اہم خبریںتعلیم و روزگارمدھیہ پردیش

روایتی کھیتی چھوڑ کر شروع کی اسٹرابیری کی کاشت ، پہلے سال میں ہی ہوا 9 لاکھ کا منافع، جانیے پورا طریقہ

  • اس کے لیے درجہ حرارت 30 ڈگری سے زیادہ نہیں ہونا چاہیے۔

بھوپال: کے رہنے والے سودان سنگھ کشواہا اپنی روایتی کھیتی کو چھوڑ کر دو سال سے اسٹرابیری کاشت کر رہے ہیں۔ انہوں نے 3 ایکڑ میں 70 ہزار سے زائد اسٹرابیری کے پودے لگائے ہیں۔ پچھلے سال 9 لاکھ کا منافع ہوا تھا۔ اس سال دوگنا منافع متوقع ہے۔ 40 سالہ نوجوان کا تعلق سودانی کسان خاندان سے ہے۔ دسویں کے بعد اس نے پڑھائی چھوڑ دی اور کھیتی باڑی شروع کر دی۔ وہ روایتی کھیتی باڑی کرتے تھے لیکن اچھی آمدنی حاصل نہیں ہوتی تھی ۔

بعض اوقات موسم کی وجہ سے فصل نہیں اگائی جا سکتی تھی۔ ایسے میں خاندان کے اخراجات پورے کرنا بھی بہت مشکل تھا۔ دو سال قبل سودان نے مارکیٹ میں اسٹرابیری کی قیمت اور مانگ دیکھی تو اسے یہ خیال آیا۔ اس کے بعد انہوں نے اسٹرابیری کی کاشت کے بارے میں معلومات حاصل کیں ، کچھ کسانوں سے اس کے عمل کو سمجھا۔

اس کے بعد 2020 میں پونے سے 2.4 لاکھ میں 24 ہزار اسٹرابیری کے پودے منگوائے گئے۔ پھر مالچنگ اور کھیت کی تیاری پر پیسہ خرچ ہوا۔ مجموعی طور پر پہلی بار تقریباً 4.5 لاکھ سے ایک ایکڑ زمین سے اسٹرابیری کی کاشت شروع کی گئی، پہلے سال تقریباً 9 لاکھ کی آمدنی ہوئی۔ تاہم بعد میں کووڈ کی وجہ سے سب کچھ ٹھپ ہو گیا اور کچھ نقصان بھی ہوا۔

ان خبروں کو بھی پڑھیں

حالانکہ اگلے سیزن میں اب سودان نے 3 ایکڑ میں اسٹرابیری کے پودے لگائے ہیں۔ اس وقت ان کے پاس 70 ہزار سے زائد پودے ہیں اور ہر دو دن بعد تقریباً 300 کلو گرام پیداوار ہو رہی ہے، سودان کا کہنا ہے کہ اس بار دوہرا منافع متوقع ہے۔

اسٹرابیری کی کاشت کب کرنی چاہیے؟

مدھیہ پردیش، راجستھان، چھتیس گڑھ اور مہاراشٹر جیسی ریاستوں میں سٹرابیری کی کاشت ستمبر اکتوبر میں کی جاتی ہے۔ اتراکھنڈ، ہماچل جیسی پہاڑی ریاستوں میں اسے اکتوبر سے دسمبر تک لگایا جاتا ہے۔دوسری ریاستوں میں بھی ان مہینوں میں منعقد ہوتا ہے۔ چونکہ پودے کا سائیکل تقریباً 6 ماہ ہوتا ہے۔ اس کے لیے درجہ حرارت 30 ڈگری سے زیادہ نہیں ہونا چاہیے۔ اس کے لیے پہلے زمین کی تیاری کی جاتی ہے۔ کھیت میں تین سے چار بار ہل چلانے کے بعد کافی مقدار میں گوبر ملا دیں۔ پھر 2 فٹ کا فاصلہ چھوڑ کر علیحدہ بیڈ تیار کریں۔ ہر بیڈ کی چوڑائی تقریباً 60 سینٹی میٹر اور لمبائی کھیت کی لمبائی جتنی ہوتی ہے۔ ایک پودے کے درمیان 12 سینٹی میٹر کا فاصلہ ہوتا ہے۔ پودے لگانے کے بعد ہر دو سے تین دن بعد ڈرپ ایریگیشن طریقہ سے آبپاشی کریں۔ چونکہ اسٹرابیری کے پودے کی اونچائی کم ہوتی ہے۔ اس کے پھل زمین سے چپک جاتے ہیں اور خراب ہو جاتے ہیں۔ اس لیے پودے لگاتے وقت ملچنگ کرنا ضروری ہے۔ تاکہ اگر پھل نکلے تو وہ زمین کی بجائے ورق پر ہی رہے۔

