دہلی

قطب مینار : مالکانہ حق سے متعلق معاملے میں فیصلہ محفوظ

نئی دہلی : دہلی کی ایک عدالت نے قطب مینار کمپلیکس کے مالکانہ حق کے سلسلے میں دائر عرضی پر فیصلہ محفوظ کرلیا ہے ۔ کنور مہندر دھوج پرسادسنگھ نامی شخص کی طرف سے دائر درخواست میں آگرہ ، میرٹھ علی گڑھ ، بلند شہر اور گڑگاؤں کے گنگا اور یمنا ندیوں کے درمیان کے علاقوں پر حقوق مانگے گئے ہیں ۔

عدالت نے مداخلت کار کی طرف سے پیش ہونے والے ایڈوکیٹ منوہر لال شرما ، آرکیالوجیکل سروے آف کی طرف سے پیش ہونے والے ایڈوکیٹ سجاش گپتا اور اپیل کنندہ کی طرف سے پیش ہونے والے وکیل کی سماعت کے بعد فیصلہ محفوظ کر لیا ۔ اے ایس آئی نے دلیل دی ہے کہ مداخلت کی درخواست کو اس بنیاد پر خارج کر دیا جائے گا کہ سنگھ نے اپیل میں خاص طور پر کسی حق کا دعوی نہیں کیا ہے اور اسے فریق بننے کا کوئی حق نہیں ہے ۔

اے ایس آئی نے دلیل دی کہ سنگھ نے کئی ریاستوں میں پھیلے ہوئے وسیع علاقوں پر حقوق کا دعوی کیا تھا تاہم وہ گزشتہ 150 سالوں سے کسی بھی عدالت کے سامنے کوئی مسئلہ اٹھائے بغیر بیکار بیٹھے تھے۔اے ایس آئی نے دعوی کیا کہ گزشتہ سال دہلی ہائی کورٹ نے سلطانہ بیگم نامی خاتون کی طرف سے لال قلعہ پر قبضے کے لیے دائر کی گئی اس طرح کی درخواست کو خارج کر دیا تھا ۔

درخواست گزار نے خود کو آخری مغل بادشاہ بہادر شاہ ظفر دوم کے پوتے کی بیوہ بتایا تھا ۔ ان کی درخواست عدالت سے رجوع کرنے میں غیر معمولی تاخیر کی بنیاد پر خارج کر دی گئی ۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button