اہم خبریںبین ریاستی خبریںدہلیعالمی خبریں

فیس بک کی کارروائی، نومبر میں ہندوستان میں 1.62 کروڑ مواد پر کارروائی

یہ کارروائی 13 وائلیشن کے زمرے کے تحت کی گئی۔

50 لاکھ سے زیادہ صارفین والے پلیٹ فارم ہر ماہ رپورٹ دیتے ہیں۔

جن مواد پر کاروائی ہوئی ہے اس میں زیادہ تر پروسیس شدہ سپیم مواد تھا۔

مشہور سوشل میڈیا کمپنی میٹا مواد سے متعلق قوانین کی خلاف ورزی پر مسلسل کارروائی کر رہی ہے۔کمپنی نے کہا ہے کہ ہندوستان میں اس نے نومبر میں فیس بک پر 16.2 ملین سے زیادہ مواد کے ٹکڑوں پر کارروائی کی۔ یہ کارروائی 13 وائلیشن کے زمرے کے تحت کی گئی۔ اسی عرصے کے دوران کمپنی کے فوٹو شیئرنگ پلیٹ فارم انسٹاگرام نے 12 کیٹیگریز میں 32 لاکھ سے زیادہ آرٹیکلز کے خلاف کارروائی کی۔

اس سال کے شروع میں نافذ ہونے والے آئی ٹی قوانین کے تحت 50 لاکھ سے زیادہ صارفین والے بڑے ڈیجیٹل پلیٹ فارمز کو ہر ماہ تعمیل کی رپورٹ شائع کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ پلیٹ فارم سے موصول ہونے والی شکایت پر کی گئی کارروائی کے بارے میں معلومات اس میں دی گئی ہیں۔ اس کے علاوہ اس رپورٹ میں ان مواد کی تفصیلات بھی شامل ہیں جنہیں خودکار ٹولز کا استعمال کرتے ہوئے ہٹا یا غیر فعال کر دیا گیا ہے۔

اکتوبر میں فیس بک نے 13 کیٹیگریز میں 18 ملین سے زیادہ مواد پر ‘ایکشن’ لیا۔ اسی عرصے کے دوران، انسٹاگرام نے 12 کیٹیگریز میں 30 لاکھ سے زائد مواد کے خلاف کارروائی کی۔

تازہ ترین رپورٹ میں میٹا نے اطلاع دی ہے کہ 1 نومبر سے 30 نومبر کے درمیان، فیس بک کو اپنے ہندوستانی شکایات کے طریقہ کار کے ذریعے 519 صارف کی رپورٹیں موصول ہوئیں۔ ان میں سے 461 کیسز صارفین کو ٹولز دے کر حل کیے گئے۔

رپورٹ کے مطابق نومبر میں فیس بک کی جانب سے پروسیس کیے گئے 162 ملین سے زائد مواد میں سے 10 ملین مواد اسپام سے متعلق تھا۔ 20 لاکھ اشیاء تشدد کی تھیں۔

1.5 ملین اشیاء بالغوں کی عریانیت اور جنسی سرگرمیوں کی تھیں۔

اس کے علاوہ ایک لاکھ سے زائد سر کی تقاریر پر بھی کارروائی کی گئی۔ کئی دیگر زمروں میں بھی کارروائی کی گئی۔

ان میں غنڈہ گردی اور ہراساں کرنے کے 102,700 مضامین ، خودکشی اور خود کو چوٹ پہنچانے کے 370,500 مضامین شامل ہیں۔

بچوں سے متعلق دھمکیوں پر بھی کارروائی کی گئی۔

ساتھ ہی ان 12 زمروں میں سے جن میں انسٹاگرام پر 32 لاکھ سے زیادہ مضامین پر کارروائی کی گئی

سب سے زیادہ کیسز خودکشی اور خود کو زخمی کرنے سے متعلق تھے۔815,800 ایسے مواد پر کارروائی کی گئی۔ پرتشدد اور گرافک مواد پر مشتمل 333,400 کیسز کو ہٹا دیا گیا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button