اس کے لیے کس قسم کی مٹی کی ضرورت ہے؟

اسٹرابیری کی کاشت کے لیے سرخ مٹی بہتر ہے۔ اس بات کو یقینی بنائیں کہ کھیت میں پانی کا جماؤ نہ ہو۔ اس کے علاوہ اس بات کا بھی خیال رکھا جائے کہ مٹی نرم اور بھربھری ہو۔ تاکہ پودے کی جڑ اندر چلی جائے۔ اسٹرابیری موسم سرما کی فصل ہے۔ گرمی بڑھنے سے فصل متاثر ہونے لگتی ہے۔ اس کے لیے درجہ حرارت 30 ڈگری سے کم ہونا چاہیے۔ اگرچہ آپ پولی ہاؤس اور کولر لگا کر درجہ حرارت کو تھوڑا سا کنٹرول کر سکتے ہیں لیکن اس سے پروڈکٹ کی کوالٹی متاثر ہوگی اور اس کی قیمت بھی زیادہ ہوگی۔

مارکیٹنگ کے لیے کیا کریں ؟ پھل فروخت نہ ہو تو کیا کریں؟

ان خبروں کو بھی پڑھیں

بڑے شہروں کے ساتھ ساتھ چھوٹے شہروں میں بھی اسٹرابیری کی مانگ ہے۔ تاہم کووڈ کے بعد اس کی مانگ اور بھی بڑھ گئی ہے۔ یہ مقامی مارکیٹ کے ساتھ ساتھ بگ باسکٹ اور سپر فوڈز کی دکانوں میں بھی اچھی قیمت پر دستیاب ہے۔بہت سے کسان آن لائن فروخت بھی کرتے ہیں۔ اگر اس کے بعد بھی آپ کے پاس پھل باقی ہیں تو پریشان ہونے کی ضرورت نہیں۔ آپ اسے کولڈ سٹوریج میں بھی رکھ سکتے ہیں یا اس کا گودا تیار کر کے پروسیس کر سکتے ہیں۔ اس سے اچار، آئس کریم، چاکلیٹ، مٹھائی سمیت بہت سی اشیاء بنتی ہیں۔ بڑی کمپنیاں اس سے ادویات اور قوت مدافعت بڑھانے والی مصنوعات بھی بناتی ہیں۔ آپ ان کو اپنی مصنوعات فراہم کر سکتے ہیں۔

اسٹرابیری کی کاشت میں لاگت اور منافع

تجارتی سطح پر اسٹرابیری کی کاشت کے لیے کم از کم ایک ایکڑ زمین درکار ہے۔ جس میں تقریباً 24 ہزار پلانٹس لگائے جا سکتے ہیں۔ ایک پودے کی قیمت لگ بھگ 10 روپے ہے۔ یعنی 2.4 لاکھ پلانٹ کے اخراجات۔ اس کے علاوہ ملچنگ، ڈرپ ایریگیشن، کھیت کی تیاری اور دیکھ بھال میں اخراجات ہوتے ہیں۔ مجموعی طور پر تقریباً 4 لاکھ روپے درکار ہیں۔ تاہم حکومت کی طرف سے 50 فیصد تک سبسڈی بھی دستیاب ہے۔ اگر منافع کی بات کریں تو ایک پودے سے تقریباً 500 گرام پھل نکلتا ہے۔ یعنی تقریباً 12 ٹن اسٹرابیری فی ایکڑ پیدا ہوتی ہے۔ اگر اسے 100 روپے کلو میں فروخت کیا جائے تو 12 لاکھ روپے کی فروخت ہوگی۔ یعنی ایک سیزن میں تقریباً 8 لاکھ کا منافع۔ بڑے شہروں میں بیچیں گے تو زیادہ منافع ملے گا۔ وہاں اس کی قیمت 200 روپے فی کلو تک ہے۔

بہت سے کسان زیادہ منافع کے لیے وقت سے پہلے پودے لگاتے ہیں۔ تاکہ جب مارکیٹ میں اسٹرابیری کم دستیاب ہو تو وہ بہتر قیمت پر فروخت کر سکیں۔

اس خبر کو بھی پڑھیں

اب ٹرین میں رات 10 بجے کے بعد نہیں کر پائیں گے یہ کام،جان لیجیے نئی ہدایات ورنہ ہوگی کاروائی

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button