اہم خبریںبہاربین ریاستی خبریںپٹنہدربھنگہ

بہار کی پشپا جھا 20000 سے زیادہ لوگوں کو مشروم کی کاشت کی دے چکی ہے تربیت ، انہیں "انوویٹیو فارمر ایوارڈ” سے بھی نوازا گیا ہے۔

ریاست بہار کے دربھنگہ ضلع کے بلبھدر پور گاؤں کی رہنے والی 47 سالہ پشپا جھا 2010 سے مشروم کاشت کر رہی ہیں۔اس وقت ان کے پاس روزانہ تقریباً 10 کلو مشروم کی پیداوار ہوتی ہے جسے وہ 100 سے 150 روپے فی کلو کے حساب سے فروخت کرتی ہیں۔اور ہر روز وہ کم از کم 1000-1500 روپے کماتی ہے۔ ان کے شوہر رمیش ٹیچر ہیں۔پشپا کہتی ہیں دس سال پہلے یہاں کے لوگ مشروم کی کاشت کے بارے میں زیادہ نہیں جانتے تھے۔کسی نے میرے شوہر کو اس کے بارے میں بتایا۔وہ چاہتے تھے کہ میں گھر میں بیکار بیٹھنے سے بہتر کچھ کروں۔ پھر میں نے پوسا یونیورسٹی، سمستی پور سے مشروم کی کاشت کی تربیت لینے کا فیصلہ کیا۔وہ کہتی ہیں کہ جب وہ ٹریننگ لینے وہاں پہنچی تو تمام سیٹیں بھری ہوئی تھیں۔ لیکن رمیش نے عہدیداروں سے درخواست کی۔ اور آخر میں وہ مان گئے پھر ہم دونوں نے مل کر 6 دن کی ٹریننگ مکمل کی۔



پشپا آگے کہتی ہیں آج کل مشروم کی کاشت کسی بھی موسم میں کی جاتی ہے۔ لیکن اس وقت گرمیوں میں یہ ممکن نہیں تھا اور جب ہم نے ٹریننگ لی تو جون کا مہینہ تھا اور گرمی کافی تھی۔چنانچہ ہم نے ستمبر 2010 سے اس کی کاشت شروع کی۔وہ کہتی ہیں ہم نے شروع میں پوسا یونیورسٹی سے ہی 1000 تھیلے لائے اور دو گانٹھوں کے کھیت میں جھونپڑی بنا کر مشروم کی کاشت شروع کی۔ ایک تھیلے میں تقریباً 800 سے 1000 گرام مشروم تھے۔اس وقت ہمارے علاقے کے لوگ مشروم کے بارے میں نہیں جانتے تھے۔ہم لوگوں کو مشروم مفت میں دیتے تھے کہ پہلے کھائیے پھر لیجیے! لیکن بہت سے لوگ اسے زہریلا سمجھ کر پھینک دیتے تھے۔ لیکن پشپا نے پھر بھی ہمت نہیں ہاری ۔اس نے 200-200 گرام کے پیکٹ بنا کر سبزی بیچنے والی خواتین کو دینا شروع کر دیے۔



وہ مزید کہتی ہیں ہم نے ان سے کہا کہ مشروم بیچنے کے بعد ہمیں پیسے دیں۔ اگر پیکٹ فروخت نہ ہوتا تو وہ اسے واپس بھی لے جاتا اور پھر اگلے دن انہیں نئی مشروم دے دیتے۔ اس طرح رفتہ رفتہ ہم نے اچھی گرفت حاصل کرلی اور آج ہمیں اپنی مصنوعات بیچنے کے لیے کہیں جانے کی ضرورت نہیں ہے۔ پشپا کا کہنا ہے کہ مشروم کی کاشت تقریباً 50 ہزار روپے سے شروع کی گئی تھی۔ سال 2011 میں وہ دوبارہ مشروم کے بیج کی تربیت کے لیے پوسا یونیورسٹی گئی۔وہ کہتی ہیں، تربیت ایک ماہ کی تھی۔ اسی دوران گاؤں کے کچھ لوگوں نے میرے کھیت کو جلا دیا۔لیکن میرے شوہر نے میرے واپس آنے سے پہلے ہی ایک اور فارم تیار کر لیا۔



پشپا کہتی ہیں پہلے پانچ سال میرے لیے بہت مشکل تھے۔ لیکن آج ہمارا پروڈکٹ دربھنگہ کے مقامی بازار کے علاوہ بہار کے دوسرے اضلاع میں جا رہا ہے۔ ہم پوسا یونیورسٹی کے ذریعے بہت سے لوگوں کو خشک مشروم بھی فروخت کرتے ہیں۔جس سے بسکٹ، ٹوسٹ، چپس جیسی بہت سی چیزیں بنتی ہیں۔



وہ خشک مشروم کا اچار بھی بناتی ہے۔



مشروم کی کاشت میں ان کی نمایاں شراکت کے لیے، پشپا کو پوسا یونیورسٹی نے 2017 میں کئی دیگر ایوارڈز کے ساتھ ‘نوویٹو فارمر ایوارڈ’ سے نوازا تھا۔اس کی کامیابی کو دیکھ کر دوسری خواتین کو اس میں شامل ہونے کی ترغیب ملی۔ پشپا نے سال 2015 سے خواتین کو تربیت دینا شروع کی تھی۔وہ کہتی ہیں کہ خواتین کو مشروم کی مفت تربیت دینے کے علاوہ میں بیج بھی دیتی ہوں اور کئی مواقع پر ضرورت مند خواتین کی مالی مدد بھی کرتی ہوں۔ میں اب تک 20 ہزار سے زائد لوگوں کو ٹریننگ دے چکی ہوں۔



وہ کہتی ہیں مجھے بہت سی تنظیمیں ٹریننگ دینے کے لیے مدعو کرتی ہیں۔ میں نے اسکول اور کالج کی لڑکیوں سے لے کر دربھنگہ سینٹرل جیل کے قیدیوں کو تربیت دی ہے۔ تاہم پشپا 10 دن کی ٹریننگ دیتی ہے۔اس کے پاس پہلے صرف عورتیں آتی تھیں لیکن اب بہت سے مرد بھی تربیت کے لیے آ رہے ہیں۔ پشپا کہتی ہیں، آج میرا بیٹا الہ آباد میں باغبانی کی تعلیم حاصل کر رہا ہے۔جیسے ہی وہ اپنی پڑھائی مکمل کرتا ہے۔ ہم اپنی مشروم کی کاشت کو کمپنی میں تبدیل کرنا شروع کر دیں گے۔ فی الحال، ہم اپنی مصنوعات کو "مشروم کسان پشپا جھا” کے نام سے فروخت کرتے ہیں۔وہ کہتی ہیں میں خود ایک عورت ہوں اور معاشرے میں خواتین کے مقام کو اچھی طرح سمجھتی ہوں۔ میرا مقصد خواتین کو مشروم کی کاشت سے جوڑ کر مالی طور پر خود کفیل بنانا ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button