اہم خبریںبھاگلپوربہاربیگوسراےمشرقی چمپارنمغربی چمپارن

بہار کے زردالو آم کی بیرون ممالک میں بڑھی قدر ، لکھنؤ ہوتے ہوئے پہنچے گا برطانیہ، سری لنکا، بنگلہ دیش اور دبئی

بہار کے بھاگلپور کے مشہور زردالو آم کو منفرد جغرافیائی شناخت (جی آئی ٹیگ) ملنے کے ساتھ ہی بیرونی ممالک میں بھی اس کی مانگ بڑھنے لگی ہے۔ لوگوں میں زردالو آم کا دیوانہ اس قدر ہے کہ آم کے تیار ہونے سے پہلے ہی کئی ممالک سے سپلائی کی درخواستیں آ رہی ہیں۔

گزشتہ سال زردالو آم کی پہلی کھیپ برطانیہ بھیجی گئی تھی۔ لیکن اس بار برطانیہ میں مزید 3 ممالک شامل ہوئے ہیں۔ دبئی، سری لنکا اور بنگلہ دیش کو بھی بھیجا جائے گا۔

مرکزی وزیر تجارت اور صنعت پیوش گوئل نے ٹویٹر پر یہ جانکاری دی۔ انہوں نے لکھا کہ بھاگلپور کا زردالو آم برطانیہ پہنچے گا۔ اب تک مانگ کے مطابق 500 کوئنٹل آم برآمد کرنے کی تیاریاں کی جا رہی ہیں۔ توقع ہے کہ مئی کے آخر تک مانگ میں مزید اضافہ ہوگا۔ مرکزی وزیر پیوش گوئل نے یہ اطلاع دی۔

اس بار بھی لکھنؤ کے ذریعے ایکسپورٹ ڈیولپمنٹ اتھارٹی کے ذریعے زرعی اور پراسیس شدہ کھانے کی مصنوعات پہنچانے کی پہل کی جا رہی ہے۔ بانکا اور بھاگلپور کے 27 کسانوں نے برآمد کے لیے رجسٹریشن کرایا ہے۔

بھاگلپور کے زردالو آم جو اپنے شاندار ذائقے اور منفرد خوشبو کے لیے مشہور ہے کو 2018 میں جی آئی ٹیگ ملا۔ جی آئی ٹیگ ان مصنوعات کو دیا جاتا ہے جو ایک مخصوص جغرافیائی علاقے میں تیار کی جاتی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

بہار کی چار زرعی اور باغبانی مصنوعات بشمول زردالو آم کو جی آئی ٹیگ ملا ہے۔ اس میں مظفر پور کی شاہی لیچی، ماگھی پان اور کٹارنی چاول شامل ہیں۔ اس کے ساتھ ہی متھیلا کے مکھانہ کو بھی جی آئی ٹیگ ملنے کی امید ہے۔ زردالو آم بنیادی طور پر بھاگلپور، جموئی، بانکا اور مونگیر اضلاع میں اگایا جاتا ہے۔

بہار کے زردالو آم کی بیرون ممالک میں بڑھی قدر ، لکھنؤ ہوتے ہوئے پہنچے گا برطانیہ، سری لنکا، بنگلہ دیش اور دبئی

دوسری طرف شمالی بہار کے چمپارن میں بھی زردالو آم ہے جس کا ذائقہ اور خوشبو لاجواب ہے۔ محکمہ زراعت کے اعداد و شمار کے مطابق رواں سال اب تک 6052.79 ٹن زردالو آم کی پیداوار کا تخمینہ لگایا گیا ہے۔ جس میں بھاگلپور اور بانکا میں 33 سو ٹن سے زیادہ پیداوار کا تخمینہ لگایا گیا ہے۔

جلد ہی بھاگلپور سے ہی برآمد کی تیاری کی جا رہی ہے۔ بہار زرعی یونیورسٹی صبور کے محکمہ باغبانی کے سینئر زرعی سائنسدان ڈاکٹر سنجے سہائے کے مطابق کسانوں کی آمدنی بڑھانے کے لیے اس سال یونیورسٹی کیمپس میں ایک پیک ہاؤس بنانے کی تیاریاں جاری ہیں۔ اس کے لیے سیکریٹری زراعت سے اجازت لی گئی ہے۔

ریاستی حکومت کے ذریعہ مطلوبہ فائٹوسینٹری سرٹیفکیٹ کی سہولت برآمد کے لئے دستیاب ہوگئی ہے۔ بہار میں باغبانی کی برآمد کے نئے مواقع پیدا ہوں گے۔

بہار کے زردالو آم کی بیرون ممالک میں بڑھی قدر ، لکھنؤ ہوتے ہوئے پہنچے گا برطانیہ، سری لنکا، بنگلہ دیش اور دبئی

فائٹو سینیٹری سرٹیفکیٹ اس بات کا تعین کرتا ہے کہ زرعی مصنوعات اس ملک کے لوگوں کی صحت کے لیے اچھی ہے جہاں اسے برآمد کیا جاتا ہے۔ کوئی نقصان دہ کیڑے بیکٹیریا نہیں۔ پہلے محکمہ زراعت کو یہ حق حاصل نہیں تھا۔ جس کی وجہ سے بہار کی زرعی مصنوعات بنگال یا مہاراشٹر کی مصنوعات کے طور پر برآمد کی جارہی تھیں۔ پٹنہ کے میٹھا پور میں اے آر آئی کیمپس میں ایکسپورٹ پیک بنانے کا عمل شروع ہو گیا ہے۔

بہار کے باغبانی کے ڈائریکٹر نند کشور نے کہا کہ بھاگلپور بہار کا جردالو آم اپنے منفرد ذائقے، مٹھاس اور رنگ کے لیے مشہور ہے۔ جس کی وجہ سے اس کی مانگ سب سے زیادہ ہے۔ اے پی ای ڈی اے، وزارت تجارت کی ایک ایجنسی، اپنے رجسٹرڈ پیک ہاؤس مراکز کے ذریعے برآمدات میں مدد کر رہی ہے۔ بہار زرعی یونیورسٹی کے کیمپس میں ایک پیک ہاؤس بنانے کی بھی تیاریاں کی جا رہی ہیں۔ بہار میں ایک کارگو سینٹر بھی بنایا جانا ہے۔

یہ بھی پڑھ سکتے

قومی ترجمان کا ٹیلیگرام گروپ جوائن کرنے کے لیے یہاں کلک کریں!

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button