر پور

مسلمانوں کی نسل کشی کے اعلان سے ہندوتوا کا پردہ فاش

اسلم رحمانی ریاستی ترجمان، انصا منچ بہار 

آر ایس ایس بی جے پی اور اس کے اعلانیہ غیر اعلانیہ تنظیمیں  (مسلمانوں اور عیسائیوں) کے خلاف وحشیانہ اور جارحانہ طور پر تشدد کررہی ہیں۔یہاں تک بابائے قوم مہاتما گاندھی کے خلاف بھی نازیبا کلمات کہے جارہے ہیں۔مزید یہ کہ مسلمانوں کے اجتماعی قتل عام کا اعلان کیا جارہا ہے۔ اور انسانیت اور ہمدردی کی علامت عیسٰی مسیح کے مجسموں کو گرایا جا رہا ہے اور گرجا گھروں پر حملے ہو رہے ہیں۔ اس کے لیے سیدھے طورپر حکمراں طبقہ ذمہ دار ہیں کیوں کہ انہیں کی سرپرستی میں ریاست اتراکھنڈ کے واقع ہری دوار میں ہندوتوا اجتماع میں جو کچھ ہوا اور رائے پور، چھتیس گڑھ میں ایسے ہی ایک شور مچانے والے اجتماع میں مختلف شدت کے ساتھ دہرایا گیا وہ آزاد ہندوستان میں بے مثال اور غیر معمولی ہے۔ ہریدوار میں مسلمانوں کی نسل کشی کا اعلان کرتے ہوئے کہا گیا کہ "ہمیں ان کی آبادی کو ختم کرنا ہوگا”۔

اگر ہم سو فوجی بن جائیں اور ان میں سے 20 لاکھ مارے جائیں۔ تلوار صرف اسٹیج پر دکھانے کے لیے استعمال نہیں ہوگی۔ اور "میانمار کی طرح یہاں کی پولیس، یہاں کے لیڈروں، یہاں کی فوج، یہاں کے ہر ہندو کو ہتھیار اٹھا کر،یہ صفائی ( مسلمانوں کی نسل کشی)کی مہم چلانی پڑے گی، اس کے علاوہ کوئی چارہ نہیں۔ جیسی غیر دستوری باتیں کہی گئی۔ اسی طرح رائے پور میں گاندھی کے لیے گالی کا استعمال نیز آزاد بھارت کے پہلے دہشت گرد گاندھی جی کے قاتل گوڈسے کو مسیحا قرار دیا گیا۔ دریں اثنا، جنوبی دہلی میں بنارسی داس چاندی والا آڈیٹوریم میں ایک میٹنگ میں، سدرشن ٹی وی کے چیف ایڈیٹر سریش چاوانکے نے ہندوستان کو ہندو راشٹر بنانے کا حلف لیا۔ یہ پرتشدد تقاریر صرف چند پاگلوں یا افراد کے پاگل پن کا نتیجہ نہیں ہے۔یہ ایک سوچے سمجھے ایجنڈے کی پاسداری ہے۔جس کا ایجنڈا صرف یوپی الیکشن جیتنے کے لیے نفرت پھیلانے تک محدود نہیں ہے بلکہ وہ ہندوستان کو جلد از جلد ہندوتوا پر مبنی ہندو راشٹر بنانا چاہتا ہے۔ صہیونی اسرائیل کے انداز میں مدھیہ پردیش کے نیماور میں مشینوں سے اقلیتوں کے گھر توڑ کر اسی ایجنڈے کو عملی جامہ پہنایا گیا۔ یہ صرف چند سخت گیر ہندوتوا سادھوؤں تک محدود رجحان کی ترقی نہیں ہے۔بلکہ وزیر اعظم خود اس زہریلی داستان کو اپنے ٹویٹ سے آگے بڑھایا ہے۔ جس میں انہوں نے کہا تھا کہ ’’کچھ لوگوں نے ملک میں گائے اور گوبر کی بات کرنا جرم بنا لیا ہے اور ایسے لوگ بھول جاتے ہیں کہ ہمارے لیے گائے پوجا ہے۔‘‘ اس ٹویٹ میں "کچھ لوگوں” اور "ایسے لوگوں” میں فرق اس ایجنڈے کو آگے بڑھانا تھا۔ ملک کے وزیر دفاع کے پاس کھڑے اتر پردیش کے وزیر اعلیٰ جو کہنے کو یوگی ہیں، مشین گنوں کے ساتھ تصویریں کھنچواتے ہوئے اس بات کی فکر کر رہے تھے کہ ہنگامہ خیز ماحول پیدا کرنے میں کوئی کسر نہ چھوڑی جائے۔

