Featuredاہم خبریںبہارپٹنہ

دارالحکومت پٹنہ کے علاوہ اب بہار کے ان شہروں میں بھی ہوگا تارا منڈل، 2022 تک پورا کرنے کا ہدف

اس وقت بہار کا واحد "تارا منڈل” دار الحکومت پٹنہ میں ہے۔ لیکن اب جلد ہی بہار کے دو اور شہروں میں تارا منڈل کھولا جائے گا۔ یعنی اب ان علاقوں کے لوگ آسمانی دنیا کا دلچسپ نظارہ بھی قریب سے دیکھ سکیں گے۔ گیا اور بھاگلپور میں تارا منڈل بنائے جا رہے ہیں۔ اب شمالی اور جنوبی بہار کے سائنس کے طلباء کو فلکیات کی دنیا کو قریب سے جاننے اور سمجھنے کے لیے پٹنہ جانے کی ضرورت نہیں پڑے گی۔اب بہار کے مظفر پور میں بھی تارا منڈل اور خلائی تحقیقی مرکز کھولا جائے گا۔ اسے 2022 کے اواخر تک مکمل کرنے کا ہدف ہے۔ ذرائع کے مطابق سیارہ کی تعمیر کے لیے جگہ کا انتخاب کرنے کے لیے دہلی کے اسپیس انڈین گروپ سے وابستہ ماہرین اور حکام کو دعوت نامے بھیجے گئے تھے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق انہوں نے مظفر پور آنے کی دعوت قبول کر لی ہے اور جون میں آنے پر رضامندی ظاہر کر دی ہے۔ سائٹ کے انتخاب کے بعد پلانیٹریم اینڈ اسپیس ریسرچ سینٹر کا تعمیراتی کام پی پی پی موڈ پر شروع ہوگا۔ ذرائع کے مطابق خلائی تحقیقی مرکز تقریباً 5 کروڑ روپے خرچ کر کے تعمیر کیا جائے گا۔ اس کے ساتھ بہار کے گیا اور بھاگلپور میں بھی اس کی تعمیر ہو رہی ہے۔ محکمانہ حکام کا کہنا ہے کہ نئے سال کے وسط میں تعمیراتی کام مکمل کر لیا جائے گا۔ یہاں کے لوگ آسمانی دنیا سے بھی لطف اندوز ہو سکیں گے۔ آپ کو بتاتے چلیں کہ سال 1954 میں مظفر پور کے ایل ایس کالج میں بہار کا پہلا اور ملک کا 7 واں پلانٹیریم بنایا گیا تھا۔ اب اس تاریخی پلانٹیریم اور آبزرویٹری کو بحال کرنے کی تیاریاں کی جا رہی ہیں۔

بہار حکومت کے سائنس اور ٹیکنالوجی کے وزیر سمیت کمار سنگھ، جنہوں نے حال ہی میں ایل ایس کالج کا دورہ کیا، کہا کہ اس ورثے کو بچانے کے لیے اسے دوبارہ زندہ کیا جائے گا۔ اگر حکومت کی کوششوں سے اسے دوبارہ زندہ کیا جاتا ہے تو یہ بہار کے سائنس کے طلباء اور اس میں دلچسپی رکھنے والے لوگوں کے لیے بہت اچھا ہوگا۔ بتادیں کہ دارالحکومت پٹنہ کے سیارہ گاہ میں ہر روز مختلف اضلاع سے سائنس سے وابستہ طلباء اور عام لوگ آسمانی دنیا کو دیکھنے اور سمجھنے آتے ہیں۔ ان تینوں اضلاع میں تارا منڈل کھلنے کے بعد ان علاقوں کے لوگ اور طلباء سائنس میں دلچسپی پیدا کریں گے۔ پٹنہ میں شری کرشنا وگیان کیندر بھی ہے جہاں ریاست بھر سے طلباء آتے ہیں۔ ماہرین کا خیال ہے کہ ان مراکز کے کھلنے سے بچوں اور بچیوں کی ذہنی نشوونما ہوگی۔ انہیں اپنے کیریئر کے میدان میں ایک نئی سمت ملے گی اور طلباء خلائی تحقیق اور سائنس کے دیگر شعبوں میں بھی آگے بڑھ سکیں گے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button