اہم خبریںاہم خبریں، تازہ سرخیاںبین الاقوامی خبریںتازہ تریندہلیقومی خبریںمہاراشٹرا ،ممبئی

سچی محبت کی مثال ہیں ہندوستان کی یہ تاریخی عمارتیں

یادگار باقیات ہمیشہ تاریخ کی اہمیت کو ظاہر کرتی ہیں، لیکن کیا آپ جانتے ہیں کہ ہندوستان میں کئی ایسی تاریخی عمارتیں ہیں، جو تاریخ کے صفحات کو یاد دلانے کے ساتھ ساتھ محبت کی علامت بھی ہیں۔ آج ہم آپ کو ایسی ہی کچھ عمارتوں کے بارے میں بتانے جارہے ہیں، جن کا ذکر کئی مشہور کتابوں میں بھی آیا ہے، جنہیں بہت دلچسپی سے پڑھا اور جانا جاتا ہے۔ قدیم زمانے میں عمارتیں کچھ علامتوں کے طور پر نہ صرف ان کی محبت کی بلکہ ان کی محبت کو ہمیشہ زندہ رکھنے کے لیے بنائی جاتی تھیں۔



تاریخ میں تعمیر کیے گئے کچھ قلعے اور محلات آج بھی موجود ہیں جو سچی محبت کی مثال کے طور پر محفوظ ہیں۔ ان میں سے کچھ عمارتیں محبت کی کہانیوں کی گواہ ہیں تو کچھ میں محبت کی قربانیوں کی داستان ہے۔یہ عمارتیں کئی صدیاں پہلے تعمیر کی گئی تھیں جن کے بارے میں آپ نے بھی کم از کم ایک بار ضرور سنا ہوگا۔ یہ عمارتیں محبت کرنے والوں کے ساتھ ساتھ سیاحوں کے لیے بھی توجہ کا مرکز بنی ہوئی ہیں۔



تاج محل (آگرہ، اتر پردیش)


بچپن سے لے کر اب تک آپ نے تاج محل کی خوبصورتی اور اس کی تعمیر کی وجہ کے بارے میں سنا ہوگا۔ مغل شہنشاہ شاہ جہاں نے یہ یادگار اپنی بیوی ممتاز کے لیے بنوائی تھی۔ 1631 اور 1648 کے درمیان تعمیر ہونے والی یہ عمارت محبت کی ایک خوبصورت کہانی بیان کرتی ہے۔ یہ نہ صرف ملک میں بلکہ بیرون ملک بھی مشہور ہے، اسے دیکھنے کے لیے دنیا بھر سے لوگ یہاں آتے ہیں۔ ہم آپ کو بتاتے چلیں کہ تاج محل جو محبت کی مثال بن چکا ہے دنیا کے سات عجوبوں میں سے ایک ہے۔



مستانی محل (شنیوارواڈا قلعہ، پونے)



یہ محل جو پہلے باجی راؤ اور ان کی دوسری خوبصورت بیوی مستانی کا گھر تھا مہاراشٹر کے شہر پونے میں ہے۔ کہا جاتا ہے کہ جب پیشوا باجی راؤ کے خاندان نے ملکہ مستانی کو قبول کرنے سے انکار کر دیا تو باجی راؤ اسے سنیار واڑہ لے گئے اور مستانی محل لے آئے۔یہ بھی کہا جاتا ہے کہ باجی راؤ کی بیوی مستانی جتنی خوبصورت تھی یہ محل بھی اتنا ہی خوبصورت تھا۔باجی راؤ نے یہ محل 1730 میں بنایا تھا۔ آج یہ محل موجود نہیں ہے لیکن اس کی باقیات اب بھی موجود ہیں۔




چتور گڑھ قلعہ (ادے پور، راجستھان)



چتور گڑھ قلعہ، ہندوستان کے سب سے بڑے قلعوں میں سے ایک ہے جو ساتویں صدی میں بنایا گیا تھا۔ چٹور گڑھ قلعہ نہ صرف ہندوستان کے سب سے بڑے قلعوں میں سے ایک ہے بلکہ یہ یونیسکو کے ثقافتی ورثے میں بھی درج ہے۔ چتور گڑھ قلعہ رانی پدمنی اور راجہ رتن راول سنگھ کی تاریخی محبت کی کہانی کی علامت ہے۔ اس محل کی خاص توجہ ملکہ پدماوتی کا تین منزلہ محل ہے جو کمل کنڈ کے کنارے بنایا گیا ہے۔ یہ محل بہت عظیم الشان ہے، دنیا بھر سے لوگ اس کی دیواروں پر کیے گئے نقش و نگار کو دیکھنے کے لیے یہاں آتے ہیں۔



روپ متی منڈپ (منڈو، مدھیہ پردیش)



منڈو کے آخری آزاد حکمران سلطان باز بہادر نے اپنی بیوی رانی روپ متی کے لیے روپ متی منڈپ بنوایا تھا۔ یہ قلعہ مدھیہ پردیش کے منڈو شہر میں واقع ہے۔ دلکش نظارے اور فن تعمیر کی وجہ سے مشہور روپ متی منڈپ پوری دنیا کے شائقین کے ساتھ ساتھ سیاحوں کی توجہ کا مرکز بنا ہوا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ سلطان باز بہادر کو مالوہ کی رانی روپ متی کی سریلی آواز سے پیار ہو گیا۔ حکمران نے روپمتی سے شادی کی تجویز پیش کی جس پر ملکہ روپمتی نے شرط رکھی۔ جس کے مطابق بادشاہ ایک محل بنائے گا جہاں سے وہ اپنی پیاری نرمدا ندی کو دیکھ سکے گا پھر وہ شادی کرے گا۔ اس طرح روپ متی منڈپ وجود میں آیا اور یہ ان دونوں کی لازوال محبت کی کہانی کا گواہ ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button