اہم خبریںسنڈے اسپیشلطب و صحتگوشہ خواتین و اطفال

جلد کی دیکھ بھال: چہرے پر مہاسوں نے کر دیا ہے ناک میں دم ، تو استعمال کریں یہ 4 فیس پیک، ، چند گھنٹوں میں محسُوس کریں گے فرق

ان خبروں کو بھی پڑھیں

جلد کی دیکھ بھال: چہرے پر مہاسوں نے کر دیا ہے ناک میں دم ، تو استعمال کریں یہ 4 فیس پیک، ، چند گھنٹوں میں محسُوس کریں گے فرق

پمپل فیس پیک: اگر چہرے پر دانے ہوں تو دل اور چہرے دونوں میں درد ہوتا ہے۔ ایک بار یہ ضدی داغ نکل آئے تو یہ ہفتوں تک جانے کا نام نہیں لیتا اور ایک کے نکلتے ہی دوسرا باہر آنے کو تیار ہو جاتا ہے۔ ان پمپل کو توڑنے یا پھوڑنے سے یہ پیچھا نہیں چھوڑتے۔ ان سے چھٹکارا پانے کے لیے ان کا بہت احتیاط سے علاج کرنا پڑتا ہے۔

یہ کچھ ایسے ہی فیس پیک ہیں جو داغ دھبوں کو بغیر جلن کے دور کرتے ہیں تاکہ وہ قدرتی طور پر ختم ہو جائیں اور چہرے پر کسی قسم کے دھبے نہ چھوڑیں


ہلدی اور شہد کا فیس پیک

ہلدی اپنی سوزش مخالف خصوصیات کے لیے جانی جاتی ہے، یہ چہرے کے داغ دھبوں اور داغ دھبوں کو بھی دور کرتی ہے۔ شہد چہرے کو قدرتی چمک دیتا ہے اور اسے نمی بخشتا ہے۔ ان دونوں کو ملا کر ہموار پیسٹ بنائیں اور 10 منٹ بعد چہرے پر دھو لیں۔ چہرہ نکھر جائے گا۔

ان خبروں کو بھی پڑھیں

ایلو ویرا فیس پیک

ایلو ویرا اپنے کولنگ ایجنٹ کے ساتھ پمپل کی جلن کو فوری طور پر دور کرتا ہے۔ اس کے علاوہ یہ مہاسوں کو پھیلنے سے روکتا ہے۔ ایلو ویرا جیل کو براہ راست پمپل پر لگائیں اور 10 منٹ بعد دھو لیں۔

دہی اور جئی کا فیس پیک

جئی جلد کو نکھارنے کے لیے بہت فائدہ مند ہے۔ جب اسے دہی کے ساتھ لگایا جائے تو چہرے کی گہری صفائی ہوتی ہے۔ آپ دہی اور جئی میں انڈے کی سفیدی بھی شامل کر سکتے ہیں۔ اس فیس پیک کو 15 منٹ تک چہرے پر لگائیں اور پھر ٹھنڈے پانی سے دھو لیں۔

نیم اور ہلدی کا فیس پیک

یہ دو ایسے اجزا ہیں جو ہماری دادی اپنے زمانے سے استعمال کر رہی ہیں۔ اس کی اینٹی فنگل اور اینٹی بیکٹیریل خصوصیات پمپلوں کو ختم کرنے میں فوری اثر دکھاتی ہیں۔ نیم کے پتوں کو پیس کر ایک چمچ پاؤڈر بنائیں اور اس میں آدھا چمچ ہلدی ملا کر پیسٹ بنائیں۔ اسے 10 منٹ تک چہرے پر رکھنے کے بعد دھو لیں۔

دستبرداری : یہ مواد بشمول مشورے، صرف عام معلومات فراہم کرتا ہے۔ یہ کسی بھی طرح مستند طبی رائے کا متبادل نہیں ہے۔ مزید تفصیلات کے لیے ہمیشہ کسی ماہر یا اپنے ڈاکٹر سے رجوع کریں۔ قومی ترجمان اس معلومات کی ذمہ داری قبول نہیں کرتا۔

ان خبروں کو بھی پڑھیں

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button