اہم خبریںبہارپٹنہ

بہار قانون ساز کونسل انتخابات : آر جے ڈی نے امیدواروں کا کیا اعلان ، برہمنوں اور اقلیتوں پر چلا داؤ

راشٹریہ جنتا دل نے بہار قانون ساز کونسل کی 7 نشستوں پر ہونے والے انتخابات کے لیے اپنے امیدواروں کے ناموں کا اعلان کر دیا ہے۔ جگدانند سنگھ نے امیدواروں کے ناموں کا اعلان کیا۔ پڑھیں مکمل خبر…..

پٹنہ : بہار قانون ساز کونسل کے انتخابات 20 جون کو ہونے والے ہیں۔ اس کے لیے پارٹی کے ریاستی صدر جگدانند سنگھ نے امیدواروں کے نام جاری کیے ہیں۔ آر جے ڈی نے قانون ساز کونسل کے انتخابات میں اقلیت اور برہمن امیدواروں پر اعتماد ظاہر کیا ہے۔ اسمبلی میں ایم ایل اے کی تعداد کے حساب سے یہ مانا جا رہا ہے کہ 3 سیٹیں عظیم اتحاد کے خیمے میں جائیں گی۔

آر جے ڈی نے امیدواروں کے ناموں کا اعلان کیا : قانون ساز کونسل کے انتخابات میں آر جے ڈی نے جن امیدواروں کو میدان میں اتارا ہے ان میں نوجوان آر جے ڈی کے ریاستی صدر قاری صہیب، منی دیوی عرف منی راجک اور اشوک پانڈے شامل ہیں۔

آر جے ڈی ایم ایل سی امیدوار۔ بتادیں کہ قانون ساز کونسل کی 7 سیٹوں میں سے فی الحال 5 سیٹیں جے ڈی یو کی ہیں اور 2 سیٹیں بی جے پی خیمے کی ہیں۔

2016 میں منظر یوں تھا :

2016 میں جے ڈی یو کے پاس 2، آر جے ڈی کے پاس 2، بی جے پی، کانگریس اور وی آئی پی کے پاس ایک ایک سیٹیں تھیں ۔ بعد میں آر جے ڈی کے ایم ایل سی اور کانگریس کے واحد ایم ایل سی جے ڈی یو میں شامل ہوگئے۔

یہ ممبران اپنی مدت ختم کر رہے ہیں : جن سات ممبران کی میعاد جولائی میں ختم ہو رہی ہے ان میں جے ڈی یو کے غلام رسول بلیاوی، سی پی سنہا، قمر عالم، رنوجے سنگھ، روزینہ ناظم، بی جے پی کے ارجن ساہنی اور وی آئی پی کے مکیش ساہنی شامل ہیں۔

مکیش ساہنی کو بی جے پی نے اپنے کوٹے سے قانون ساز کونسل میں بھیجا تھا لیکن اب مکیش ساہنی کے بی جے پی کے ساتھ تعلقات خراب ہو گئے ہیں اور یہ بھی کہ مکیش ساہنی نتیش کی کابینہ سے اب باہر ہو گئے ہیں۔

2 جون سے نامزدگی شروع : فی الحال تمام پارٹیوں کی نظریں راجیہ سبھا کے امیدواروں پر لگی ہوئی ہیں لیکن 2 جون سے قانون ساز کونسل کی 7 سیٹوں پر نامزدگی شروع ہو رہی ہے اور نامزدگی 9 جون تک چلے گی۔

بہار قانون ساز کونسل

20 جون کو ہوگی ووٹنگ : یہ یقینی ہے کہ قانون ساز کونسل کی نشستوں کو لے کر جلد ہی غور و فکر شروع ہو جائے گا کیونکہ تمام جماعتوں کے پاس قانون ساز کونسل کے دعویداروں کی ایک لمبی فہرست ہے۔ ایسے میں تمام پارٹیوں کے لیے چیلنج بڑھ جائے گا۔ خاص طور پر جے ڈی یو کی مشکلات بڑھ سکتی ہیں کیونکہ جن 5 ممبران کی میعاد ختم ہو رہی ہے ان کا دعویٰ تو ہوگا ہی ساتھ ہی انل ہیگڑے کو راجیہ سبھا بھیجنے کے بعد پارٹی کارکنوں میں امید پیدا ہو گئی ہے۔

دوسری طرف بی جے پی میں بھی کئی دعویدار ہیں اور وہ کافی عرصے سے اسمبلی میں جانے کا انتظار کر رہے ہیں۔

قومی ترجمان
قومی ترجمان
Qaumi Tarjuman
قومی ترجمان

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button