جرائم و حادثاتجھارکھنڈمشرقی بنگال

رانچی میں انٹرنیٹ سروس بحال، دفعہ 144 جاری، پورے جھارکھنڈ میں ہائی الرٹ

رانچی میں انٹرنیٹ سروس بحال کر دی گئی ہے۔ سروس ہفتے کی رات بحال کر دی گئی۔ حالانکہ دفعہ 144 ابھی تک نافذ ہے۔ پورے جھارکھنڈ میں الرٹ جاری ہے۔ پولیس لوگوں سے تحمل سے کام لینے کی اپیل کر رہی ہے۔

رانچی : راجدھانی میں حالات قابو میں ہیں۔ اس کے پیش نظر ہفتہ کی نصف شب سے انٹرنیٹ سروس بحال کر دی گئی ہے۔ تاہم رانچی میں دفعہ 144 اب بھی نافذ ہے۔ دوسری جانب شرپسندوں کی شناخت کا عمل جاری ہے۔ اب تک کی معلومات کے مطابق لوئر بازار تھانے، ہند پیڑھی تھانہ اور ڈیلی مارکیٹ تھانے میں 20 سے زائد افراد کے خلاف نامزد ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔ اس کے ساتھ ہی مین روڈ سے ہندپیری کے درمیان پولیس فورس ابھی بھی تعینات ہے۔

آپ کو بتا دیں کہ رانچی میں جمعہ کی رات 8 بجے سے انٹرنیٹ سروس بند کر دی گئی تھی کیونکہ شرپسندوں کی پولس سے جھڑپ اور فائرنگ کے بعد کئی فرضی ویڈیوز کے ذریعے ماحول خراب کرنے کی کوشش کی جا رہی تھی۔ اس وقت پولیس تمام سوشل میڈیا سائٹس کی تلاش میں ہے۔ جس کے ذریعے غلط معلومات پھیلائی جا رہی تھیں۔

بتا دیں کہ راجدھانی رانچی میں تشدد کے سلسلے میں وزیر اعلیٰ ہیمنت سورین کی ہدایات پر ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔ اس دو رکنی کمیٹی میں ڈیزاسٹر مینجمنٹ ڈیپارٹمنٹ کے پرنسپل سکریٹری امیتابھ کوشل اور ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل آپریشن سنجے آنند لاٹکر شامل ہیں۔ کمیٹی کو رانچی تشدد کی تحقیقات کرنے اور 7 دن کے اندر اپنی رپورٹ پیش کرنے کی ذمہ داری دی گئی ہے۔

ساتھ ہی بہار کے وزیر نتن نوین نے بھی ایف آئی آر درج کرائی ہے۔ دراصل 10 جون کو رانچی کے ڈیلی مارکیٹ کے قریب بدمعاشوں نے ان کی کار پر بھی حملہ کیا تھا۔ ساتھ ہی انہوں نے ڈی جی پی کو پورے واقعہ کی جانکاری دی تھی۔

رانچی میں انٹرنیٹ سروس بحال، دفعہ 144 جاری، پورے جھارکھنڈ میں ہائی الرٹ

آپ کو بتا دیں کہ جمعہ کو دارالحکومت میں تشدد کے بعد رانچی میں دفعہ 144 نافذ ہے۔ اس کے بعد سے دارالحکومت میں تمام دکانیں اور ادارے بند ہیں اور سڑکوں پر کسی قسم کی ٹریفک نہیں ہو رہی ہے۔ رانچی سے متصل رام گڑھ ضلع میں بھی دفعہ 144 نافذ کر دی گئی ہے۔ اس کے علاوہ پیگ میں بھی چوکسی بڑھا دی گئی ہے۔ اس کے ساتھ ہی پالامو، گڑھوا اور لاتیہار کو بھی ہائی الرٹ پر رکھا گیا ہے۔ پولیس سوشل میڈیا پر بھی نظر رکھی ہوئی ہے۔

قومی ترجمان
قومی ترجمان
Qaumi Tarjuman
قومی ترجمان

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button