کرسمس کے موقع پر سانتا کلاز کے پتلے جلائے گئے۔چرچوں پر حملے ہو رہے تھے اور ہریانہ میں یسوع مسیح کے 125 سال پرانے مجسمے کو توڑا جا رہا تھا۔ یہ تمام واقعات کا تعلق آپس میں جڑا ہوا ہے اور ایک منظم اسکرپٹ کا حصہ ہے۔ منظم طریقے سے عسکریت پسندی کے بار بار دکھائے جانے والے پرتشدد کالوں کے بار بار دہرائے جانے سے فرقہ پرستوں کی جارحیت میں شدت آتی ہے اور اسے ایسے خطرناک موڑ پر لے جایا جاتا ہے جہاں آئین اور جمہوریت کا زوال یقینی ہے۔ یہ حیرانی اور مایوسی دونوں کا ملا جلا اظہار ہے۔واضح رہے کہ کسی ملک کو کمزور کرنے کا سب سے آسان طریقہ یہ ہے کہ اس کی ذہانت اور اس کے عوام سے تجزیہ کرنے کی صلاحیت چھین لی جائے۔ ایک باشعور معاشرے میں بھی ایسی بے ہودہ باتیں آسان نہیں ہوتیں۔ اس کے لیے اس کے ساتھ ساتھ کچھ اور کرنا بھی ضروری ہو جاتا ہے۔ اس مہم کے ساتھ ایک اور متوازی مہم بھی اس طرح چل رہی ہے۔ احمقانہ مہم۔ انڈین ویٹرنری ایسوسی ایشن کے خواتین ونگ کے کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے مدھیہ پردیش کے وزیر اعلی شیوراج نے کہا کہ اگر صحیح نظام کے ساتھ کام کیا جائے تو گائے کا گوبر اور گائے کا پیشاب ملک کی معیشت کو مضبوط بنانے کی سمت میں ایک اہم کڑی ثابت ہو سکتا ہے، یہ دونوں چیزیں چیزیں ملک کی معیشت کو مضبوط بنانے میں مددگار ثابت ہوں گی۔ ملک کو مضبوط بنانے میں کردار ادا کر سکتے ہیں۔ انہوں نے گائے کے دودھ، گوبر اور گائے کے پیشاب کے استعمال پر زور دیتے ہوئے کہا کہ صحت مند معاشرے کے لیے ان کا استعمال ضروری ہے۔

یہ وہی شیوراج سنگھ ہے جس کی پارٹی گوا اور شمال مشرقی انتخابات میں سستی قیمت پر گائے کا گوشت فراہم کرنے کا وعدہ کرتی ہے جس کے پرستار ونائک دامودر ساورکر گائے کو بے دماغ مخلوق کہتے ہیں اور انسانیت کو نیچا دکھانے کے لیے اس کی پوجا کرتے ہیں۔ لیکن جب مقصد صرف دھوکہ دینا اور بلف کرنا ہو تو پھر منطق، حقائق اور شواہد کی پروا کہاں۔

ہندو راشٹر کے لیے پکارنے والے اس گینگ کا کیا مطلب ہے کہ ہندو اور ہندوستانی کہلانے والے – ہندوستانی نژاد افراد – اب تک کی گنتی کے مطابق دنیا کے 118 ممالک میں ہیں۔ 16 سے زیادہ ممالک میں وہ حکمرانی کے عہدوں پر ہیں۔ کس نے کہا کہ ہندوستان ہندو ملک ہے؟ ہندوستان اپنی پوری 5-7 ہزار سال کی تہذیب میں ایک دن کے لیے بھی ہندو قوم نہیں رہا۔ کہ لنکا سے پانی پت، ہلدی گھاٹی، پلاسی سے ہوتے ہوئے کروکشیتر تک، ہندو راشٹر بمقابلہ دیگر میں کوئی افسانوی یا تاریخی جنگ نہیں ہوئی کہ ہندوستان کی تاریخ کی خاصیت یہ تھی کہ اس کے اختیارات عموماً مذہبی نہیں تھے۔ جدوجہد آزادی، جس میں واٹس ایپ کے خود ساختہ ہندو قوم پرست پانچ منٹ بھی نہیں چل پائے تھے، اس نے آس پاس میں ایک اسلامی قوم کی تشکیل کے باوجود خود کو ہندو راشٹر کے تنگ نظری سے دور رکھا تھا۔ کہ اس کے فلسفوں کا تنوع – شاد درشن – حیرت انگیز ہے۔ کہ اس کی 90 فیصد آبادی، رویے، زبان، گرامر، خوراک، سوچ کو وقتاً فوقتاً آنے والے زائرین، مسافروں، پناہ گزینوں نے تیار کیا ہے۔

اس بات کو دہرانے کی ضرورت ہے کہ اس طرح کی مبینہ ہندو دھرم سبھا کا ہندوازم یا ہندوازم سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ یہ جلعی ہندوتوا ہے، جس کا ہندو پوسٹ پادشاہی کا واحد آئیڈیل پیشوا شاہی اور ہٹلر شاہی ہے۔ ہٹلر کی طرز پر ایک مخصوص کمیونٹی کے خلاف نفرت اور تشدد کو ہوا دینا ان کے فوری متحرک ہونے کا صرف ایک ذریعہ ہے۔ ان کا اصل مقصد منسمرتی پر مبنی حکمرانی کو برقرار رکھنا ہے۔ایک ایسا راج جو 90 فیصد ہندوؤں کے لیے بالعموم اور تمام خواتین، شودروں اور پسماندہ ذاتوں کے لیے بالخصوص زندہ جہنم سے کم نہیں ہوگا۔ یہ اصل مقصد اچھوت کی ذہنی بیماری کو قبول کرتے ہوئے، اس کی مثال سکھدھانگ انٹر کالج چمپاوت، اتراکھنڈ میں مڈ ڈے میل کا کھانہ بنانے والی سنیتا دیوی ہے جس کو دلت ہونے کی وجہ سے نکالا جا رہا تھا۔ یہ اس گینگ کا آخری مقصد ہے – یہی ان کا اصل ہندوتوا پر مبنی ہندو راشٹر ہے۔

اگر ہندوستان کو بچانا ہے تو اس حقیقت کو سمجھنا اور سمجھانا ہوگا۔ ہندوستانیوں کے اتحاد کو ان کی زندگیوں کو متاثر کرنے والے فوری مشترکہ مسائل کے ارد گرد میدانی جدوجہد کے اتحاد میں جمع کرنا ہوگا۔ ماضی کی غلطیوں کو بحال کرنے کی سازشوں کے خلاف بغیر کسی ہچکچاہٹ یا تاخیر کے ہمیں متحد ہوکر ان فرقہ پرستوں کے خلاف لڑنا ہوگا۔ 

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button