اورنگ آبادبانکابھاگلپوربہارجہان آبادشیخوپورہگیالکھی سرائےمونگیرنوادا

بہار کے 11 اضلاع کے 96 بلاکس میں رہنے والے ہر خاندان کو ملے گا 3500 روپے، نتیش کابینہ کا فیصلہ

راحت کی خبر : بہار کے 11 اضلاع کے 96 بلاکس میں رہنے والے ہر خاندان کو ملے گا 3500 روپے، نتیش کابینہ کا فیصلہ

قحط زدہ ان گاؤں اور ٹولہ میں رہنے والے لوگوں کو حکومت نے کی خصوصی امداد دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ وزیر اعلی نتیش کمار کی صدارت میں ریاستی کابینہ کی میٹنگ میں ان تجاویز کو منظوری دی گئی۔

پٹنہ : ریاستی حکومت نے ریاست کے 96 بلاکس، 11 اضلاع میں 937 پنچایتوں کے 7841 گاؤں اور اس کے تحت آنے والے تمام گاؤں، ٹولہ، بستیوں کو خشک سالی سے متاثرہ قرار دیا ہے۔ حکومت نے 3500 روپے کی خصوصی امداد دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ دوسری جانب کابینہ نے ریاست کے سیلاب سے متاثرہ اضلاع میں فصلوں کے نقصان کا سروے کرانے کی تجویز کو بھی منظوری دے دی ہے۔ جمعرات کو وزیر اعلی نتیش کمار کی صدارت میں ریاستی کابینہ کی میٹنگ میں ان تجاویز کو منظوری دی گئی۔گزشتہ روز ہونے والے اجلاس میں 21 تجاویز کو منظوری دی گئی۔

ان اضلاع کو قحط زدہ قرار دیا گیا تھا۔

کابینہ کی میٹنگ کے بعد کابینہ کے ایڈیشنل چیف سکریٹری ایس سدھارتھ نے کہا کہ سال 2022 میں بارش کی صورتحال انتہائی قابل رحم تھی۔ کم بارش کی وجہ سے کئی بلاکس میں خریف کی فصل کی بوائی اور بوائی اوسط سے کم رہی۔ جولائی میں اوسط سے 60 فیصد کمی واقع ہوئی۔

اگست میں 37 فیصد کمی دیکھی گئی۔ جس کی وجہ سے زرعی پیداوار میں نمایاں کمی آئی اور لگائے گئے فصل کا احاطہ 70 فیصد سے بھی کم رہا۔ اس کے پیش نظر جہان آباد، گیا، اورنگ آباد، شیخ پورہ، نوادہ، مونگیر، لکھیسرائے، بانکا ، بھاگلپور، جموئی اور نالندہ کو خشک سالی سے متاثرہ قرار دینے کا فیصلہ کیا گیا۔

متاثرہ علاقے کے متاثرہ خاندانوں کا سروے کیا جائے گا، فہرست تیار کی جائے گی – کنٹیجنسی فنڈ سے 500 کروڑ ادا کرنے کے لیے – سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں فصلوں کے نقصان کا بھی سروے کیا جائے گا –

ڈیزل گرانٹ دینے اور 100 کروڑ روپے کی منظوری متاثرہ گاؤں، رہائش گاہ میں رہنے والے مالی امداد

حکومت نے اربوں روپے کی مالی امداد دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس سے پہلے متاثرہ دیہاتوں، ٹولوں، بستیوں میں رہنے والے خاندانوں کا سروے کرکے خاندانوں کی فہرست تیار کی جائے گی۔ کابینہ نے خصوصی امداد کی رقم فراہم کرنے کے لیے بہار ہنگامی فنڈ سے 500 کروڑ روپے کی ایڈوانس لینے کی تجویز کو بھی منظوری دی ہے۔ خصوصی امداد کی رقم براہ راست متاثرین کے خاندانوں کے بینک اکاؤنٹ میں بھیجی جاتی ہے۔

اسی فیصلے کے تحت یہ بھی فیصلہ کیا گیا کہ بہار کے جو اضلاع سیلاب سے متاثر ہیں، وہاں سیلاب سے کتنی فصل کو نقصان پہنچا ہے، اس کا سروے بھی کرایا جائے گا۔ جہاں فصل کو نقصان پہنچے گا، کسانوں کو ان کی فہرست میں شامل کرکے زرعی ان پٹ سبسڈی دی جائے گی۔ خشک سالی سے متاثرہ علاقوں کے شہریوں کے ساتھ سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں فصلوں کے نقصان کا اندازہ۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button