اسپورٹسعالمی خبریں

ایشیا کپ فائنل کا جھلک: پاکستان اور سری لنکا پر امیدوں کا بوجھ، کس کے سر سجے گا ایشیا کا تاج ؟

سری لنکا، جو سماجی و اقتصادی بحران سے نبرد آزما ہے اور اپنی تاریخ کے بدترین جمہوری بحران کا سامنا کر رہا ہے، اس کی کرکٹ ٹیم کو شاید جشن منانے کا کچھ موقع دیا جائے، لیکن اس کے لیے اسے اتوار کو دبئی میں ہونے والے ایشیا کپ کے فائنل کا سامنا کرنا پڑے گا۔ (ایشیا کپ فائنل) میں پاکستان کی مضبوط ٹیم کو شکست دینا پڑے گا۔ دوسری جانب پاکستان میں شدید سیلاب سے تقریباً پورا ملک متاثر ہے۔ پاکستان میں قدرتی آفات کے علاوہ معاشی بحران کا دور بھی جاری ہے جس کی وجہ سے عوام پریشان ہیں۔ ایسی صورتحال میں ان دونوں ٹیموں (سری لنکا بمقابلہ پاکستان) کے لیے ٹائٹل جیتنا ان کے مداحوں کو کچھ راحت پہنچا سکتا ہے۔

سری لنکا ایک طرح سے ایشیا کپ 2022 کا میزبان ہے لیکن سیکیورٹی وجوہات کی بناء پر وہ اپنے ملک میں اس کا انعقاد نہیں کرسکا اور اسی وجہ سے متحدہ عرب امارات (یو اے ای) کو اس ٹورنامنٹ کے انعقاد کا موقع ملا۔

داسن شناکا کی زیرقیادت ٹیم کے لیے یہ خوشی کا لمحہ ہوتا اگر وہ اپنے ہوم گراؤنڈ پر فائنل کھیل رہی ہوتی لیکن سپر فور میں ان کی کارکردگی کو دیکھتے ہوئے یہ کہا جا سکتا ہے کہ بابر اعظم کی قیادت میں پاکستانی ٹیم فائنل جیتنے کا ایک بہتر موقع۔ چیلنج کسی بھی طرح آسان نہیں ہوگا۔

ایشین کرکٹ کونسل (اے سی سی) ہو یا دبئی کے تماشائی، سب کی خواہش تھی کہ فائنل میچ بھارت اور پاکستان کے درمیان ہو لیکن سری لنکا نے شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے تمام مساوات کو خراب کر دیا۔

یہی نہیں اس نے جمعہ کو اپنے آخری حریف پاکستان کے خلاف سپر فور (SL بمقابلہ PAK) کے فائنل میچ میں ایک آسان فتح درج کی۔ اس کے ساتھ ہی ان کی ٹیم بڑھتے ہوئے حوصلے کے ساتھ فائنل میں داخل ہوگی۔

لیکن دبئی میں پاکستان کو شائقین کی جانب سے زبردست پذیرائی ملنے کا امکان ہے اور ایسی صورتحال میں بابر اعظم، محمد رضوان، محمد نواز اور نسیم شاہ جیسے کھلاڑی اپنی بہترین کارکردگی دکھانے کی کوشش کریں گے۔

پاکستان کے سامنے سری لنکا کی ایسی ٹیم ہوگی جو اپنی کرکٹ کو بحال کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ وہ اس فارمیٹ میں اپنی شناخت بنانا چاہتی ہے جس میں وہ 2014 میں عالمی چیمپئن بنی تھی۔

سری لنکا کی کرکٹ گزشتہ کچھ عرصے سے بورڈ (ایس ایل سی) کے اندر خراب سلیکشن اور سیاست سے نبرد آزما ہے لیکن اب اس کے کھلاڑیوں نے ٹی ٹوئنٹی کرکٹ میں اپنا رویہ بدل کر اس میں جارحیت کا اضافہ کر دیا ہے۔

ٹیمیں درج ذیل ہیں :

سری لنکا: داسن شاناکا (کپتان)، دانوشکا گناتیلاکا، پاتھم نسانکا، کوسل مینڈس، چارت اسلانکا، بھانوکا راجا پاکسے، اشین بندارا، دھننجایا ڈی سلوا، ونیندو ہسرنگا، مہیش ٹیکشنا، جیفری وینڈرسے، پراوین جیاویکا، ڈیراویک، پراوین، دھنوکا، ڈی سلوا بندارا اور دنیش چندیمل۔

پاکستان: بابر اعظم (کپتان)، شاداب خان، آصف علی، فخر زمان، حیدر علی، حارث رؤف، افتخار احمد، خوشدل شاہ، محمد نواز، محمد رضوان، نسیم شاہ، شاہنواز دہانی، عثمان قادر، محمد حسنین، حسن علی۔

باؤلنگ اب بھی پاکستان کا مضبوط پہلو دکھائی دیتی ہے۔ نسیم شاہ کے کھیل میں مسلسل بہتری آ رہی ہے جبکہ حارث رؤف اور محمد حسنین بھی اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ ان کے دونوں اسپنرز، لیگ بریک بولر شاداب خان اور بائیں ہاتھ کے اسپنر محمد نواز نے بھی متاثر کن کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے۔

تاہم دبئی میں ٹاس کا کردار اہم رہا ہے اور ایسی صورتحال میں پہلے بیٹنگ کرنے والی ٹیم کو نقصان اٹھانا پڑتا ہے۔ ویسے بھی پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے پاکستان کی کارکردگی اچھی نہیں رہی۔ اس نے بھارت اور سری لنکا کے خلاف ہارے ہوئے میچوں میں پہلے بیٹنگ کی۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button