بین الاقوامی خبریںتازہ ترینطب صحت

سائنس کا معجزہ – مشین کے سہارے چل رہی تھی انسان کے دل کی دھڑکن، پھر ڈاکٹر نے لگایا خنزیر کا دل

۔مریکہ میں ڈاکٹروں نے خنزیر کا دل انسانی جسم میں ٹرانسپلانٹ کر قائم کیا ریکارڈ

تاہم اس ٹرانسپلانٹ کے بعد بھی فی الوقت مریض کی بیماری کا علاج یقینی نہیں ہے

، ‘میرے پاس صرف دو ہی راستے تھے، یا تو میں مر جاؤں یا پھر یہ ٹرانسپلانٹ کرواؤں ۔ میں جینا چاہتا ہوں، میں جانتا ہوں کہ یہ اندھیرے میں تیر چلانے کے مترادف ہے، لیکن یہ میرا آخری انتخاب ہے : مڈیوڈ بینیٹ (مریض)

واشنگٹن۔میڈیکل سائنس نے ریکارڈ قائم کر دیا ہے۔امریکہ میں ڈاکٹروں نے خنزیر کا دل انسانی جسم میں ٹرانسپلانٹ کر دیا ہے۔سرجنوں نے جینیاتی طور پر تبدیل شدہ سور کے دل کو 57 سالہ شخص میں کامیابی سے ٹرانسپلانٹ کیا۔ یونیورسٹی آف میری لینڈ میڈیکل اسکول نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ یہ تاریخی ٹرانسپلانٹ جمعہ کو کیا گیا۔ تاہم اس ٹرانسپلانٹ کے بعد بھی فی الوقت مریض کی بیماری کا علاج یقینی نہیں ہو سکا ہے۔لیکن اس سرجری کو جانوروں سے انسانوں میں ٹرانسپلانٹ کے حوالے سے کسی سنگ میل سے کم نہیں کہا جا سکتا۔

ہندوستان ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق ڈیوڈ بینیٹ نامی مریض میں کئی سنگین بیماریوں اور خراب صحت کے باعث انسانی دل کی پیوند کاری نہ ہو سکی۔ تو خنزیر کا دل لگا دیا گیا۔ڈاکٹر اس بات پر نظر رکھے ہوئے ہیں کہ خنزیر کا دل ان کے جسم میں کیسے کام کر رہا ہے۔

میری لینڈ کے رہائشی ڈیوڈ بینیٹ گزشتہ کئی ماہ سے دل کے پھیپھڑوں کی بائی پاس مشین کی مدد سے بستر پر پڑے ہیں۔وہ کہتے ہیں، ‘میرے پاس صرف دو ہی راستے تھے، یا تو میں مر جاؤں یا پھر یہ ٹرانسپلانٹ کرواؤں ۔ میں جینا چاہتا ہوں، میں جانتا ہوں کہ یہ اندھیرے میں تیر چلانے کے مترادف ہے، لیکن یہ میرا آخری انتخاب ہے۔

ہم آپ کو بتاتے ہیں کہ نئے سال سے ایک دن پہلے امریکہ کی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن نے روایتی ٹرانسپلانٹ نہ ہونے کی صورت میں آخری کوشش کے طور پر اس ہنگامی ٹرانسپلانٹ کی منظوری دی تھی۔ ڈاکٹر بارٹلی گریفتھ جنہوں نے سرجری کے ذریعے خنزیر کا دل ٹرانسپلانٹ کیا کہتے ہیں، ‘یہ ایک کامیاب سرجری تھی۔اس کے ساتھ ہی ہم اعضاء کی کمی کا مسئلہ حل کرنے کی طرف ایک قدم آگے بڑھ گئے ہیں۔

درحقیقت ایک طویل عرصے سے یہ خیال کیا جاتا تھا کہ خنزیر کا دل انسانی دل کی پیوند کاری کے لیے موزوں ہے۔لیکن خنزیر کے خلیے جن میں ایک شوگر سیل ہوتا تھا جسے الفا گال کہتے ہیں۔ اسے انسانی جسم کے مسترد کرنے کا خطرہ تھا۔ایسی صورت حال میں اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے خنزیر کو جینیاتی طور پر تبدیل کیا گیا تاکہ وہ یہ خاص خلیہ پیدا نہ کرے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button