دربھنگہ

اللہ کی رضا کے لئے خوش دلی سے قربانی کا اہتمام کریں : رضا ء اللہ قاسمی

دکھاوے کی قربانی کا چلن افسوسناک،ایسے عمل سے بچنے کی ضرورت

دربھنگہ۔ محمد رفیع ساگر / قومی ترجمان بیورو
قربانی اہم مالی عبادت اور اسلامی شعائر یعنی نشانیوں میں سے ہے،جس کے ذریعے اسلام کی شان و شوکت نمایاں ہوتی ہے۔اوراس لئے اس عمل کو بڑی فضیلت اور اہمیت حاصل ہے۔ مذکورہ باتیں مولانا رضاء اللہ قاسمی ناظم تعلیمات مدرسہ کریمیہ بشارت العلوم بوکھڑا نے ایک پریس ریلیز میں کہیں۔انہوں نے کہا کہ اللہ تعالی نے قرآن پاک میں اسکی وضاحت کرتے ہوئے فرمایا کہ اپنے رب کے لئے نماز پڑھو اور قربانی کرو اس سے پتہ چلتا ہے کہ قربانی کی بڑی فضیلت ہے ۔یہ عمل سیدنا ابراہیم علیہ السلام کی سنت میں سے ہے ایک حدیث میں ہے کہ اللہ کسی انسان کےجسم اور شکل وصورت کو نہیں دیکھتا بلکہ اس کے دلوں کو دیکھتا اسلئے آدمی کو قربانی اللہ کی رضا کی لئے کرنا چاہئے۔مولانا رضا ء اللہ قاسمی نے کہا اس پرفتن دور میں نیت کا پاک صاف ہونا بہت ضروری ہے آج ہم لوگ جانور خریدنے میں بھی مقابلہ کرتے ہیں تاکہ لوگ کہے کہ بڑا قیمتی جانور لیا ہے تاکہ میرا چرچہ پورے سماج میں ہوتا رہے ۔انہوں نے کہا کہ یاد رکھئے ایسی قربانی جس میں نام ونمود اور ریاکاری ہو وہ آپ کے منہ پر مار دی جائیگی ایسی قربانی کی اللہ کو کوئی ضرورت نہیں  ۔حضرت عائشہ سے مروی ہے کہ دسویں ذی الحجہ میں ابن آدم کا کوئی بھی عمل اللہ کو خون بہانے سے زیادہ پسندیدہ نہیں ہےاور وہ جانور قیامت کے دن اپنے سینگ اور بال اور کھڑوں کے ساتھ آ ئےگا اور قربانی کا خون زمین پر گرنے سے پہلے خدا کے نزدیک مقام قبول میں پہنچ جاتا ہے لہذا ہر انسان کو خوشدلی سے اللہ کی رضا کے واسطے قربانی کرنی چاہئے۔  مولانا نے کہا حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا جس میں قربانی کرنے کی وسعت اور طاقت ہو اور وہ قربانی نہیں کرے وہ ہماری عیدگاہ کے قریب بھی نہ آئے اتنی سخت وعید کے بعد بھی آج ہمارے معاشرے میں ایسے بہت سے لوگ ہیں جو صاحب نصاب ہونے کے باوجود بھی قربانی نہیں کرتے ہیں۔ سیدنا حسن رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ جس شخص نے دلی خوشی کے ساتھ اجروثواب کی امید رکھتے ہوئے قربانی کی تو وہ قربانی اس کے لئے دوزخ سے آڑ بن جائیگی اور حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا جو روپیہ عید کے دن قربانی میں خرچ کیا گیا اس سے زیادہ کوئی روپیہ پیارا نہیں چنانچہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی امت کے لئے ہر سال قربانی کرنا نہ صرف مشروع کی گئی بلکہ اس کو اسلامی شعار بنایا گیا ہے اور حضرت ابرہیم علیہ السلام کی اتباع میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے طریقے پر جانوروں کی قربانی کا یہ سلسلہ قیامت تک جاری وساری رہے گا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button