بہارجرائم و حادثاتمظفر پور

بہار : مظفر پور میں پولیس عوام میں جھڑپ، 6 جوان زخمی: شراب کیس میں ملزم کو پکڑنے پہنچی تھی پولیس، گاؤں والوں نے زبردست کیا پتھراؤ

مظفر پور ،27 فروری – مظفر پور کے ساکرا تھانہ علاقے کے تحت بھیر گڑھا چوک پر اتوار کو پولیس اور عوام کے درمیان تصادم ہوا۔ مشتعل لوگوں نے پولیس پر پتھراؤ کیا۔ جوابی کارروائی میں پولیس نے لاٹھی چارج کیا اور لوگوں کو منتشر کردیا۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ پولیس نے بھیڑ کو منتشر کرنے کے لیے تین راؤنڈ ہوائی فائرنگ کی۔ تاہم پولیس حکام اس کی تصدیق نہیں کر رہے ہیں۔ موصولہ اطلاع کے مطابق پولیس شراب کیس کے ملزم کی گرفتاری کے لیے پہنچی تھی۔ تصادم کے بعد 7 تھانوں کی پولیس موقع پر پہنچ گئی۔

تقریباً ایک گھنٹے تک گاؤں والے چھت سے اور چھپ کر پتھر برساتے رہے۔ اس میں ساکرا کے ایس ایچ او سروج کمار سمیت 6 پولیس اہلکار زخمی ہو گئے۔ اچانک حملے نے ساکرہ پولیس کو پیچھے ہٹنے پر مجبور کر دیا۔ بے قابو صورتحال کی اطلاع پر بڑیار پور او پی، گائگھاٹ تھانہ، بینی آباد او پی، ہتھہ او پی، پیئر تھانہ، بوچہاں تھانہ، اور مانیاری تھانے سے سینکڑوں پولیس فورس موقع پر پہنچ گئی۔ اس کے بعد پتھراؤ کرنے والے لوگوں پر لاٹھی چارج کیا گیا۔ پولیس کی نفری گھر میں داخل ہوئی اور ہنگامہ آرائی کرنے والے شخص کی تلاش شروع کردی۔ 6 شرپسندوں کو حراست میں لینے کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ اس وقت صورتحال کشیدہ ہے۔ ڈی ایس پی ایسٹ منوج پانڈے موقع پر پہنچ کر امن برقرار رکھنے کی اپیل کر رہے ہیں۔

پولیس کی نفری گھر میں داخل ہوئی اور ہنگامہ آرائی کرنے والے شخص کی تلاش شروع کردی۔ 6 شرپسندوں کو حراست میں لینے کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ اس وقت صورتحال کشیدہ ہے۔ ڈی ایس پی ایسٹ منوج پانڈے موقع پر پہنچ کر امن برقرار رکھنے کی اپیل کر رہے ہیں۔

گرفتاری سے لوگ مشتعل، واقعے کی وجہ شراب کیس میں بھیر گڑھ کے گنور رائے کی گرفتاری بتائی جا رہی ہے۔ اس کے کنبہ کے افراد میتا دیوی، راموتی دیوی اور دیگر نے بتایا کہ پولس رات گئے گنور رائے کو شراب کے ایک پرانے معاملے میں گرفتار کرنے گئی تھی۔ جبکہ وہ بھگت ہے۔ عبادت مکمل کرو۔ شراب کو ہاتھ تک نہ لگائیں۔ ایک سال قبل گنور کے گھر کے پیچھے سے شراب کی تین بوتلیں ملی تھیں۔ اس وقت ساکرا کے پولیس اسٹیشن ٹرینی ڈی ایس پی ستیش سمن تھے۔ تھانہ گنور کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا۔ اسی معاملے میں دیر رات پولیس نے اسے گھر سے گرفتار کر لیا۔ اس سے لوگوں کا غصہ بڑھ گیا۔ وہ کہتا ہے کہ گاؤں میں عبادت ہوتی ہے۔ گنور رائے اس عبادت کو کروانے والے تھے۔ سب کچھ تیار تھا۔ اسی دوران پولیس نے اسے گرفتار کرلیا۔

سب سے پہلے تو مشتعل افراد لاٹھیوں اور سلاخوں کے ساتھ سڑک پر آگئے۔

انہوں نے ٹائر جلا کر سڑک بلاک کر دی۔ پولیس کے خلاف شدید نعرے بازی اور مظاہرے شروع ہو گئے۔ اطلاع پر تھانہ ساکرہ کی پولیس موقع پر پہنچ گئی۔ مشتعل لوگوں کو سمجھنے کی کوشش کی لیکن کوئی ماننے کو تیار نہ ہوا۔ شام کے وقت صورتحال مزید بگڑ گئی۔ جب پولیس نے طاقت کا استعمال کرتے ہوئے روڈ بلاک کرنے والوں کو ہٹانے کی کوشش کی تو پہلے زبردست ہاتھا پائی ہوئی اور پھر پولیس اور عوام کے درمیان جھڑپ ہوئی۔ اس کے بعد پتھراؤ اور لاٹھی چارج کیا گیا۔

علاقہ میدان جنگ بن گیا

پولیس پر اس قدر پتھراؤ کیا گیا کہ سڑک اور شاہراہ پر آدھا کلومیٹر تک صرف اینٹیں اور پتھر رکھے گئے۔ دو گھنٹے تک پورا علاقہ میدان جنگ بنا رہا۔ پولیس کی جانب سے پتھراؤ بھی کیا گیا۔ کیونکہ لوگ چھپ کر اینٹیں اور پتھر پھینک رہے تھے۔ اسی لیے لاٹھی چارج کی بھی بات نہیں ہو رہی تھی۔ پتھراؤ اتنا زیادہ تھا کہ پولیس کے لیے آگے بڑھنا مشکل ہوتا جا رہا تھا۔ اس کے بعد کچھ فوجیوں نے پتھراؤ بھی شروع کر دیا۔ اس سے کشیدگی مزید بڑھ گئی۔ یہاں ایس ایس پی جینتکانت نے بتایا کہ فی الحال صورتحال قابو میں ہے۔ قانون کو ہاتھ میں لے کر امن و امان کا مسئلہ پیدا کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔

ان خبروں کو بھی پڑھیں

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button