بہارپٹنہتازہ ترینقومی خبریںکشن گنجمشرقی بنگال

بہار میں مٹی سے اینٹیں بنانے پر لگے گی پابندی! مرکزی حکومت کا نوٹیفکیشن جاری، جانیں پابندی کی وجہ

بہار : تقریباً پورے بہار میں مٹی کی اینٹ بنانے پر پابندی لگانے کی تیاریاں کی جا رہی ہیں۔حکومت ہند کے بعد اب بہار حکومت کے اقدام کی باری ہے۔ جنگلات اور ماحولیات کی مرکزی وزارت نے ایک نوٹیفکیشن جاری کیا ہے جس کے تحت کوئلے پر مبنی پاور پلانٹس کے 300 کلومیٹر کے دائرے میں مٹی کی اینٹیں نہیں بنائی جائیں گی۔ بہار حکومت کی طرف سے اسے لاگو کرنے کے بعد تھرمل پاور پلانٹس کی حالت دیکھ کر یہ خیال کیا جا رہا ہے کہ اسے پورے بہار میں لاگو کیا جا سکتا ہے۔


اس بات کا امکان ہے کہ ریاست کے بیشتر حصوں میں اینٹوں کے بھٹوں کو بند کرنا پڑ سکتا ہے۔اینٹوں کی پیداوار صرف فلائی ایش یعنی کوئلے سے چلنے والے تھرمل پاور پلانٹس کی راکھ سے ممکن ہوگی۔ اس نوٹیفکیشن کو زمین پر لاگو کرنے کے لیے ریاستی حکومت کی جانب سے ایک نوٹیفکیشن بھی جاری کیا جائے گا۔ اس کے علاوہ محکمہ جنگلات اور ماحولیات کے ماحولیات سے متعلق قوانین میں بھی تبدیلی کی جا سکتی ہے۔ اسٹیٹ مائنز ڈپارٹمنٹ کو اینٹوں کے بھٹوں کو لائسنس دینے سے متعلق قوانین میں بھی تبدیلیاں کرنی ہوں گی۔

نالندہ، گیا، نوادہ، جہان آباد، بکسر، بھوجپور، روہتاس اور کیمور اضلاع کے زیادہ تر حصے اورنگ آباد کے نوی نگر تھرمل پاور پلانٹ سے 300 کلومیٹر کے دائرے میں آئیں گے۔ اسی طرح بکسر میں کیمور، روہتاس اور بھوجپور۔ بیگوسرائے ضلع کے بارونی پاور پلانٹ سے مونگیر، پٹنہ، سمستی پور، لکھی سرائے اور کھگڑیا اضلاع میں مٹی سے اینٹیں بنانے پر پابندی ہوگی۔

بیگوسرائے، لکھی سرائے، جہان آباد، شیخ پورہ، نالندہ، بھوجپور، سارن، ویشالی اور سمستی پور اضلاع پٹنہ کے فلڈ پاور پلانٹ کے 300 کلومیٹر کے دائرے میں آئیں گے۔ مظفر پور کی کانٹی تھرمل پاور کی وجہ سے سمستی پور، دربھنگہ، سرن، ویشالی، پٹنہ، سیوان، گوپال گنج، مشرقی چمپارن، مغربی چمپارن، سیتامڑھی، شیوہر اور مدھوبنی اضلاع میں اینٹوں کے بھٹے کا کام ناممکن ہو جائے گا۔ پورنیہ، ارریہ، کشن گنج اور کٹیہار اضلاع کے علاقے بھی فرکا پلانٹ کے 300 کلومیٹر کے دائرے میں آئیں گے۔صحیح معنوں میں بہار کا شاید ہی کوئی حصہ اس سے محروم ہو گا۔


سرکاری اور نجی دونوں طرح کی تعمیرات میں فلائی ایش اینٹوں سے تعمیرات کو فروغ دے کر مٹی کے کٹاؤ کے ساتھ ساتھ آلودگی پر بھی قابو پایا جا سکتا ہے۔ عمارتوں، سڑکوں، فلائی اوورز، ساحلوں کے تحفظ کے لیے ریلنگ بنانے، منصوبوں کے نشیبی علاقوں کو بھرنے، کان کنی کی جگہوں کو مٹی کی بجائے فلائی ایش سے بھرنے کے آپشن کو بھی فروغ دیا جا سکتا ہے۔



اس کے علاوہ اسے فائبر سیمنٹ کی چادروں، پائپوں، بورڈز، پینلز، سیمنٹ مینوفیکچرنگ اور ریڈی مکس کنکریٹ کی تیاری میں بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔ بہار حکومت تھرمل پاور پلانٹ کے صرف 300 کلومیٹر کے دائرے میں مٹی سے اینٹیں نہ بنانے اور فلائی ایش سے اینٹیں نہ بنانے کے بارے میں حکومت ہند کے نوٹیفکیشن کو مکمل طور پر نافذ کرے گی۔ اس سے متعلق ایکشن پلان جلد اجلاس کے بعد طے کیا جائے گا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button