اہم خبریں

اگر میں مر گئی تو پاپا اور انکل میرے جنازے میں نہ آئیں، لکھ کر پھانسی پر جھول گئ سمن

بھاگلپور میں ایک 18 سالہ لڑکی نے اپنے باپ کی تشدد کا شکار ہوکر موت کو گلے لگا لیا۔ اس سے پہلے اس نے سوسائڈ نوٹ میں اپنی تمام پریشانیاں لکھ دی ہیں اور ساتھ ہی وصیت بھی کی تھی کہ ‘پاپا اور انکل میرے جنازے میں شامل نہ ہوں’۔ خبر میں پڑھیں پورا معاملہ کیا ہے؟

بھاگلپور: بہار کے بھاگلپور کے اسحاق چک تھانہ علاقے میں بینک ملازم کی بیٹی نے گلے میں پھندا ڈال کر خودکشی کرلی۔ واقعے کے بعد موقع پر پہنچی پولیس نے موقع سے ایک خودکشی نوٹ بھی برآمد کیا ہے جس میں واضح طور پر لکھا ہے کہ اس نے یہ قدم اس کے والد کی جانب سے عمر رسیدہ لڑکے سے شادی کے لیے دباؤ ڈالنے کے بعد اٹھایا ہے۔ پولیس لڑکی کی لاش کو قبضے میں لے کر معاملے کی تحقیقات کر رہی ہے۔

10 سال قبل والدہ سے طلاق ہوگئی تھی : برہ پورہ کے رہائشی شبیر احمد کی 18 سالہ بیٹی سمن کے نام سے پیدا ہوئی۔ بتایا جا رہا ہے کہ سمن کی والدہ ٹوئنکل کی اپنے والد سے 10 سال قبل طلاق ہو گئی تھی۔ جس کے لیے سمن بہت پریشان تھی وہ اپنی ماں کے ساتھ رہنا چاہتی تھی۔ اہل خانہ کی مانیں تو شبیر احمد کافی عرصے سے سمن کو تشدد کا نشانہ بناتا تھا جس کے بارے میں اس نے اپنی والدہ کو کئی بار آگاہ کیا تھا۔ شبیر احمد نے اسے اپنی والدہ سے ملنے کی اجازت بھی نہیں دی۔

باپ پر بیٹی پر تشدد کا الزام : ساتھ ہی متوفی کی والدہ ٹوئنکل نے اس واقعے کا براہ راست لڑکی کے والد شبیر احمد پر الزام لگایا ہے۔ کہتی ہیں 10 سال گزر گئے شبیر احمد نے ایک دن بھی بچوں سے ملنے نہیں دیا، ٹوئنکل ماچھی پور کی رہنے والی ہے۔

موت کے بعد سمن کی والدہ اور اس کے ماموں شبیر احمد کے گھر پہنچے اور سمن کی موت پر ہنگامہ کیا۔ واقعہ کی اطلاع ملتے ہی اسحاق چک پولیس بھی موقع پر پہنچ گئی اور فریقین کو منانے کی کوشش کی۔

طلاق کے بعد میرے شوہر نے عدالت کے حکم کے باوجود میری بیٹیوں سے کبھی ملنے نہیں دیا۔ اگر میں کہتی تھی کہ مجھے بچوں سے ملنا ہے تو وہ دھمکی دیتے تھے کہ بیٹی کو گھر سے باہر پھینک دیں گے’ –

                 ٹوئنکل: مقتول کی والدہ

خودکشی

باپ اور چچا گرفتار: موقع سے برآمد ہونے والے خودکشی نوٹ میں لڑکی نے لکھا ہے کہ ‘میرے والد مجھے بہت پریشان کرتے ہیں۔ میں اپنی عمر سے زیادہ عمر کے شخص سے شادی کرنا نہیں چاہتی ہوں۔ چچا بھی مجھے بہت تنگ کرتے ہیں۔ اگر میں مر گئی تو میرے والد اور میرے چچا میرے جنازے میں شریک نہ ہوں۔ فی الحال اسحاق چک پولیس نے شبیر احمد اور اس کے بھائی کو حراست میں لے لیا ہے اور مزید کارروائی میں مصروف ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button